Archive for the ‘غزل’ Category

خود قلم بن کے، ٹوُٹ کر لکھی
ایک ہی نظم عمر بھر لکھی

اس نے قسمت میں کب سحر لکھی
لکھ بھی دی گر، تو مختصر لکھی

لکھی تقدیر میری بے اعراب
اور نقطے بھی چھوڑ کر لکھی

میرے قرطاسِ عمر پر اُس نے
ہر کٹھن رَہ، سفر سفر لکھی

کیا وہ مانیں گے داستاں تیری؟
دوسرے رُخ سے میَں نے گر لکھی

دیکھنا تو کرن نے سورج کی
بہتے پانی پہ کیا خبر لکھی

مُصحفِ شب پہ ایک دن یاوؔر
پڑھ ہی لوُں گا کہیں سحر لکھی

یاور ماجد

 Transliteration

 

Aik Hi Nazm Umr Bhar Likkhi

 

Yawar Maajed

 

KHud qalam ban ke, TooT kar likkhi
aik hi nazm umr bhar likkhi

us ne qismat meN kab sahar likkhi
likh bhi di gar, to muKHtasar likkhi

likkhi taqdeer meri be aeraab
aur nuqte bhi chhoR kar likkhi

mere qirtaas-e-umr par us ne
har kaThin rah safar safar likkhi 

kya vo maaneN ge daastaaN teri?
doosre ruKH se maiN ne gar likkhi?

dekhna to kiran ne sooraj ki
behte paani pe kya KHabar likkhi

musHaf-s-shab pe aik din Yawar
paRh hi looN ga kaheeN sahar likkhi

 Read this Ghazal on Facebook

  •  
    8 people like this.
    • بہت خوب یاور صاحب۔آپکی غزل آپکے مخصوص رنگ میں رنگین ہے اور پُرلُطف ہے۔ اور آپکے ہنر کا عمدہ نمونہ۔
      ۔میرے قرطاسِ عمر پر اُس نے
      ہر کٹھن رَہ، سفر سفر لکھی

      مُصحفِ شب پہ ایک دن یاوؔر
      …پڑھ ہی لوُں گا کبھی سحر لکھی

      بہت سی دادSee More

      October 16 at 11:25am
    • Erum Jahan Bohot Khoob…
      October 16 at 12:41pm
    • lajawab ghazal hai …..
      لکھی تقدیر میری بے اعراب
      اور نقطے بھی چھوڑ کر لکھی
      مُصحفِ شب پہ ایک دن یاوؔر
      پڑھ ہی لوُں گا کبھی سحر لکھی
      …bohot khoob…..See More
      October 16 at 1:13pm
    • یاور ماجد شکریہ بشیر صاحب، ارم، ظفر اور جرار۔۔ عزت افزائی کے لئے ممنون ہوں
      October 16 at 1:14pm
    • Sohail Aslam Yawar this is great piece of poetry; however, I love the following part of your "Ghazal”. Mashallah your precision in picking words and then relating these to the context is awesome ……

      لکھی تقدیر میری بے اعراب
      اور نقطے بھی چھوڑ کر لکھی

      October 16 at 1:18pm
    • یاور ماجد شکریہ سہیل۔۔ آپ کی محبت ہے۔۔
      ایک نوٹ۔۔ مقطع میں دوسرا مصرع اوپر دیئے گئے امیج میں غلط ٹائپ ہو گیا ہے۔۔ صحیح شعر نوٹ کے ٹیکسٹ میں ہے جو کہ ایسے ہے

      مُصحفِ شب پہ ایک دن یاوؔر
      پڑھ ہی لوُں گا کہیں سحر لکھی

      October 16 at 1:21pm
    • Hasan Abbas Raza Masha allah, bohat khoobsurat ghazal hey Yawar , jeetay raho, wah
      October 16 at 1:29pm
    • Qaisar Masood میرے قرطاسِ عمر پر اُس نے

      ہر کٹھن رَہ، سفر سفر لکھی

      khoob ghazal hai yawer bhai…khush raho

      October 16 at 2:11pm
    • Ahmad Safi kyaa baat hai Yawar… TumhaeN ma’loom hai keh tumhari iss ghazal ka Matlaa mujhay buhat pasand hai… Khuda hamesha qalam chalta aur tabee’at rawaaN rakkhay.
      Ahmad
      October 16 at 3:42pm via Facebook Mobile
    • Shoaib Afzaal Yawar sab mazameen aur bayan dono hi qabilay sataish hain daikhna tu kiran nay suraj ki behtay pani pay kia khabar likhi wah kia kehnay bohat khobsurat Allah khush rakhay.
      October 16 at 3:47pm via Facebook Mobile
    • Jameelur Rahman یاور میاں۔۔واہ واہ۔۔تیسرا اور چھٹا ۔۔دونوں اشعار لاجواب۔غزل اچھی لگی ۔۔۔سدا شاد و آباد رہیں
      October 16 at 4:48pm
    • Irfan Sattar کیا بات ہے یاور۔ مضامین اور مصرعوں کی بنت ، ہر دو اعتبار سے بہت عمدہ غزل ہے۔ کئی اشعار بہت پسند آئے۔ آپ کم لکھتے ہیں، مگر اپنے ڈھب کا لکھتے ہیں، جو منفرد بھی ہے، اور متاثرکن بھی۔ خوش رہیئے۔
      October 16 at 4:50pm
    • شکریہ حسن صاحب، جمیل صاحب ،قیصر صاحب، احمد بھائی، شعیب بھائی اور عرفان بھائی۔

      عرفان، کم لکھنے پر ہی تو کہا ہے کہ

      ایک ہی نظم عمر بھر لکھی

      🙂See More

      October 16 at 6:01pm
    • لکھی تقدیر میری بے اعراب
      اور نقطے بھی چھوڑ کر لکھی
      کیا کہنے ہیں یاور، منفر اور تازہ تازہ لہجہ، نکھری نکھری غزل ہے پڑھ کر بہت اچھا لگا۔۔ مضامین نو جب بھی کبھی شوق نظر ہوتے ہیں سچ پوچھو دل باغ باغ ہوجاتا ہے۔ مذکورہ بالا شعر میں نہ صرف بھرپور شع…ریت ہے بلکہ کئی اعتبار سے ذومعنویت بھی ہے۔۔ یہ شعر یہاں بامراد تقدیر کا ابلاغ بھی کر رہا ہے اور بے مراد تقدیر کا بھی۔۔۔اور وہ بھی انتہائی جدید مضمون کے ساتھ۔۔۔
      فی زمانہ ایک علمی پہلوانی کا رحجان چل نکلا ہے ، جس کی رو میں آکر کئی علمائے کرام نے ایسی کتابیں لکھی ہیں جن میں بے نقاط الفاظ استعمال کیے ہیں اور یہ ان کی اپنے فن میں کاملیت کی علامت ہے۔۔۔ لطف تو یہی ہے کہ اس شعر میں نقطے چھوڑنا، بے مرادی کی معنویت بھی سموئے ہوئے، یہی ذومعنویت ہے۔۔
      یاور بہت شکریہ سلامت رہوSee More
      October 16 at 10:12pm · 1 personLoading…
    • Wasi Hasan Ywar kia matla tum nay kah diyay hay….sahl e mumtana main kamal hay.yay ghzakl tumharay mizaj say mukhtalif hay magar bohat achi hay…jo tumhari ghazlain parhi hain wo amooman mushkil zameen main theen magar is choti bahar main bhi tum nay aik kamyab ghzal kahi hay…aarab wala shair bhi acha hay
      October 16 at 11:20pm
    • یاور ماجد شکریہ علی بھائی اور وصی بھائی۔
      October 17 at 8:36am
    • Jawed Iqbal yawar sahib excellent
      October 17 at 1:09pm
    • Faiz Alam Babar kia khoob mazmoonaafreeni hy yawar bhai maza aa gia paRh kar bhot aala
      October 17 at 2:38pm
    • یاور ماجد شکریہ فیض بھائی، آپ تو خود بہت کمال کے شاعر ہیں
      October 17 at 3:12pm
    • یاور ماجد جاوید اقبال صاحب، آپ کا میری غزل پر تبصرہ کرنا میرے لئے کسی طور ہر ایک اعزاز سے کم نہیں، بہت مشکور ہوں۔
      October 17 at 3:13pm
    • Qudsia Nadeem Laly mukhtasar behar main kia umda ghazal kahi hay,yawer aap nay,
      matla ka jawab nahin,
      rawan or tazgi ka ahsaas liaye…
      bohat sari daad or dua’ain aap ky liaye…
      October 17 at 3:32pm
    • یاور ماجد شکریہ قدسیہ جی، غزل کی پسندیدگی پر ممنون ہوں
      October 17 at 3:33pm
    • Faizan Abrar دیکھنا تو کرن نے سورج کی
      بہتے پانی پہ کیا خبر لکھی

      یاور بھائی خوب غزل کہی ہے۔۔۔ یہ شعر خاص طور سے پسند آیا۔۔۔ اللہ آپ کو مزید نوازے۔۔۔ اور شاد اور آباد رکھے۔۔۔ آمین۔

      October 18 at 10:53am
    • Akhtar Usman مُصحفِ شب پہ ایک دن یاور
      پڑھ ہی لوُں گا کہیں سحر لکھی
      بہت جئیں۔ ماشاءاللہ
      October 19 at 5:28am
    • Muhammad Waris خوبصورت غزل ہے یاور صاحب، مقطع کی جتنی بھی تعریف کی جائے کم ہے، واہ واہ واہ۔
      October 19 at 6:00am
    • Shahid Nawaz Yawar Bhai nice
      October 19 at 8:15am
    • بہت خوب پيارے بھائ کيا کہنے

      دیکھنا تو کرن نے سورج کی
      بہتے پانی پہ کیا خبر لکھی

      …مُصحفِ شب پہ ایک دن یاور
      پڑھ ہی لوُں گا کہیں سحر لکھی

      کيسے زندہ رہنے والے اشعار ہيں،دير سے حاضر ہونے پر معزرت قبول کريں کہ

      ہوئ تاخير تو کچھ باعث_تاخير بھی تھاSee More

      October 19 at 8:45am
    • کیا بات ہے یاور بھائی واہ واہ
      لکھی تقدیر میری بے اعراب

      اور نقطے بھی چھوڑ کر لکھی

      …آپ سلامت رہیں یاور بھائی اور ذرا جلدی جلدی شیئر کریں بہت انتظار رہتا ہے آپ کے کلام کاSee More

      October 19 at 12:47pm
    • یاور ماجد بہت شکریہ فیضان، اختر بھائی، شاید بھائی، ژاکر صاحب اور کاشف صاحب۔۔ بندہ نوازی ہے آپ لوگوں کی
      October 19 at 9:28pm
    • Rabia Ahmad مُصحفِ شب پہ ایک دن یاوؔر
      پڑھ ہی لوُں گا کہیں سحر لکھی
      wonderful couplet.
      October 20 at 7:24am
    • Muhammad Asim Waseem Beauty man – Lovely
      October 20 at 4:22pm
    • Azm Behzad برادر_عزیز ، معذرت کہ خاصی تاخیر سے یہاں پہنچا۔۔۔
      خوب غزل ہے۔۔ بظاہر بہت رواں اور سادہ لیکن زمین کہہ رہی ہے کہ
      شعر لکھنا ، سانس پھلانے کے مترادف ہے۔۔۔ خوشی ہے کہ آپ
      نے اسے خوب خوب نبھایا۔۔۔۔ میری جانب سے بہت داد۔
      October 21 at 12:23am · 1 personTalat Zahra likes this.
    • بہت شکریہ رابعہ جی اور عاثم، عزم بھائی۔۔ آپ کے فیس بک پر واپس آنے کی بے انتہا خوشی ہے، ہم لوگوں کو آپ جیسے با علم، باشعور اور با تہذیب لوگوں کی ضرورت ہے، امید ہے آپ اپنی مصروف زندگی سے تھوڑا تھوڑا وقت نکالتے رہیں گے اور ہم لوگوں کو بھی …اپنا کلام پڑھنے کا موقع دیتے رہیں گے۔

      آپ کی داد سوغات سمجھ کر سر آنکھوں پر لی ہے، خدا آپ کو خوش رکھے۔See More

      October 21 at 8:15am
    • Anjum Babri wah kia baat hai bhi
      October 23 at 9:58am
    • Qais Ali Mir دیکھنا تو کرن نے سورج کی

      بہتے پانی پہ کیا خبر لکھی

      واہ یاور بھائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خوش رہیں سدا

      November 11 at 2:31pm
    • Arshad Wattoo wah maqta acha hy bohat khoob
      October 16 at 12:47pm ·
    • یاور ماجد شکریہ جناب
      October 16 at 1:56pm ·
    • October 16 at 1:57pm ·
    • Arshad Wattoo aaj kal kahan ho
      aur majid sahib ka kesy hain
      October 16 at 2:30pm ·
    • Jawad Sheikh bohot khoobsurat aur saaf suthri ghazal hai.matla aur 3rd sher khas taur pe bohot pasand aaye. thanks for sharing.
      October 16 at 2:47pm ·
    • Qayyum Khosa Bahut Khoob Yawar Sahib!
      October 16 at 4:12pm ·
    • Mohammad Kaiserimam kiun utha lay ho yawar
      kitab aisi jo biljabar likhi
      October 16 at 8:16pm ·
    • Asim Nisar Very nice. Thanks again
      October 17 at 12:26am ·
    • Rehana Qamar bahut bahut bahut khoob
      October 17 at 12:37am ·
    • Naseem Sehar Bahot khob. Chhoti behr men khoobsoorat ghazal hai.
      October 17 at 2:48am ·
    • یاور ماجد مہیش صاحب، جواد شیخ صاحب، قیوم صاحب، انکل قیصر۔ عاصم بھائی، محترمہ ریحانہ قمر اور محترم نسیم صاحب، توصیفی الفاظ کے لئے بے حد ممنون ہوں
      October 17 at 8:05am ·
    • Afzaal Naveed Bohot Koob Majid. Khush rahiye Janab.
      October 17 at 8:11am ·
    • Masood Quazi مقطع اعلی۔غزل ممتاز
      October 17 at 8:29am ·
    • Qudsia Nadeem Laly mukhtasar behar main kia umda ghazal kahi hay,yawer aap nay,
      matla ka jawab nahin,
      rawan or tazgi ka ahsaas liaye…
      bohat sari daad or dua’ain aap ky liaye..
      October 17 at 3:36pm ·
    • Naseem Sehar Bilaa shuba ye ghazal apnay takhleeq-kaar ki pukhtai e fikr o fan ki akkas hai.
      October 18 at 1:23am ·
    • یاور ماجد شکریہ لالی جی اور نسیم سحر صاحب، آپ کا حسنِ نظر ہے، عزت افزائی کے لئے بہت ممنون ہوں
      October 18 at 8:35am ·
    • Afzaal Naveed Likhhi taqdeer meri be-erab
      aur nuqte bhi chhorr kar likhi
      Kya baat he Yawar. Zinda bad.
      October 18 at 8:37am ·
    • October 18 at 8:38am ·
    • Minhas Hani bhot khoob sir… yad aawri ka bhoot shukria… ALLAH pak apko 2no jahan me sada khush rakhy.
      October 21 at 12:57am ·
  • قدغن لگی ہے سوچ پہ اور لَب سلے ہوئے
    اور چاک تک قفس کے مرے سَب سلے ہوئے

    نکلا ہوں کتنے زعم سے دُنیا کے سامنے
    پہنے ہوئے یہ چیتھڑے بے ڈَھب سلے ہوئے

    صدیوں کی گھاٹیوں میں یہ لمحوں کی مشعلیں
    گہرے فلک پہ اختر و کوکب سلے ہوئے

    مشکل کہاں ہے میرے سوالوں کو بوجھنا
    سادہ ہیں ان حُرُوف میں مطلب سلے ہوئے

    آنکھوں میں سُرخ ڈوریاں عمروں سے ساتھ تھیں
    اس دِل کے زخم پھر بھی رہے کب سلے ہوئے

    جُوں جُوں چمن میں سُرخی پروتی گئی بہار
    کھلتے گئے ہیں گھاؤ مرے سَب سلے ہوئے

    ایسا بیاں کا زور کیا تھا اگر عطا
    کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئے

     

    یاور ماجد

     

     Transliteration

     

     sile huay

    Yawar Maajed

    qadGHan lagi hai soch pe aur lab sile huay
    aur chaak tak qafas ke mire sab sile huay

    nikla hooN kitne zo’m se duniya ke saamne
    pehne huay yeh cheethRe be Dhab sile huay

    sadiyoN ki ghaaTiyoN meN yeh lamhoN ki mash’aleN
    gehre falak pe jugnu se kokab sile huay

    mushkil kahaaN hai mere savaaloN ko boojhna
    saada haiN in huroof meN matlab sile huay

    aaNkhoN meN surKH DoriyaN umroN se saath theeN
    is dil ke zaKHm phir bhi rahe kab sile huay

    jooN jooN chaman meN surKHi piroti gayi bahaar
    khulte gaye haiN ghaao mire sab sile huay

    aisa bayaaN ka zor kiya tha agar ata
    kyooN hoNT de diye mujhe yaa rab sile huay

    Read this Ghazal on FaceBook

    10 people like this.
    • sab sey pehley to facebook par aik taveel waqfey key baas wapsi mubarak ho. ghazal bohat acchi hai. aap ki mushkil pasand tabiyat ka aap ki shayirana istaidaad key sath khoob milaap hua hai, jis key sabab aap khasi mushkil zameenoN meN boha…t umda ash’ar keh laitey haiN. doosra, chootha, saatvaN, aur aakhri shair bohat ziyada pasand aaya. matley key pehley misrey meiN mazeed ravani layi ja sakti hai, jaisey: "qadghan lagi hai soch pe, lab haiN siley huey”.

      bohat umda dost. khoosh rahaiN.See More

      August 25 at 10:51pm · 1 personLoading…
    • Yawar,

      Yeh Shair bohat hee Aaala hay bhai:

      صدیوں کی گھاٹیوں میں یہ لمحوں کی مشعلیں
      …گہرے فلک پہ اختر و کوکب سلے ہوئے

      Wah Wah ….See More

      August 25 at 10:58pm
    •  جُوں جُوں چمن میں سُرخی پروتی گئی بہار
      کھلتے گئے ہیں گھاؤ مرے سَب سلے ہوئے
      Zabardast…..!Mashallah
      August 25 at 11:00pm
    • ایسا بیاں کا زور کیا تھا اگر عطا
      کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئے

      First of All Yawer , we had to wait this long to see this GhazaL?
      Welcome, Its a fresh breath of air
      …Fantastic GhazalSee More

      August 25 at 11:11pm
    •  بہت خوب یاور۔۔۔ اتنے دن کی غیر حاضری کا حساب چکا دیا ایک ہی غزل سے۔۔۔۔ مگر بھائی حساب چکتا کر کےرک نہ جانا۔۔۔یہاں تو ھل من مزید ہی کا نعرہ ہے!۔ جیو!۔
      August 25 at 11:17pm
    •  ایسا بیاں کا زور کیا تھا اگر عطا
      کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئے

      kya baat hai yawar bhai wah wah maza aagaya Safi sahib kay naaray say mutafiq hoon
      salamat rahain

      August 25 at 11:54pm
    •  Yawar…yar kia achi ghzal kahi hay…main pahlay bhi kah chuka hoon kay tum aik sahbe asloob shair hoo…tum bilkul mukhtalif zameenain tarashtay ho aur phir isay khoob nibhatay ho…is zameen main kahna pitay ko pani karna hay…subhanaalah
      August 26 at 12:45am
    •  ہلو یاور ماجد صاحب۔۔واپسی مبارک ہو ۔آپ کا بہت انتظار رہا۔۔غزل عمدہ ہے اور دوسرا چھٹا اور ساتواں ۔۔یہ تین اشعار بہت اچھے لگے ۔واااااااااہ ہ ہ ۔سلامت رہئے۔
      August 26 at 1:04am
    • tamaam ghazal hi la.jawab hai magar matla’ ki kyaa hi baat hai
      ایسا بیاں کا زور کیا تھا اگر عطا
      کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئے

      buhat hi sachaa aur dil ko choo jaaney waalaa she’r!
      …buhat si daad!!!See More

      August 26 at 5:10am
    •  اکھیاں اور ہونٹ اور دماغ ترس گیا تھا اس لہجہ اور اس رچائو کی غزل دیکھنے اور محسوس کرنے کو۔ شکر ہے آپ آئے۔ خوش آمدید۔
      کای خوب صورت غزل ہے۔ تما م اشعار خوب۔ دوسرا اور آخری شعر بہت ہی عمدہ ہیں۔ جیتے رہیے۔
      August 26 at 5:21am · 2 peopleLoading…
    •  اچھی غزل ہے یاور بھائی۔۔۔سبھی شعر اچھے لگے۔۔۔ اللہ آپ کو شاد و آباد رکھے۔۔
      August 26 at 5:49am
    • جُوں جُوں چمن میں سُرخی پروتی گئی بہار

      کھلتے گئے ہیں گھاؤ مرے سَب سلے ہوئے

      ایسا بیاں کا زور کیا تھا اگر عطا

      کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئے

      بہت خوب یاور۔ پُر لُطف غزل ہے۔ بہت سی داد و تحسین آپکے کی خدمت میں۔See More

      August 26 at 6:51am
    • یاور ماجد تمام احباب کا بہت شکریہ، واپسی پر پرخلوص پیغامات کا بھی اور غزل کی پسندیدگی کا بھی۔
      August 26 at 7:07am
    • سب سے پہلے تو اظہار جشن ہے یاور ماجد کو یہاں دیکھ کر۔ رونق آگئی ہے ایک تیرے انے سے
      یار تم بہت منفرد شاعر ہو اور میرے بہت پسندیدہ۔۔ کیس عمدہ غزل ہے یاور کیسی عمدہ غزل ہے۔ جناب جانی،پیارے ساحب اب کہیں مت جانا
      غزل کے آخری شعر نے تو لوٹ لیا

      ایسا ب…یاں کا زور کیا تھا اگر عطا
      کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئے

      سلامت رہو اور جگ جگ جیوSee More

      August 26 at 10:33am · 1 personLoading…
    • یاور ماجد Thanks Abbu Ji, and thanks Ali, I have no words to show my gratitude for your comment.
      August 26 at 11:07am
    •  Bohat Aala . Tag Karnay Ka Shukriya.
      August 26 at 11:39am
    •  awesome…………..
      August 26 at 12:02pm
    •  ایسا بیاں کا زور کیا تھا اگر عطا
      کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئے

      کیا تیور ہیں اور کیا اچھی غزل ہے ۔ خوش آمدید جناب ۔ شکریہ کہ آپ نے آتے ہی ایک نہایت اچھی غزل سے نوازا ۔ سلامت و شاد باد رھئے ۔

      August 26 at 12:20pm
    • یاورآپ ہر ایک سے دوہری مبارکباد قبول کر رہے ہیں جو بالکل بر حق ہیں ۔۔لوگ آپ کو دیکھ کر کتنے خوش ہوئے ہیں آپ اسی سے اندازہ لگا لیں ۔۔ورنہ یہاں کتاب چہرہ پر ایسے ایسے بھی ہیں جو اگر ایک دن کے لیے بھی غائب ہو جائیں تو لوگ اس کی مبارکباد دی…تے ہیں
      🙂
      غزل مشکل زمین مین ہے اور ہر کسی کا اس زمین میں شعر کہہ لینا ممکن نہیں ۔

      ایسا بیاں کا زور کیا تھا اگر عطا
      کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئے

      میری طرف سے تین مبارکبادیں ۔۔ ایک تو واپسی کی ۔۔۔دوسری اس غزل کی ۔۔۔ اور تیسری ہر دلعزیزی کیSee More

      August 26 at 2:05pm · 1 personLoading…
    • Yawar Bhai…

      lovely to read you after a long break.

      This is the way one should come back. A very good one.

      kyooN hoNT de diye mujhe yaa rab sile huay

      I could remember verses from W.B. Yeats poem Human Dignity

      So like a bit of stone I lie
      Under a broken tree.
      I could recover if I shrieked
      My heart’s agony
      To passing bird, but I am dumb
      From human dignity.See More

      August 26 at 2:06pm
    • سعود بھائی، آپ کی تینوں مبارکبادیں قبول اور یہ کہنا چاہوں گا کہ آپ لوگوں کی محبت نے مجھے شرمندہ کر دیا ہے، اس لئے کہ فیس بک کو چھوڑ کر جانا آپ سب سے ارادی طور پر دور ہونا شعوری فیصلہ تھا جو کہ اب غلط لگ رہا ہے۔ لیکن کیا کریں، روزگار کے م…سائل بعض اوقات آدمی کو ایسے کام کرنے پر مجبور کر دیتے ہیں۔ میں آپ کا، عرفان ستار، مسعود قاضی، جمیل الرحمن، امجد شہزار، مجید اختر، علی زبیر اور کامران حیدر سمیت باقی تمام دوستوں کا بےحد مشکور ہوں، اتنی محبت اور کہاں ملے کی مجھ جیسے آدمی کو۔
      آپ سب بہت خوش رہیں
      ،See More
      August 26 at 2:27pm
    • Kamran, Yeats poem is one of my favorites.. I did not have this in mind when writing this but I can see the connection straightaway… for others who have not read this beautiful poem, here it is, in its full form

      _____________________
      Huma…n Dignity

      Like the moon her kindness is,
      If kindness I may call
      What has no comprehension in it,
      But is the same for all
      As though my sorrow were a scene
      Upon a painted wall.

      So like a bit of stone I lie
      Under a broken tree.
      I could recover if I shrieked
      My heart’s agony
      To passing bird, but I am dumb
      From human dignity.
      _____________________

      … aaah…. as though my sorrow were a scene upon a painted wall…See More

      August 26 at 2:31pm · 1 personLoading…
    • نکلا ہوں کتنے زعم سے دُنیا کے سامنے

      پہنے ہوئے یہ چیتھڑے بے ڈَھب سلے ہوئے

      صدیوں کی گھاٹیوں میں یہ لمحوں کی مشعلیں

      گہرے فلک پہ اختر و کوکب سلے ہوئے

      ایسا بیاں کا زور کیا تھا اگر عطا

      کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئے

      کمنٹ کرنے کے لئے شعر منتخب کرنا چاہا تو ہر شعر اپنی جانب بلانے لگا۔۔۔۔

      بہت عمدہ غزل ہےSee More

      August 26 at 3:08pm
    •  bhot khoob yawar bhai kafi arsy bad aap ka kalam parhny ko mila aur bhot lutf aaya ,salamat rahen
      August 26 at 4:37pm
    •  Yeh keh laagey hai ik sharab ka jaam
      Yeh ghazal aap ko mubarik ho//
      August 26 at 6:48pm
    • صدیوں کی گھاٹیوں میں یہ لمحوں کی مشعلیں
      گہرے فلک پہ اختر و کوکب سلے ہوئے

      جُوں جُوں چمن میں سُرخی پروتی گئی بہار
      کھلتے گئے ہیں گھاؤ مرے سَب سلے ہوئے

      ایسا بیاں کا زور کیا تھا اگر عطا
      کیوں ہونٹ دے دئیے مجھے یارب سلے ہوئۓ

      ياور بھائ طويل عرصے کی غير حاضری کے بعد آپ کی تشريف آوری اور پھر اتنے عمدہ کلام کی تخليق پر اس بندہ ء نا چيز کی طرف سے دوہری مبارک قبول فرمائيںSee More

      August 27 at 1:15am
    •  Yeh jo laagey hai aik jaam-e-sharab/Yawaree! yeh ghazal mubarik ho//
      August 27 at 8:52am
    • یاور ماجد Thanks once again Abbu Ji, your poetic comment is an honor for me.
      Thanks Zakir Bhai for the welcome message and liking the Ghazal.
      August 27 at 9:12am
    •  ماشااللہ۔۔۔۔۔۔ اللہ کرے زورِ قلم اور زیادہ ۔ ۔ ۔ ۔ اوّلاً ۔۔۔۔۔ تو میں بھر پور تائید کروں گا عرفان ستار صاحب کی بات کی ۔ کہ اتنی مدّتِ مدید کے بعد آپ کی واپسی اور اس طور غزل بکف ۔ ۔ ۔ ۔نہایت مسرّت و شادمانی کا موجب ہے ۔ ۔ بالخصوص دوسرا اور آخری شعر بہت خوب ہے ۔۔۔۔۔۔ بھائی ۔ ۔میں صدقِ دل سے دُعا گو ہوں
      August 27 at 11:26am
    • یاور ماجد ضیا ترک بھائی۔۔ میرے نوٹس میں خوش آمدید، بہت خوشی ہوئی آپ کو یہاں دیکھ کر، تعریفی الفاظ کا شکریہ، میں تو بس اپنی سی کوشش لگا رہتا ہوں، اگر آپ لوگوں کو پسند آئے تو میری محنت کا پھل یہی ہے۔
      August 27 at 1:59pm
    •  Thats a beauty – I remember reading some of your poetry at the Uni time and used to think its poet in the making….and you have just proven that.
      Like father like son 🙂
      August 29 at 4:47am
    • یاور ماجد Thanks Asim, appreciate your kind words. Indeed, I had been writing long before getting into university, actually at that time I was far more prolific than I have ever been after that. Please checkout my notes section, there are other poems and ghazals you might like.
      August 29 at 8:18am
    •  سوری غزل تک آتے آتے کچھ دیر ہو گئی ۔۔۔۔۔ فیس بک سے آپ کے غائب ہونے کا افسوس ایسی اچھی غزل دیکھ کر ختم ہو گیا ہے۔۔۔۔۔ مجھے مطلع اور مقطع دونوں ہی بہت پر اثر لگے ہیں ۔۔۔۔ ہمیشہ کی طرح آپ کا منفرد ڈکشن اس غزل میں بھی نمایاں ہے۔۔۔۔۔
      September 3 at 12:17pm
    •  نکلا ہوں کتنے زعم سے دنیا کے سامنے
      پہنے ہوئے یہ چیتھڑے بے ڈھب سلے ہوئے
      واہ کیا ہی خوبصورت شعر ہے ۔۔۔۔۔ ایک عجیب سی کیفیت سے بھرپور۔۔۔۔۔
      September 3 at 12:18pm
    • یاور ماجد Thanks Gulnaz
      September 3 at 12:47pm
    •  اگر آپ یہی چیتھڑے پہن کر نکلے ہیں تو زعم تو ہونا ہی تھا نا۔۔۔۔۔۔۔دیکھیں نا کیا غزل کے ساتھ لوٹے ہیں۔ ایسی رواں اور پُر معنی غزل پڑھ کر جی خوش ہو گیا ۔۔اور تبصرے تو اتنے ہو چکے کہ میرا کچھ کہنا چہ معنی۔
      کیوں ہونٹ دے دیئے مجھے یارب سلے ہوئے
      September 4 at 12:44am
    • یاور ماجد Thanks Talat.
      September 4 at 8:50am
    •  Very nice, ghazal la.jawab hai . Tag Karnay Ka Shukriya
      September 16 at 9:34am
    •  Bohat khoobsurat aur murassah ghazal hey, jeetay raho
      September 19 at 11:46am
    • یاور ماجد شکریہ حسن صاحب، آپ کا حسنِ نظر ہے
      September 19 at 11:48am
    •  bohut umda ghazal hai Yawer bhae, bohut lutf aya!
      Thanks tagging
      Allah speed!
      September 23 at 1:20pm
    •  ویلکم یاور بھائی ۔۔۔ ایک اچھی غزل کے ساتھ واپسی ہوئی ہے آپ کی ۔۔ آپ اچھی غزل کہتے ہیں ۔۔ سلے ہوئے جیسا قافیہ نبھانا مشکل تھا ۔ غزل میں اس مشکل کا احساس ہو رہا ہے ۔ ایک اور بات کہ آپ نے مضامیں کو بہت سلیقے سے شعر کیا ہے ۔۔ بہت خوب
      October 4 at 3:24am
    •  Bohot khoob Yawar. Barri muharat se ghazal kehte hen aap. Kya baat he.
      October 7 at 7:59am
    •  نکلا ہوں کتنے زعم سے دُنیا کے سامنے
      پہنے ہوئے یہ چیتھڑے بے ڈَھب سلے ہوئے
      زبردست
      October 20 at 7:26am
  • ہوئی ہے زرد سی دیکھو زمیں، مری ہی طرح
    ذرا سی خشک ہے، بنجر نہیں، مری ہی طرح

    نسیمِ صبح کے جھونکوں میں جھومتا برگد
    یہ کہہ رہا ہے کہو آفریں مری ہی طرح

    اسے بھی اپنے درُوں کا کبھی تو گیان ملے
    یہ شعلہ ہو اگر آئینہ بیں مری ہی طرح

    بھنور میں ڈوب نہ جاؤ کہیں گمانوں کے
    گئے جو تم سوئے بحرِ یقیں مری ہی طرح

    اسے بھی شام نے آنچل میں اپنےڈھانپ لیا
    یہ دن بھی دیکھو ہوا احمریں، مری ہی طرح

    اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
    پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح

    یاور ماجد

    Transliteration

    Yawar Maajed

    huyi hai zard si dekho zameeN miri hi tarha
    zara si KHushk hai, banjar naheeN miri hi tarha

    naseem-e-subha ke jhauNkoN meN jhoomta bargad
    yeh keh raha hai "kaho aafreeN miri hi tarha”

    ise bhi apne darooN ka kabhi to gyaan mile
    yeh sho’la ho agar aayeena beeN miri hi tarha

    bhaNvar meN Doob na jaao kaheeN gumaanoN ke
    gaye jo tum soo-e-behr-e-yaqeeN, miri hi tarha

    ise bhi shaam ne aaNchal meN apne DhaaNp liya
    yeh din bhi dekho hua ahmareeN miri hi tarha

    ufaq bhi raat ke aane ke KHauf se Yawar
    paTaKH raha hai zameeN par jabeeN miri hi tarha

    Read this Ghazal on Facebook

    10 people like this.
    • Ali Iftikhar Jafri achee hay. kuch aur shairee bhee irsaal keejyay
      December 13, 2009 at 9:47am
    • یاور ماجد شکریہ علی صاحب، آپ سے آج ہی تعارف ہوا، بہت پسند آیا ٓآپ کا کلام، ابھی دن کو بیٹھ کر تفصیل سے آپ کے نوٹس پڑھوں گا،
      a pleasure to have you in my friends list, looking forward to good times.
      December 13, 2009 at 9:53am
    • Ahmad Safi اسے بھی شام نے آنچل میں اپنےڈھانپ لیا
      یہ دن بھی دیکھو ہوا احمریں، مری ہی طرح

      واہ واہ یاور۔۔۔ کیا خالص غزل کا شعر ہے۔ جب سے پڑھا ہے بار بار دہراتا ہوں اور عجیب عجیب منظر ہر بار نگاہون میں پھر جاتے ہیں۔
      جیو خوش رہو،۔۔

      December 13, 2009 at 10:14am
    • Zafar Khan ياور عمدہ غزل ہے
      اسے بھی اپنے دروں کا کبھي تو گیان ملے
      یہ شعلہ ہو اگر آئينہ بیں ميری ہی طرح
      واہ واہ بہت خوب
      December 13, 2009 at 10:15am
    • Irfan Sattar بھائی یاور آپ کی امیجری غضب کی ہے، اور آپ کی جدّت پسند طبیعت سے تخلیق ہونے والی زمینوں میں خوب پھول کھلاتی ہے۔ عمدہ غزل اور بہت امکانات سے بھرپور لہجہ۔ خوش رہیئے۔
      December 13, 2009 at 10:23am
    • اسے بھی شام نے آنچل میں اپنےڈھانپ لیا
      یہ دن بھی دیکھو ہوا احمریں، مری ہی طرح

      اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح

      بہت خوب یاور اچھے لہجے کی لاجواب غزل ہے ۔۔۔۔۔ شام اور رات کا منظر جیسے نظروں کے سامنے کھچنے لگتا ہے ۔۔۔۔See More

      December 13, 2009 at 10:50am
    • Mansoor Nooruddin بہت اعلٰی
      December 13, 2009 at 11:13am
    • Khushbir Singh Shaad Subhanalaah wah wah wah Yawar bhai kya khoob hai
      December 13, 2009 at 11:29am
    • yaawar majid aap bila shubh khoobsoorat shayer hain,,jadeed likhnay ki saae krtay hain,jadeed likhtay hain,or us men az had kaamyaab rahatay hain,,jadeedyet ka daaira jahan wasee hay waha tang bhi boht hay,jadeediyet jis qadar fizaa khaiz h…ay usqadar ye sheriyet kush bhi hay,amooman jadeed sher or naai zameen naiy mazaameen kay istamaar sheriyet kay medaan men rah jatay hain,magar yawar maajid aap kay sheriyet ka wafoor is qadar hota hay jesay ghar ki baandi ho… naya likhtay hain taghazzul or jamaaliyaat ka sang ba sang khoob likhtay hain,hamesha parrh kr achcha laga,,shukriyaSee More
      December 13, 2009 at 11:33am
    • Qayyum Khosa بہت اعلٰی
      December 13, 2009 at 11:36am
    • احمد صفی بھائی، بہت شکریہ، آپ کی شاباشیں اور ڈانٹیں ہی ہیں جو ہمیشہ مجھے توانائی دیتی رہیں اور راستہ دکھاتی رہی ہیں، خوش رہیئے
      ظفر صاحب، نوازش آپ کی
      عرفان صاحب، امیجری لفظوں میں کہاں، آپ کے حسنِ نظر میں ہے، توصیفی الفاظ کے لئے بہت مشکور ہ…وں
      فرحان یار، بہت شکریہ
      گلناز بہن، آپ کا بھی بہت ممنون ہوں، آپ کی اپنی شاعری میں بھی قدرت کے مطالعے کا پہلو بہت نمایاں ہے
      منصور بھائی اور خوشبیر بھائی، آپ دونوں کا بھی بے حد شکریہ

      اور بھائی علی زبیر، یار آپ نے اتنی محبت کا اظہار کیا، کن الفاظ میں شکریہ ادا کروں، اگر میں لکھ رہا ہوں اور آپ کو پسند آ رہا ہے تو میری محنت کا انعام مجھے مل گیا، آپ خود فیس بک پر میرے چند بہت پسندیدہ شعراء میں سے ایک ہپں اور آپ کی رائے میرے لئے بہت محترم ہے، خوش رہیںSee More

      December 13, 2009 at 11:43am
    • ہوئی ہے زرد سی دیکھو زمیں، مری ہی طرح
      ذرا سی خشک ہے، بنجر نہیں، مری ہی طرح
      =========================
      بھنور میں ڈوب نہ جاؤ کہیں گمانوں کے
      گئے جو تم سوئے بحرِ یقیں مری ہی طرح
      …===========================

      اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح

      Yawar bohat khobsurat ghazal kehnay per dhairon daad kabool farmaye…. Allah karay zor e kalam aur ziada… khush rehye…See More

      December 13, 2009 at 1:31pm
    • یاور ماجد شکریہ قیوم صاحب اور فہمیدہ بہن
      December 13, 2009 at 1:41pm
    • Erum Jahan Bohot AAla..
      ہوئی ہے زرد سی دیکھو زمیں، مری ہی طرح
      ذرا سی خشک ہے، بنجر نہیں، مری ہی طرح
      December 13, 2009 at 1:48pm
    • Yawar…nai zameenain chunnain may aur usay nibhamnay main jo kamal tumhain hasil hay main tumharay is kamal e fan ka mutarif hoon.ki achay achay shair nikalay hain.am shair to is zameen main haaath hi na dalay

      ufaq bhi raat ke aane ke KHauf… se Yawar
      paTaKH raha hai zameeN par jabeeN miri hi tarha
      kia khnay bohat hi khoobsooratSee More

      December 13, 2009 at 1:58pm
    • Faiz Alam Babar hamesha ki tara lajawab yawar bhaii bhot khoob bhot aala bhot umda bhot si daad
      December 13, 2009 at 2:43pm
    • یاور بھائی آپ نجانے اتنے دن تک کہاں تھے بہت کمی محسوس کی

      فق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح

      …بہت عمدہ غزل ہے بہت بہت مبارکبادSee More

      December 13, 2009 at 2:47pm
    • اسے بھی شام نے آنچل میں اپنےڈھانپ لیا
      یہ دن بھی دیکھو ہوا احمریں، مری ہی طرح

      کیا کہنے ہیں یاور ۔۔۔اچھی غزل ہے اور تازہ خوشبو کے ساتھ ۔۔

      …تاخیر کی معذرتSee More

      December 13, 2009 at 3:21pm
    • Annie Akhter ise bhi shaam ne aaNchal meN apne DhaaNp liya
      yeh din bhi dekho hua ahmareeN miri hi tarha
      buhat khoob Yawaar, khush raheay 🙂
      December 13, 2009 at 5:00pm
    • وصی حسن بھائی، ایک بار پھر آپ کا ممنون ہوں، غزل پسند کرنے کا اور اتنی تعریف کرنے کا بہت شکریہ، سچ تو یہ ہے کہ ابھی اور بہت سفر پڑا ہے، اور آپ جیسے سینیئر شعراء کا حوصلہ دلانا بہت بڑی نعمت ہے میرے لئے۔
      ارم جی، فیض بھائی، کاشف بھائی ، سعود …بھائی اور عینی آپا، آپ کا بے حد شکریہ ہمت افزائی کاSee More
      December 13, 2009 at 5:35pm
    • اسے بھی شام نے آنچل میں اپنےڈھانپ لیا
      یہ دن بھی دیکھو ہوا احمریں، مری ہی طرح

      اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح

      Yawar khoobsurat Gazal hay. Bohot lutf aya,See More

      December 13, 2009 at 5:40pm
    • یاور ماجد شکریہ مجید صاحب
      December 13, 2009 at 6:31pm
    • ہوئی ہے زرد سی دیکھو زمیں ، مری ہی طرح
      ذرا سی خشک ہے ، بنجر نہیں ، مری ہی طرح
      بھنور میں ڈوب نہ جائو کہیں گمانوں کے
      گئے جو تم سُوئے بحر یقیں ، مری ہی طرح
      جناب یاور ماجد صاحب ۔۔۔ آپ کی غزل میں باقی اشعار بھی اچھے ہیں مگرمجھے درج بالا دو زیادہ …پسند آئے ۔ لاریب کہ غزل میں جدت ہےگو کہ قافیہ مشکل نہیں لیکن جس ردیف کے ساتھ آرہا ہے وہ نسبتا آسان نہیں۔ایک اچھی غزل شئیر کرنے پر شکریہ ۔

      کسی شاعر کے دو شعر یاد آ رہے ہیں ۔۔۔۔۔ پہلا شعر آپ کے مطلع کے نفس مضمون سے ملتا جلتا ہے۔۔۔
      زرخیز زمینیں کبھی بنجر نہیں ہوتییں
      دریا ہی بدل لیتے ہیں رستہ اُسے کہنا
      کچھ لوگ سفر کےلئے موزو ں نہیں ہوتے
      کچھ راستے کٹتے نہیں تنہا اُسے کہناSee More

      December 13, 2009 at 8:57pm
    • bhaNvar meN Doob na jaao kaheeN gumaanoN ke
      gaye jo tum soo-e-behr-e-yaqeeN, miri hi tarha

      ise bhi shaam ne aaNchal meN apne DhaaNp liya
      yeh din bhi dekho hua ahmareeN miri hi tarha

      Yawar bhai.. yahan tu wah wah kehna banta hai… 🙂

      I wanna hug you… Brilliant…!See More

      December 13, 2009 at 10:52pm
    • Nasir Ali اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح

      کیا بات ہے یاور بھائی ۔ بہت مزہ دیا ہے غزل نے اور خاص طور پر درج بالا شعر ۔۔ آہا ۔۔آہا ۔۔ کیا بات ہے۔

      December 14, 2009 at 2:30am
    • یاور بھائی! کہاں غائب رہے اتنے دن! لیکن کیا خوب واپسی ہوئی ہے۔ لظف آ گیا۔ حسب_ معمول اور حسب_ توقع کتنی خوب صورت غزل کے ساتھ آئے ہیں آپ۔ شاعری اور تغزل کو برقرار رکھتے ہوئے جدید فکر کو موضوع بنانا آپ ہی کا حصہ ہے۔ جیتے رہیں۔
      اُفق بھی رات کی …آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح
      کیا خوب شعر ہے۔ جزاک اللہSee More
      December 14, 2009 at 3:23am
    • عاصم صاحب، کامران صاحب، ناصر صاحب اور امجد صاحب آپ سب کق فرداً فرداً شکریہ۔
      امجد بھائی، کیا کریں، تجھ سے بھی دلفریب ہیں غم روزگار کے، اب اکاؤنٹ ڈی ایکٹیویٹ تو شاید نہ کروں لیکن غیر حاضری چلتی رہے گی، فیس بک بہت ٹائم کھا جاتی ہے اور پتہ بھ…ی نہیں چلتا اور ادھر زندگی کے دوسرے کام ہیں جو پیچھے چھوڑ کر آگے بھاگ جاتے ہیںSee More
      December 14, 2009 at 5:58am
    • Shoaib Afzaal yawar bhai ehbab ki bat baja hay khobsorat images aur mushkil magar naye nawaili zamin ka intakhab ap ki shaeri ka wasf hay…masrofiyat tu meray bhai rafeeqay dam hay yeh jo shaeri ka mamla hay tu tabah ka rukna aur rawani ka paish khaima hay …khuda ap ko wo tamam faragtain nasib karay ka ap aisay hi naye naye ashar say hamain nawaztay rahain dhero dher duayen aur dad.
      December 14, 2009 at 6:14am
    • Zahid Ahmed waah……..kamal hai Yawar jee. kiaa hii baat hai
      اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح
      bohat c daad aordheroN duaa’eN
      December 14, 2009 at 7:54am
    • Tabish Sajjad beautiful
      December 14, 2009 at 8:03am
    • SubhanALLAH kya Achchi Ghazzal Hey..
      Yawar Bhai Aap Key Lieay Mahabattein,
      Salamati Ho..

      @@ Issey Bhee Shaam Ney Aanchall Mein Apney Dhaa’np Lieay..
      …Ye Din Bhee Deikho,Hua Aahmaree’n,Mri Hee Traah..

      @@ Uffaq Bhee Raat Kee Aamadd Key Khouf Sey Yawar..
      Pattakh Raha Hae Zamii’n Par Jabii’n, Mri Hee Traah..
      ALLAH karey Zour-e-QALLAM or Zyada..See More

      December 14, 2009 at 10:16am
    • Sub’han Allah…..Yawar,

      اسے بھی شام نے آنچل میں اپنےڈھانپ لیا
      یہ دن بھی دیکھو ہوا احمریں، مری ہی طرح

      …اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح

      kia achey shair nikaaly hn, wah !!
      in 2non ash’ar mn TALAZMA barri khoobsur’ti sy tashkeel hua hy…Yaqin’an, "naya shair kehna” khaasa dushwar amal hy :
      KHOON-Y-DIL SAR’F KRNA PARR’TA HY….!!

      meri janib sy daad qubool fermaayiye !!See More

      December 14, 2009 at 9:30pm
    • Yawar Bahi. Bohat Achi ghazl hai .

      بھنور میں ڈوب نہ جاؤ کہیں گمانوں کے
      گئے جو تم سوئے بحرِ یقیں مری ہی طرح

      …is sher nay lout lia hai …

      Aap k liye bay-tahasha duaainSee More

      December 14, 2009 at 10:36pm
    • Jamshed Masroor Very nice Yawar
      December 15, 2009 at 3:43am
    • یاور ماجد شکریہ شعیب صاحب، زاہد صاحب، تابش بھائی، ذاکر صاحب، ضیا صاحب، کاشف اور جمشید صاحب۔
      آپ کی بات درست ہے ضیا بھائی، خونِ دل سے بھی ماورا چیزیں لٹانی پڑتی ہیں،
      December 15, 2009 at 5:52am
    • Zia Turk ہاں بھائی ۔۔۔۔۔۔ کچھ ایسا ہی ہے ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
      حافظ فرمود ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ع ۔۔۔۔۔۔
      کُجا دانند حالِ ما سُبک سارانِ ساحل ھا۔ ۔ ۔ ۔ ۔
      December 15, 2009 at 8:07am
    • یاور ماجد بھئی فارسی نہیں آتی اور بہت تشنگی رہتی ہے کہ کسی طرح حافظ کا اور غالب کا فارسی کلام بھی پڑھنے کا موقع ملے، اب عمر کے اس حصے تک پہنچ چکا ہوں جہاں نئی زبان سیکھنا مشکل لگتا ہے اور دوسرا زندگی کی مصروفیتیں بھی اس عیاشی کی اجازت نہیں دیتیں
      December 15, 2009 at 8:36am
    • Imran Jaffer Kia Kehnay… Yawar Bhai, achi ghazal hy.
      Salamat Rahein.
      December 15, 2009 at 10:19am
    • Masood Quazi ھنور میں ڈوب نہ جاؤ کہیں گمانوں کے
      گئے جو تم سوئے بحرِ یقیں مری ہی طرح

      بھائ یاور ماجد بہت اچھا کہہ رہے ھو ماشاللہ

      December 15, 2009 at 10:57pm
    • Minhas Hani sir bhoot aala… wohi sadgi, wohi latafat jo aap k kalam ka khasa hai…
      اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح
      December 16, 2009 at 4:28am
    • یاور ماجد شکریہ قاضی صاحب اور منہاس صاحب، آپ لوگوں کی محبت ہے
      December 16, 2009 at 6:12am
    • ہوئی ہے زرد سی دیکھو زمیں، مری ہی طرح
      ذرا سی خشک ہے، بنجر نہیں، مری ہی طرح

      اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح

      مبارک ہو یاور، کیا اچھے شعر ہیں۔ کاش یہ میرے ہوتے۔

      December 16, 2009 at 11:50am
    • Mohammad Naeem Yawar bohut achhee or sehar angaiz ghazal hai.
      Thanks tagging!
      December 16, 2009 at 2:58pm
    • یاور ماجد شکریہ اعجاز صاحب، بہت بڑا اعزاز ہے آپ کا تبصرہ میرے لئے، خدا آپ کا سایہ ہم پر سلامت رکھے
      شکریہ نعیم صاحب، محبت آپ کی
      December 16, 2009 at 3:07pm
    • نسیمِ صبح کے جھونکوں میں جھومتا برگد
      یہ کہہ رہا ہے کہو آفریں مری ہی طرح
      اسے بھی شام نے آنچل میں اپنےڈھانپ لیا
      یہ دن بھی دیکھو ہوا احمریں، مری ہی طرح
      اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      …پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح
      December 21, 2009 at 12:25pm
    • Gulnaz Kausar ذرا ان تینوں اشعار کو ایک ساتھ پڑھ کر دیکھیے وہی کیفیت جو تیسرے شعر میں ہے وہ باقی کے دو اشعار کا بھی مکمل احاطہ کرتی ہے ۔۔۔ فرق اگر ہے تو وہ ویسا ہی ہے جو ایک مدھم آنچ اور شعلے کا فرق ہوتا ہے ۔۔۔ بلکہ یوں کہیے کہ آہنگ ایک مدھم لے میں کروٹ لے کر اٹھتا ہے اور پھر ایک گونج کی شکل اختیار کر جاتا ہے ۔۔۔۔ اس طرح امیجری نہ صرف شکل بلکہ آہنگ میں بھی اپنی تکمیل کرتی نظر آتی ہے ۔۔۔۔
      December 21, 2009 at 12:25pm
    • گلناز جی آپ نے بہت اچھے کمنٹس دیئے ہیں۔ دلچسپ سوال یہ ہے کہ ایسا کیوں ہے کہ جن اشعار میں آپ کیفیت کا لطف اٹھا رہی ہیں، ممکن ہے کسی اور کو اُن میں کیفیت کی کمی نظر آرہی ہو۔ یہی وہ سبجیکٹیویٹی ہے جو شاعری کو شاعری بناتی ہے۔ سب انسان احساس …کی سطح پر ایک سے نہیں ہوتے۔ کچھ لوگ تعقل پر زیادہ انحصار کرتے ہیں، کچھ احساس پر۔ یاور کی جتنی شاعری میں نے پڑھی ہے وہ احساس کی سطح پر کم اور ذہنی سطح پر زیادہ موثر ابلاغ کرتی ہے۔ اس کا مطلب یہ قطعاً نہیں کہ یہ شاعری کیفیت سے عاری ہے۔ اس کا صرف یہ مطلب ہے کہ اس کی کیفیت ہر شخص پر ایک جیسا اثر نہیں کرے گی۔ جو لوگ شعر کی بنت اور مفاہیم سے لطف اندوز ہوتے ہیں، وہ زیادہ حظ اٹھائیں گے۔ اگر یہ نہ ہو تو شاعری کی درجہ بندی اور معیارات بالکل ریاضی کی طرح ہوکر رہ جائیں۔See More
      December 21, 2009 at 2:01pm
    • بہت ممنون ہوں گلناز بہن اور عرفان بھائی آپ کی توجہ کا ، کسی شعر میں کیفیت کیا ہوتی ہے، میرا خیال ہے اگر آپ دو شاعروں سے الگ الگ پوچھیں تو شاید وہ اس کی تعریف بھی مختلف انداز میں ہی کریں گے، علی شاید آ کر بتائیں کہ کیفیت سے وہ کیا مراد ل…یتے ہیں، میرے نزدیک جب تک شاعر خود کسی حالت میں سے گزرا نہ ہو، وہ لاکھ جتن کر لے، لاکھ فن دکھا دے، اپنے شعر میں ایسا اثر نہیں لا سکتا جیسا کہ کوئی دوسرا جو خود ایسی حالت کا تجربہ اپنی ذات پر جھیل چکا ہو۔
      میں اپنا شمار ان لوگوں میں کرتا ہوں جن کو اگر کوئی آ کر کہے کہ بھئی فلاں موضوع پر ایک نظم لکھ دو، تو میرے ہاتھ بندھ جاتے ہیں اور میں نہیں لکھ سکتا، کوشش بھی کروں تو کچھ نہیں کر پاتا۔ آج تک جو کچھ لکھا ہے وہ ذاتی تجربوں، زندگی کے حادثات یا اپنی محرومیوں یا اپنی کامیابیوں کے ردِّ عمل کے طور پر ہی لکھا ہے، اب اس میں کوئی کامیابی ہوئی یا نہیں یا ہو پائے گی یا نہیں، یہ تو آنے والا وقت ہی بتائے گا۔
      آپ تمام احباب کا ایک بار پھر ممنون ہوں کہ آپ سب نے اتنی توجہ دی، یہ سب آپ کی محبتیں ہیں اور میری خوش نصیبیاں۔See More
      December 21, 2009 at 3:30pm
    • دیر سے حاضری کیلیے معذرت خواہ ہوں برادرم۔

      خوبصورت غزل ہے آپ کی، اچھے اشعار ہیں۔

      نسیمِ صبح کے جھونکوں میں جھومتا برگد
      …یہ کہہ رہا ہے کہو آفریں مری ہی طرح

      کیا محاکات ہیں اس شعر میں، کیا کیا مناظر اور ان سے جڑی یادیں آنکھوں کے سامنے آ گئیں اس شعر سے، لاجواب۔

      اسے بھی شام نے آنچل میں اپنےڈھانپ لیا
      یہ دن بھی دیکھو ہوا احمریں، مری ہی طرح

      اُفق بھی رات کی آمد کے خوف سے یاور
      پٹخ رہا ہے زمیں پر جبیں، مری ہی طرح

      اور یہ دنوں اشعار بھی بہت خوبصورت ہیں، واہ واہ واہ۔See More

      December 25, 2009 at 10:49am
    • یاور ماجد شکریہ وارث صاحب، آپ کا حسنِ نظر ہے
      December 25, 2009 at 11:30am
    • Faizan Abrar واہ!!! یاور بھائی کیا عمدہ غزل کہی ہے۔۔ سبھی اشعار لطف دے رہے ہیں۔۔۔ بہت سی داد میری جانب سے بھی قبول کریں۔۔۔ اللہ تعالٰی آپ کو شاد و آباد رکھے۔۔۔
      January 13 at 11:17am
    • Afzaal Naveed Bohot aala Yawar, Khush raho.
      October 7 at 8:02am
  • وہم کی کالی گھٹا نظروں سے ہٹتی ہی نہیں
    دُھند ایسی دل پہ چھائی ہے کہ چھٹتی ہی نہیں

    آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
    اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

    ہے دلِ عابد کی ہر اٹھتی صدا میں انتشار
    جائے گنبد میں نظر کے تو پلٹتی ہی نہیں

    صبح کے ہر در سے اژدر یاس کا لپٹا ملے
    رات اس مارِ سیہ کے ساتھ کٹتی ہی نہیں

    میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
    ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں

    میں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر
    دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں

    یاور ماجد

    Transliteration

    vehm ki kaali ghaTa nazroN se haTti hi naheeN
    dhund aisi dil pe chhaayi hai keh chhaTti hi naheeN

    aaNkh bhar hi aasmaaN hai dil ki dunia ka magar
    itnio vus’at hai keh nazroN meN simaTti hi naheeN

    hai dil-e-aabid ki har uThti sada meN intishaar
    jaaye gunbad meN nazar ke to palaTti hi naheeN

    subha ke har dar se ayydar yaas ka lipTa mile
    raat is maar-e-siyah ke saath kaTti hi naheeN

    maiN luRhakta hi chalooN kaun-o-makaaN ki khaayi meN
    aisi gardish shash jihat ki hai keh ghaTti hi naheeN

    maiN hooN yawar apni fitrat meN ujaaloN ka safeer
    dhool mujh se dasht-e-zulmat ki lipaTti hi naheeN

     

    Yawar Maajed

    Read this Ghazal on Facebook

     

    آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دنیا کا مگر

  • 8 people like this.
    • وہم کی کالی گھٹا نظروں سے ہٹتی ہی نہیں
      دُھند ایسی دل پہ چھائی ہے کہ چھٹتی ہی نہیں

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      یاور ماجد : تنگ قوافی میں بہت اچھے مضامین نظم کئے ہیں اور نہایت خوبی کے ساتھ۔ ۔
      مطلع بہت ہی مزہ دے گیا ۔ اژدر اور مار۔ سیاہ کا ستعمال بھی خوب ہے ۔ خوش رہئے جناب ۔ ڈھیروں داد اور بہت سی دعائیں آپ کیلئے ۔

      November 19, 2009 at 7:11pm
    • یاور ماجد پسندیدگی کا اور عزت افزائی کا شکریہ مجید صاحب
      November 19, 2009 at 7:40pm
    • یاور ماجد یہ غزل پہلے لنک کی صورت میں یہاں ڈالی تھی اور بیشتر احباب پہلے پڑھ چکے ہیں، اب باقاعدہ نوٹس بنانے لگا ہوں اور دوستوں کا حلقہ بھی کچھ وسیع ہو گیا ہے تو سوچا کہ اس کو بھی ایک نوٹ میں ڈال دوں، امید ہے آپ لوگوں کو پسند آئے گی
      November 19, 2009 at 7:50pm
    • Khushbir Singh Shaad Aankh bhar hi aasmaaN hai dil ki dunia ka magar
      itni wusaat hai ke nazroN mein simatTi hi nahi
      bahut Khoob Yawar sahib
      November 19, 2009 at 9:28pm
    • Masood Quazi آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      واہ واہ بھت عمدہ بندشین اور تراکیب ھیں داد قبول کریں
      November 19, 2009 at 9:38pm
    • Kashif Haider buhat khoob Yawar bhai buhat khobsorat ghazal hai
      November 19, 2009 at 9:38pm
    • Shoaib Afzaal wah yawar Ghazal ki khobsorti shaer ki jidat pasandi hay aisay fun paron ko takhleqat kehna baja hay kiokay ap kay han creativity bohat hay…Dua gau ho khuda ap kay lehjay ko aur tawana karay bohat si duayen aur dad qabol kejeye…khaqsar mani.
      November 19, 2009 at 11:34pm
    • wah yawar wah…is ghazal ki sab say bari khoobi iski ramziat hay…har shair doobara parhnay per aik aur maza dayta hayمیں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر
      دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں
      kia kahnay hain…saray shair bohat acha…y lagay
      November 19, 2009 at 11:48pm
    • Gulnaz Kausar آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      umda shaer hay aur achi ghazal hay yawar … diction ka istamal khoob hay …
      November 20, 2009 at 12:36am
    • Arif Imam آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      بہت عمدہ غزل ہے یاور۔ سلامت رہو
      November 20, 2009 at 1:06am
    • SubhaanALLAH,
      Wah wah Kya kehne Hain Yawar Bhai.Luttf Aa Ga’ya.
      @@ wa’ham Kee Kaali Ghatta Nazro’n Sey Hatt’tee hee Nahien..
      Dhuunnd Aisee Dill Pey Chhaii hae keh chhatt’tee hee nahien..

      …@@ Aankh Bharr hee Aasmaa’n Hae Dil Kee Dunya Ka,Magar..
      Itni wuss’att Hae Keh Nazro’n Mein Simatt’tee Hee Nahien..
      @@ Main Lurrhakta Hee Challu’n Koun-o-Makaa’n Kee Khaii Mein..
      Aisee Gardish Shash Ja’hatt Kee Hae Keh Ghatt’tee Hee Nahie’n..
      Or kya Achha Maqta Hae SubhaanALLAH..Itna Ummdah o Behtareen Kalaam Tag karney Par bharpoor daad. Or beyhadd shukriya..
      @@ Main Hoo’n Yawar Apni Fittrat Mein Ujjaalo’n Ka Safeer..
      Dhool Mujh Sey Dashtt-e-Zulmat Kee Lipatt’tee Hee Nahien..

      November 20, 2009 at 1:25am
    • Akhtar Usman میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
      ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں
      Kia baat hai,jeetay rehyae.accha kaha aap nay.
      November 20, 2009 at 2:04am
    • یاور بھائی یہ غزل بھی آپ کے ندرت کی تلاش میں سرگرداں ذہن کی بھرپور عکاس ہے۔ بہت مشکل زمین تراشی، اور خوب نبھایا۔ اور اس شعر کا تو جواب ہی نہیں۔

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      …کیا کہنے۔ سبحان اللہ۔

      November 20, 2009 at 2:28am
    • میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
      ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں

      yawar sb bht umda khaiyalaat k sath bht achi trah say lafzoin k sath khailtay howay kuch haqeeqatain likh dali hain aap nay..great one..bht dad maire tarf say……

      November 20, 2009 at 2:40am
    • Ali Zubair kiya kahnay yaawar maajid,,kiya kahnay hen..
      men hon yawar ujaalon men apni fitrat ka safeer
      dhool mujh say dasht e zulmat ki lipat ti hi nahi

      kiya kahnay hen! poori ghazal hi shanddar hay,,boht shukriya janaab ka,thanks

      November 20, 2009 at 2:59am
    • Yawar bhai… !!!

      ہے دلِ عابد کی ہر اٹھتی صدا میں انتشار
      جائے گنبد میں نظر کے تو پلٹتی ہی نہیں

      …صبج کے ہر در سے اژدر یاس کا لپٹا ملے
      رات اس مارِ سیہ کے ساتھ کٹتی ہی نہیں

      میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
      ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں

      I am speechless… your ghazals are always profound and that is what I like about your poetry… Every couplet comes on paper after being processed through real experiences and emotions, nothing seems fake when one reads your poetry… True feelings with a wonderful skill to craft it in a beautiful piece of poetry… what more a reader would crave for…?

      Thanks for sharing

      November 20, 2009 at 3:08am
    • اکثر اوقات ایسا ہوتا ہے کہ شاعر انفرادیت کے چکر میں خیال میں یا اظہار میں ناکام ہو جاتا ہے۔ لیکن آپ کے ہاں یہ کمال ہے کہ آپ ندرت_ خیال اور نیرنگیئ اظہار میں ہمیشہ کامیاب و کامران رہتے ہیں۔
      کتنی خوب صورت غزل کہی ہے آپ نے۔ مزہ آ گیا۔ ہر شعر کم…ال کا ہے ۔ مطلع اور آخری دو اشعار زیادہ پسند آئے۔ جیتے رہیے۔
      November 20, 2009 at 3:16am
    • Amjad Shehzad Shukriya Ali Zaryoon Bhai
      November 20, 2009 at 5:00am
    • آپ سب احباب کا عزت افزائی پر حد سے زیادہ ممنون ہوں، بہت ممنون

      مجید اختر صاحب، خوشبیر صاحب، مسعود قاضی صاحب، کاشف حیدر صاحب، طلعت زہرا جی، شعیب افضال صاحب، وصی صاحب، عارف امام صاحب، گلناز کوثر جی، ذاکر حسین ضیائی صاحب، اختر عثمان صاحب، عرفا…ن ستار صاحب، حسن کھوکھر صاحب، علی زبیر صاحب، امجد شہزاد صاحب، کامران حیدر صاحب اور علی زریون صاحب، آپ سب احباب کا فرداً فرداً شکریہ

      میں ذاتی طور پر اس بات پر پختہ یقین رکھتا ہوں کہ اگر آپ شعوری طور پر ندرت کی تلاش میں نکلیں گے تو زیادہ دور نہیں جا پائیں گے، اپنے اندر کی کھوج کے لئے نکلیں گے تو ندرت آپ کو خود تلاش کر لے گی، ہم لوگوں سے اشعار دل کی تڑپ اور اپنے اندر چھپے انسان سے جاری مکالمے خود بخود کہلوا دیتے ہیں۔ جذبے جو مجھ جیسے اور آپ سب احباب جیسے حساس لوگوں کی متاع ہیں، ہم غریبوں کی واحد دولت ہیں

      November 20, 2009 at 6:31am
    • بہت خوب یاور ، اچھے جا رہے ہو

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      …میں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر

      دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں

      November 20, 2009 at 9:39am
    • بہت خوب یاور ، اچھے جا رہے ہو

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      …میں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر

      دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں

      November 20, 2009 at 9:39am
    • Zafar Khan بہت خوب یاور۔اچھی غزل ہے۔
      November 20, 2009 at 9:48am
    • Minhas Hani اس غزل کو کیسے سراہا جاۓ کہ بڑے سے بڑا لفظ حق ادا کرنے سے قاصر ھے۔ اللہ شاد و آباد رکھے
      November 20, 2009 at 9:59am
    • Imran Jaffer Kia kehnay…. Bhai Yawar Maajed, Bohat Khoob.
      Salamat Rahein.
      November 20, 2009 at 10:21am
    • یاور ماجد طارق صاحب، ظفر صاحب، منہاس صاحب اور عمران صاحب ، بہت شکریہ آپ لوگوں کا، خاص کر منہاس صاحب، آپ نے تو محبت کی انتہا کر دی، خدا آپ سب کو خوش رکھے
      November 20, 2009 at 10:44am
    • Zafar Khan میں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر
      دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں

      بہت اچھا شعر ہے۔

      November 20, 2009 at 10:49am
    • اعجاز عبید واہ
      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      جیتے رہیں یاور۔
      November 20, 2009 at 11:17am
    • یاور ماجد شکریہ اعجاز صاحب، خدا آپ کا دستِ شفقت ہمارے سر پر سلامت رکھے
      November 20, 2009 at 3:49pm
    • Faiz Alam Babar wah wah wah yawar bhai ..poori ki poori ghazal dil ko bha gaii ..aik murassa aur bharpoor ghazal par bharpor daad qabool keejiye.thanks
      November 20, 2009 at 4:34pm
    • صبج کے ہر در سے اژدر یاس کا لپٹا ملے
      رات اس مارِ سیہ کے ساتھ کٹتی ہی نہیں

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      …bhai bohat achay likhtay ho kia baat ha khush raho wah wah maza aa gya

      November 21, 2009 at 12:59am
    • Nasir Ali ماجد صاحب ۔ اچھی غزل ہے کئی شعر تو کمال کے ہیں ۔ پکڑ لیتے ہین قاری کو ۔
      شکریہ اتنی اچھی غزل ٹیگ کرنے کا ۔
      November 21, 2009 at 1:53am
    • حسن طبیعت سے لے کر حسن سخن تک یاور ماجد کی شخصیت کی داد دئیے بغیر نہیں رہا جا سکتا ۔۔۔وہ بہت سے عناصر جن کا یکجا ہونا زرا مشکل ہے۔۔اگر یکجا ہو جائین تو فیصلہ کرنا مشکل ہوتا ہے کہ خوشی زیادہ ہے یا حیرانی ۔۔۔۔یاور کے معاملے میں اسی استعجابیہ …خوشی کا سامنا ہوتا ہے۔۔۔۔جو بات ان کی شاعری میں ایک نظر مین سامنے آجاتی ہے وہ اس نئے زاویے کی تلاش ہے جس کی تلاش ہر اچھے شاعر پر فرض کی طرح عائد ہوتی ہے۔۔۔۔یہ اور بات کہ فرض شناسی آۡج کل زرا کم کم باقی رہ گئی ہے۔
      ۔
      یہ غزل بھی ان کی ندرت اور تلاش کی نشاندہی کرتی ہے

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      میں توقع کرتا ہون کہ یاور ماجد کا شعری مجموعہ جب بھی ظہور پذیر ہوگا۔۔۔۔وہ اسی استعجاب بھری خوشی کا مجموعہ ہوگا۔۔

      November 21, 2009 at 9:25am
    • یاور ماجد بہت محبت آپ کی سعود بھائی، بہت خلوص آپ کا۔ میں تو اپنے آپ کو خوش نصیب سمجھتا ہوں کہ فیس بک کے ذریعے آپ سے رفاقت کا موقع مل گیا۔ خوش رہیں
      November 21, 2009 at 9:39am
    • Mohammad Kaiserimam iss qadar khoobsurat baat aur itni khoobsurti ke saath.
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      November 21, 2009 at 11:11am
    • یاور ماجد فیض صاحب، ناصر صاحب، فرحان صاحب اور انک قیصر، آپ لوگوں کی بہت محبت ہے، بہت شکریہ آپ کی پذیرائی کا
      November 21, 2009 at 3:59pm
    • وہم کی کالی گھٹا نظروں سے ہٹتی ہی نہیں
      دُھند ایسی دل پہ چھائی ہے کہ چھٹتی ہی نہیں

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      Yawar Maajed sahab … Bohat umda ghazal kehnay per daad kabool farmaye… Allah karay zore qalam aur ziada…
      thanks for sharing and tag 🙂

      November 21, 2009 at 4:54pm
    • یاور ماجد سکریہ فہمیدہ جی
      November 21, 2009 at 6:14pm
    • Annie Akhter Yawar saheb, buhat achay. aap kay qalam ki tawanai mashallah din badin berhti ja rahi hai. khuda UjaluN kay safeer ko nazer-e-bad say bahcay. khush raheay 🙂
      November 21, 2009 at 6:16pm
    • یاور ماجد آپ کی دعائیں ساتھ رہیں عینی آپی، غزل پڑھنے کا اور پنسد کرنے کا بہت شکریہ
      November 21, 2009 at 6:19pm
    • واہ بہت خوبصورت غزل ہے یاور صاحب، مطلع اور مقطع دونوں ہی جاندار ہیں۔

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      …میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
      ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں

      اور ان دونوں اشعار کا بھی کوئی جواب نہیں ہے، بہت اعلیٰ، بہت داد قبول کیجیئے جناب۔

      November 22, 2009 at 9:49am
    • Qayyum Khosa Bahut Shukriya Yawar Bhai. Bahut Umda. Salamat Rahain.
      November 22, 2009 at 10:19pm
    • ‎;ankh bhar he asman hy dil ke dunya ka magar
      ;itnee wossat hy ka nazroon mein smettii ha nahe.’

      …ache ghzal hy yawar bhai.

      November 23, 2009 at 2:12am
    • یاور ماجد شکریہ وارث صاحب، عرفان صاحب، اور کھوسہ صاحب
      November 23, 2009 at 10:16am
    • Jamshed Masroor Very nice Yawar
      November 24, 2009 at 6:47am
    • August 27 at 10:23pm
    • Afzaal Naveed Bohot khoob Yawar. Barri dstaras se ghazal kehte ho.
      October 7 at 8:24am
  • کئی طوفان آئیں گے اب اس سیلاب سے آگے
    کہانی تو چلے گی اختتامی باب سے آگے

    تخیّل ساتھ ہے، بے خوابیوں کا پھر گلہ کیسا
    کئی اک خواب باقی ہیں شکستِ خواب سے آگے

    خدا کے نام پر کتنے خدا ہم نے بنا ڈالے
    جبیں پر ہیں کئی سجدے، گڑی محراب سے آگے

    مرے شعروں میں لفّاظی سے بڑھ کر بھی بہت کچھ ہے
    معانی ڈھونڈنے ہیں تو پڑھو اعراب سے آگے

    ابھی سے پاؤں کے چکّر سے یاور تھک گئے کیونکر
    بھنور باقی کئی ہیں اور اس گرداب سے آگے

    یاور ماجد

    Read this Ghazal on Facebook 

     

  •  
    7 people like this.
    • Zafar Khan واہ جناب۔ عمدہ غزل ہے۔ بہت سی داد۔
      November 5, 2009 at 11:41am
    • Kamran Haider Bukhari مرے شعروں میں لفّاظی سے بھی زیادہ بہت کچھ ہے
      معانی ڈھونڈنے ہیں تو پڑھو اعراب سے آگے

      Brilliant…

      November 5, 2009 at 12:04pm
    • یاور ماجد کھوسہ صاحب، ظفر صاحب، صغیر صاحب اور کامران صاحب، پسندیدگی کا بے حد شکریہ
      November 5, 2009 at 12:26pm
    • Majeed Akhtar کئی طوفان آئیں گے اب اس سیلاب سے آگے
      کہانی تو چلے گی اختتامی باب سے آگے

      Mujhay to matla maza de gaya. Acchi gazal hay Yawar. Weekend ka tohfa !!! . Salamat raho.

      November 5, 2009 at 12:30pm
    • Shoaib Afzaal achi ghazal hay khob mazameen bandhay hain ap nay…ghazal ka husn aik mukhtalif qafiay ka istamal aur ilfaz ki nae tarakeb tarashnay may hay jo ap ki genuinity ka sabot hay…kaye ka istamal ap nay lag bhag 4 ashar may kia hay lagta hay khayal ki aik he mauj ya kam say kam aik nashist may likhi gae gazal hay…maza aya gazal parh kay inshalah ap kay kalam say mustafid hotay rahain gay.
      November 5, 2009 at 1:43pm
    • Zarrah Hyderabadie بہت خوب یاور صاحب واہ واہ
      November 5, 2009 at 1:45pm
    • یاور ماجد درست فرمایا شعیب صاحب، دوسرے شعر کے پہلے مصرعے کے علاوہ جو بعد میں احمد صفی بھائی کی رائے پر تبدیل کیا، باقی سب ایک ہی نشست کے اشعار ہیں
      آپ کے تعریفی الفاظ کے لئے بے حد مشکور ہوں،
      ذرہ صاحب، آپ کی نوازش ہے، شکریہ
      November 5, 2009 at 2:29pm
    • عرفان ستار صاحب کا شکریہ جنہوں نے لفظ زیادہ کی نشاندہی کی، میں نے مصرعہ تبدیل کر دیا ہے

      مرے شعروں میں لفّاظی سے بھی بڑھ کر بہت کچھ ہے
      معانی ڈھونڈنے ہیں تو پڑھو اعراب سے آگے

      …شکریہ عرفان صاحبSee More

      November 5, 2009 at 2:38pm
    • Irfan Sattar aray Yawar sahib aisi bhool chook to hum sab hi sey hoti hai. ehbaab sey share kartey huey aadmi itni bareek-beeni sey kahaN daikhta hai? Ghazal bohat umda hai, ashkar bohat khoob aur zameen nihayat taza! Zindabad.
      November 5, 2009 at 3:07pm
    • Naheed Virk تخیّل ساتھ ہے، بے خوابیوں کا پھر گلہ کیسا
      کئی اک خواب باقی ہیں شکستِ خواب سے آگے
      waah!
      November 5, 2009 at 5:45pm
    • Faiz Alam Babar wah bhot umda yawar bhaii 2nd sher tu dil main utar gia bhot pasand aaya thankx 4 share
      November 5, 2009 at 6:15pm
    • Khushbir Singh Shaad Khuda key naam par kitney khuda hum ney bana daaley;
      bahut achhi ghazal hai Yawar sahib
      November 5, 2009 at 10:34pm
    • Nasir Ali bohat khoob Yawar Sahib.
      November 5, 2009 at 11:31pm
    • Masood Quazi مرے شعروں میں لفّاظی سے بھی بڑھ کر بہت کچھ ہے
      معانی ڈھونڈنے ہیں تو پڑھو اعراب سے آگے

      بالکل بامعنی اشعار اور تنگ قافیہ میں کمال کے شعروں سے مرصع غزل مبارک ھو

      November 5, 2009 at 11:50pm
    • yawar..tumhara kamal yay hay kay tum seedhay sadhay shair kahtay hi naheen hooo.apni zameen tarshtay ho aut phir usko nibhanay main lag jatay ho..is liyay tumhari ghazal infaradiyat kay ilwa aik khas maza daiti hay…bohat khoob
      matla bohat …acha lagaSee More
      November 6, 2009 at 12:39am
    • Ali Zubair boht achchi ghazal hay yaawer maajid..bila shuba ye pichli ghazlon ka tasalsul hay,,or khoob hay,,boht si dad yawer sahb
      November 6, 2009 at 3:00am
    • اعجاز عبید مشکل زمین میں اچھی غزل، اور یوں کہنا چاییے کہ ایک ہی نشست میں کہی گئی ہے تو آسان غزل۔ پھر بھی غزل میں واقعی محض لفاظی نہیں ہے۔ شکریہ یاور۔
      November 6, 2009 at 3:47am
    • Saud Usmani زرا تاخیر سے پہنچا اور اس وقت بھی بھاگ دوڑ میں ہوں ۔۔۔صرف حاضری لگوانے اور مبارک باد دینے کی گنجائش ہے۔۔قبول کریں
      November 6, 2009 at 4:22am
    • یاور ماجد ناہید جی، فیض صاحب، خوشبیر صاحب، ناصر صاحب، علی صاحب، اعجاز صاحب اور سعود صاحب، وصی صاحب آپ سب کا غزل پسند کرنے کا بہت شکریہ۔
      November 6, 2009 at 7:12am
    • Janaab bohat mushkil zamiin meN bohat”saaf suthri”
      Ghazal.har shair apne mAani ke tayyun ke saath
      iblaaGh ki kisi paichiidagi se nahiiN guzaar rahaa.
      Khush rahiye aur maiN aap kaa matlA paRhte
      huye huaa ravaanah…………………
      …”kaii tuufaan aaiN ge ab is sailaab se aage
      kahaani tau chale gi iKhtetaami baab se aage”See More
      November 6, 2009 at 8:13am
    • یاور ماجد بہت محبت آپ کی عزم صاحب، حوصلہ افزائی پر بہت شکر گزار ہوں
      November 6, 2009 at 8:15am
    • Annie Akhter yaawar saheb…….. buhat khoob. khush raheay 🙂
      November 6, 2009 at 4:43pm
    • Annie Akhter khuda taala aap qalam ko mazeed tawanai aata karay. ameen.
      November 6, 2009 at 4:44pm
    • یاور ماجد غزل کی پسندیدگی اور دعا کے لئے بے حد شکریہ عینی آپا
      November 6, 2009 at 5:21pm
    • Gulnaz Kausar umda ghazal hay yawar … bohat khoob …
      November 6, 2009 at 6:42pm
    • یاور ماجد Thanks Gulnaz
      November 6, 2009 at 8:26pm
    • یاور بھائی ! محفل میں دیر سے شامل ہوا ہوں اس کے لیے معذرت۔ آپ کی ہر غزل اپنی جگہ ایک حسن اور حسن_بیان کا نمونہ ہوتی ہے۔ یہ غزل بھی آپ کے اپنے اچھوتے انداز کی غزل ہے۔ احباب نے سچ کہا کہ آپ اپنی زمین اور تراکیب خود تراشتے ہیں۔ اور پھر یہ بھی …کہتے ہیں کہ ‘زور_ سخن جو ہوتا برابر تراشتے‘ ۔
      اس غزل میں سبھی اشعار اچھے ہیں۔ مجھے دوسرے شعر میں ‘بے خوابیوں‘ اچھا نہیں لگ رہا ۔اسے آپ ذاتی پسند ناپسند بھی کہہ سکتے ہیں۔
      مرے شعروں میں لفّاظی سے بھی بڑھ کر بہت کچھ ہے
      معانی ڈھونڈنے ہیں تو پڑھو اعراب سے آگے
      بہت ہی اچھا شعر ہے۔See More
      November 7, 2009 at 12:26am
    • Amjad Shehzad مرے شعروں میں لفّاظی سے بھی بڑھ کر بہت کچھ ہے
      اس مصرعہ میں اگر ‘بھی بڑھ کر‘ کی بجائے ‘ بڑھ کر بھی‘ ہو تو کیسا ہے! کیا خیال ہے آپ کا۔
      November 7, 2009 at 6:11am
    • Arif Imam اچھی غزل ہے۔ امجد شہزاد کا کہنا درست ہے
      November 7, 2009 at 6:38am
    • امجد صاحب، توصیفی الفاظ کے لئے بےحد ممنون ہوں۔
      سجیسشن کا بے حد شکریہ، میں نے اس پر ایک تفصیلی جواب لکھا اور اپنے اصل مصرعے کا دفاع کرنے کی کوشش کی لیکن آخر میں یہی کھلا کہ آپ کی بات درست ہے اور لفظ ۔۔بھی۔۔ کی صحیح جگہ ۔۔۔بڑھ کر۔۔۔ کے بعد… ہی ہے
      بہت عنایت آپ کی توجہ کی
      عارف صاحب، بہت نوازش آٓپ کی بھی
      یاورSee More
      November 7, 2009 at 7:35am
    • یاور ماجد تحریر میں تبدیل کر دیا ہے، تصویر میں بھی وقت ملا تو کر دوں گا۔
      November 7, 2009 at 7:36am
    • Basheer Ahmed Khan ابھی سے پاؤں کے چکّر سے یاور تھک گئے کیونکر
      بھنور باقی کئی ہیں اور اس گرداب سے آگے

      اچھی غزل ہے۔۔۔۔

      November 7, 2009 at 4:08pm
    • یاور ماجد Thanks Bashir Sahib, I appreciate your kind words
      November 7, 2009 at 4:25pm
  • اتار پھینکا جو میں نے انا کا، آن کا وزن
    اُتر گیا مرے کندھوں سے دو جہان کا وزن
     
    بہت ہے ثقلِ زمیں اور میرے پر نازک
    سنبھال پائیں گے کیسے مری اُڑان کا وزن
     
    گزاری عمر یونہی شک کی دُھول میں دب کر
    پنپ نہ پایا یقیں اِتنا تھا گُمان کا وزن
     
    میں آج ہوں زدِ طوفاں، گھرا ہوں بیچ بھنور
    اور اُس پہ توڑے مری کشتی بادبان کا وزن
     
    گھُٹن سے کیسے نہ برسیں، زمین پر بادل
    اُٹھائے بیٹھے ہیں اِتنا جو آسمان کا وزن
     
    یہ دیکھو کونوں سے کچھ گھاس آ گئی باہر
    نمودِ زندگی روکے گا کیا چٹان کا وزن
     
    اُٹھاؤ، دل سے اُٹھاؤ، کبھی جیو کھُل کر
    نہیں کچھ ایسا بھی بے کار جسم و جان کا وزن
     
    شکار شعر کے پنچھی کا کیا کروں یاور
    کہ میرے تیر سے کم ہے مری کمان کا وزن
     
     

    یاور ماجد

    Transliteration

     
    utaar phaiNka jo maiN na anaa ka, aan ka wazn
    utar gayaa mire kandhoN se do jahaan ka wazn
     
    bohot hai saql-e-zameeN aur mere par naazuk
    saNbhaal paayeN ge kaise miri uRaan ka wazn
     
    guzaari umr yuNhi shak ki dhool meN dab kar
    panap na paaya yaqeeN, itna tha gumaan ka wazn
     
    maiN aaj hooN zad-e-toofaaN, ghira hooN beech bhaNvar
    aur us pe tauRe miri kashti, baadbaan ka wazn
     
    ghuTan se kaise na barseN zameen par baadal
    uThaaye baiThe haiN itna jo aasmaan ka wazn
     
    yeh dekho konoN se kuchh ghaas aa gayi baahar
    namood-e-zindagi roke ga kya chaTaan ka wazn
     
    uThaao dil se uThaao, kabhi jiyo khul kar
    naheeN kuchh aisa bhi bekaar jism-o-jaan ka wazn
     
    shikaar shaer ke panchhi ka kya karooN yawar
    keh mere teer se kam hai miri kamaan ka wazn

     

    Yawar Maajed

  • 10 people like this.
    • یاور ماجد Thanks Ali, and Shareefa yes, I just unloaded it and put it on the floor, it was in my backpack 🙂
      October 23, 2009 at 8:17am
    • Khushbir Singh Shaad bahut khoob Yawar saheb
      October 23, 2009 at 9:15am
    • Muhammad Waris خوبصورت غزل ہے یاور صاحب، لاجواب
      October 23, 2009 at 10:04am
    • Rehana Qamar شکار شعر کے پنچھی کا کیا کروں یاور
      کہ میرے تیر سے کم ہے مری کمان کا وزن
      بہت عمدہ
      October 23, 2009 at 10:19am
    • بہت ہے ثقلِ زمیں اور میرے پر نازک
      سنبھال پائیں گے کیسے مری اُڑان کا وزن
      naya mazmoon hay kashish e sql per ash’aar umooman Gazal main nazar nahi atay. Maqta’ bohot accha hay. Teesray sh’er maiN mazmoon ki wus’at Gazal ke is sh’er ke liye kam …paR gaee.See More
      October 23, 2009 at 10:28am
    • Saud Usmani نءی بات کنے کا حوصلہ اور کو شش آپ کی شاعری کا جزو ہے اور یہ غزل بھی اس کا ثبوت ہے۔زمین وزنی تھی اوراسے سنبھالنامشکل۔۔داد قبول کریں جناب۔
      October 23, 2009 at 10:40am
    • یاور ماجد Thanks Shaad Sahib, Waris Sahib, Rehana Aapi, Majeed Sahib and Saud Sahib. I really appreciate your input and comments
      October 23, 2009 at 10:44am
    • Annie Akhter naheeN kuchh aisa bhi bekaar jism-o-jaan ka wazn
      suchi aur khari baat………. kash loug issay sumajh sakian.
      Yawar saheb. shukriya yaad aawri ka……… 🙂
      October 23, 2009 at 1:18pm
    • یاور ماجد Thanks Annie Ji.
      October 23, 2009 at 1:57pm
    • یاور ماجد Thanks Zainab, I hope you are feeling better now.
      October 23, 2009 at 3:30pm
    • Faiz Alam Babar jadeed rang e sukhan main bhot umda sher kahey hain hamarey yawar bhaii ney umda balkey bhot umda .thanks
      October 23, 2009 at 5:10pm
    • یاور ماجد Shukriya faiz sahib, aap ka husn-e-nazar hai. Pasand karne ka be had shukriya
      October 23, 2009 at 5:42pm
    • Zafar Khan یہ دیکھو کونوں سے کچھ گھاس آ گئی باہر
      نمودِ زندگی روکے گا کیا چٹان کا وزن
      واہ واہ۔ بہت اچھے یاور صاحب۔
      October 23, 2009 at 7:54pm
    • Kamran Haider Bukhari bohot hai saql-e-zameeN aur mere par naazuk
      saNbhaal paayeN ge kaise miri uRaan ka wazn

      It’s amazing… Really beautiful…

      October 24, 2009 at 12:34am
    • شکار شعر کے پنچھی کا کیا کروں یاور
      کہ میرے تیر سے کم ہے مری کمان کا وزن
      yawar tum bhi khoob admi ho…pahlay mushkil zameen tarashtay ho aphir usay khoob nibhatay bhi ho.saray shair achay hai magar maqtay ka jawab naheen…jawab naheen…bas …gumana ka wazn zara ajeeb lagaSee More
      October 24, 2009 at 1:45am
    • Amjad Shehzad یاور بھائی! اس وزن میں اور اس ردیف کے ساتھ اتنی خوب صورت غزل کہنے پر مبار باد قبول کیجئے۔ تمام اشعار لاجواب ہیں۔
      بہت ہے ثقلِ زمیں اور میرے پر نازک
      سنبھال پائیں گے کیسے مری اُڑان کا وزن
      کیا بات ہے اس شعر کی
      October 24, 2009 at 4:35am
    • Yawar Bhai aap nay 1985 ka samay yad kara diya:
      Ab isay too meray halqoom pa rakh day qatil
      Teray bas ka tau nahi’n hai teri shamsheer ka wazn
      Is qadar wazn tau masoom ka apana bhee nahi’n
      Hurmala jitna ziada hai teray teer k wazn
      …Mann k daryooza gar e baab e uloomam Akhtar
      Har ibarat say fazoo’n hai meri tehreer k wazn
      Mujhay, ye daikho kono’n…..wala she’r theek laga.Thanks for sharing.See More
      October 24, 2009 at 5:54am
    • یہ دیکھو کونوں سے کچھ گھاس آ گئی باہر
      نمودِ زندگی روکے گا کیا چٹان کا وزن

      بہت ہے ثقلِ زمیں اور میرے پر نازک
      سنبھال پائیں گے کیسے مری اُڑان کا وزن
      …yawar bhai bohat khoob ghazal kahi ha…..
      akhtar bhai mann ka daryoza gar e baab e uloomam akhtar……………subhan ALLAHSee More

      October 24, 2009 at 5:57am
    • Amjad Shehzad Akhtar Usman Khtar Usman hi hai…….ki abaat hai! Zabardast
      October 24, 2009 at 6:10am
    • طلعت جی، اتنے پیارے انداز سے داد دینے کا بہت ممنون ہوں، آپ کے تبصرے کا ہمیشہ انتظار رہتا ہے
      شکریہ ظفر صاحب اور کامران صاحب،
      وصی صاحب، آپ کی ذرہ نوازی ہے، ورنہ میں تو ایک عام سے جذبوں کا عام سا شاعر ہوں، بلکہ شاعر بھی کہاں ہوں، بس ایسے ہی ق…لم اٹھا کر کوششیں لگا رہتا ہوں،
      آپ کی گمان کے وزن والی بات کچھ سمجھ نہیں آئی، کیا آپ اس پر ذرا مزید لکھیں گے؟ میرا مطلب اس شعر میں سادہ سا تھا، کہ جیسا ڈِھل مِل یقین سا شخص ہوں میں، گمانوں کی دھول کے بوجھ کے نیچے ایسا دب کر رہ گیا کہ یقین کی کوئی کونپل کھل ہی بہیں پائی، اگر بات بن نہیں پائی تو اس شعر کو نکال دوں گا، اپنی رائے ضرور دیجئیے گا
      امجد صاحب، شعر پسند کرنے کا بہت شکریہ
      اختر بھائی، بہت خوبصورت اشعار لکھے آپ نے
      حماد صاحب، آپ کی محبت ہےSee More
      October 24, 2009 at 6:12am
    • Ali Zubair yawar majid sahb kiya achi or umda ghazal kahi hay.waah.matlay hi nay ghazal kay taiwer wzaih krdiye thay,,kay qaari isay jam kr parrhay..boht khoob yawar majid,,khush raho salamt raho
      October 24, 2009 at 7:18am
    • یاور ماجد سکریہ علی
      October 24, 2009 at 7:53am
    • Wasi Hasan Yawar…guman kay wazn wali baat zara faseeh naheen lagi…yani jahan ,chatan,kaman ka wazn to samajh main ata hay magar guman ka wazn …mari kamilmi ko moaaf kijyay ga..bus sekhnay kay liyay likhdiyatha magar apki wazahat bhi khoob hay…khudara shair ko mat nikaliyay
      October 25, 2009 at 12:17am
    • اتار پھينکا جو ميں نے انا کا، آن کا وزن
      اتر گيا مرے کندھوں سے دو جہان کا وزن

      بہت ہے ثقل _ زميں اور ميرے نازک پر
      سنبھال پائيں کيسے مری اڑان کا وزن

      ٭٭يہ ديکھو کونوں سے کچھ گھاس آگئ باہر
      نمود _ زندگی روکے گا کيا چٹان کا وزن

      ٭٭ شکار شعر کے پنچھی کا کيا کروں ياور
      کہ ميرے تير سے کم ہے مری کمان کا وزن

      انتہائ عمدہ کلام بھرپور داد قبول کيجيۓSee More

      October 25, 2009 at 1:40am
    • یاور ماجد شکریہ ذاکر صاحب
      وصی صاحب، آپ کی بات بجا ہے مگر کہیں کہیں اپنا ، شاعرانہ اجارہ
      (poetic license)
      بھی تو استعمال کرنے کی اجازت ہونی چاہئیے ناں
      🙂
      October 25, 2009 at 7:40am
    • Mohammad Ahsan یہ دیکھو کونوں سے کچھ گھاس آ گئی باہر /نمودِ زندگی روکے گا کیا چٹان کا وزن
      bahut hi khoobsoorat sher, waise to poori hi ghazal achchhi.
      October 25, 2009 at 7:59am
    • یاور ماجد نوازش ہے آپ کی احسان صاحب
      October 25, 2009 at 8:30am
    • Dilshad Nazmi ghazal bahot pasand aaei , aour sab se achi baat yeh hai ke wazn ki radeef nibh gai , keya khoob ghazal hai waah waah
      daad hazir hai
      October 25, 2009 at 8:46am
    • یاور ماجد شکریہ دلشاد صاحب، محبت ہے آپ کی
      October 25, 2009 at 8:48am
    • Wasi Hasan Yawar..wah wah….apnay tabiat khoosh ker di

      khoosh rahiyay

      October 25, 2009 at 10:50am
    • Tayuba Jamil bhut acha
      October 25, 2009 at 11:07am
    • یاور ماجد Thanks Tayuba Ji
      October 25, 2009 at 1:18pm
    • واہ یاور، بہت خوب۔ زمین حالانکہ مشکل تھی۔ لیکن کیا شعر نکالے ہیں، بلکہ خود اگ آئے ہیں شاید۔
      کہ
      یہ دیکھو کونوں سے کچھ گھاس آ گئی باہر
      نمودِ زندگی روکے گا کیا چٹان کا وزن
      اور

      گزاری عمر یونہی شک کی دُھول میں دب کر
      پنپ نہ پایا یقیں اِتنا تھا گُمان کا وزن

      شکار شعر کے پنچھی کا کیا کروں یاور
      کہ میرے تیر سے کم ہے مری کمان کا وزن
      ایک بار پھر دادSee More

      October 27, 2009 at 11:39am
    • یاور ماجد نوازش آپ کی اعجاز صاحب، آپ جیسے بزرگوں کی رہنمائی جو میسر ہے ، مجھے اور کیا چاہیئے
      October 27, 2009 at 11:46am
    • Irfan Sattar بھائ یاور سچی بات تو یہ ہے کہ عام استعداد رکھنے والا شاعر تواس زمین کا وزن سنبھالنے کی کوشش میں شعریت کو گرا بیٹھتا۔ آپ نے بہت تازہ مضامین، بہت خوبصورتی سے باندھے اور بظاہر خاصی پتھریلی زمین میں خوب پھول کھلائے۔ کیا کہنے۔ واہ ۔
      November 4, 2009 at 1:47am
    • یاور ماجد عرفان صاحب، آپ کا تبصرہ آج پڑھا، بہت نوازش آپ کی۔
      November 6, 2009 at 8:17am
    • moHtaram Yaavar saaHib!maashaa allah kis qadar
      bhaari bharkam aur saKht zamiin meN aap ne
      shairoN ki fasl kaasht kar Daali.is nauiyat ki
      zamiineN "izteraari”nahiiN”iKhtiyaari” hoti heN
      aur iKhtiyaari zamiiN likhne vaale se boaht mshaqqat
      …karaati he.mujhe Khushi he aap ne yeh mashaqqat
      kaam yaabi se anjaam di.meri jaanib se daad
      qubuul kiijiye.See More
      November 6, 2009 at 8:46am
    • یاور ماجد عزم صاحب، ایک بار پھر آپ کی محبت اور ہمت افزا الفاظ کا شکریہ، آپ کی رائے میرے لئے بہت محترم ہے
      November 6, 2009 at 9:21am
  • جو ایک جسم تھے دیکھو کہاں کہاں بھٹکے
    ستارے ٹوٹ کے ہر سمت ناگہاں بھٹکے
     
    ثبات اپنا تذبذب پہ ہی رہا قائم
    یقیں کہیں کو گئے اور کہیں گُماں بھٹکے
     
    مری اُڑان کی اوجیں تھیں ماورائے جہات
    تلاش میں مری کتنے ہی آسماں بھٹکے
     
    نہ مل سکی اُنہیں پہچان خود پرستی میں
    جو اپنی کھوج میں نکلے، کہاں کہاں بھٹکے
     
    نہ راس آئی کبھی اس کو دشت پیمائی
    تو کیوں نہ شہر میں آوارہ ءِ جہاں بھٹکے
     
    چلے ہو لمبے سفر پر، نظر اُترواؤ
    ملیں نہ راہ میں تم کو کہیں سگاں بھٹکے
     
    قتیلِ حسرتِ تکمیلِ فن ہوں، اور یاور
    مرے خیال ہیں گم اور مرا بیاں بھٹکے

    یاور ماجد

     

    Transliteration

     
    jo ek jism the dekho, kahaaN kahaaN bhaTke
    sitaaro TooT ke har or naa gahaaN bhaTke
     
    sabaat apna tazabzab pe hi rahaa qaayam
    yaqeeN kaheeN ko gaye aur kaheeN gumaaN bhaTke
     
    miri uRaan ki aujeN theeN maavaraa-e-hayaat
    talaash meN miri kitne hi aasmaaN bhaTke
     
    na mil saki unheN pehchaan KHud parasti meN
    jo apni khoj meN nikle, kahaaN kahaaN bhaTke
     
    na raas aayi kabhi us ko dasht paimaayi
    to kyooN na shehr meN aavaara-e-jahaaN bhaTke
     
    chale ho lambe safar par, nazar utarvaao
    mileN na raah meN tum ko kaheeN sagaaN bhaTke
     
    qateel-e-hasrat-e-takmeel-efan hooN, aur Yawar
    mir KHayaal haiN gum, aur mira bayaaN bhaTke

     

    Yawar Maajed

    Read this Ghazal on Facebook 

  •  
    9 people like this.
    • Faiz Alam Babar wah yawar bhai zabardast ,jadeed lab o lehja ,wos,atey khiaal aafreeni ,halka halka sa soz e daroon ,aik alam e herat ka sa sama kia kuch nhi is ghazal main, wah wah wah ji khush hua thanx 4 share .
      October 18, 2009 at 6:38pm
    • Zafar Khan بہت اچھی غزل ہے جناب
      October 18, 2009 at 6:55pm
    • na mil saki unheN pehchaan KHud parasti meN
      jo apni khoj meN nikle, kahaaN kahaaN bhaTke

      qateel-e-hasrat-e-takmeel-efan hooN, aur Yawar
      mir KHayaal haiN gum, aur mira bayaaN bhaTke

      Yawar Bhai, as you know I am not a ghazal writer, and even not into it… But every time I read a Ghazal from you; I feel like… "Yes, this is what a Ghazal should be like…” Profound and mind stirring… Not just good to read, but each couplet has a deep thought… For those who read superficially and for those who like to get drowned in the depths of these beautiful-rhyming words… Its really a wonderful piece… May Allah bless you always…See More

      October 18, 2009 at 9:54pm
    • Wasi Hasan قتیلِ حسرتِ تکمیلِ فن ہوں، اور یاور

      مرے خیال ہیں گم اور مرا بیاں بھٹکے
      wah yawar,tumhain achi zameenain tarash ker achi ghazal kahnay ka fan ata hay…khoosh raho

      October 18, 2009 at 10:32pm
    • مری اُڑان کی اوجیں تھیں ماورائے جہات
      تلاش میں مری کتنے ہی آسماں بھٹکے

      Kya kehnay…
      Lajwab ghazal hai..

      Jeetay rahoo aap hazaaron barasSee More

      October 18, 2009 at 10:41pm
    • Rehana Qamar bouht he umda klam thanx 4 tag
      October 18, 2009 at 11:12pm
    • خوبصورت غزل ہے یاور صاحب ہمیشہ کی طرح، بہت داد قبول کریں محترم

      مری اُڑان کی اوجیں تھیں ماورائے جہات
      تلاش میں مری کتنے ہی آسماں بھٹکے

      …نہ مل سکی اُنہیں پہچان خود پرستی میں
      جو اپنی کھوج میں نکلے، کہاں کہاں بھٹکے

      نہ راس آئی کبھی اس کو دشت پیمائی
      تو کیوں نہ شہر میں آوارۂِ جہاں بھٹکے

      واہ واہ واہ لاجواب۔See More

      October 18, 2009 at 11:25pm
    • اعجاز عبید واہ، اچھی غزل ہے، آسماں بھٹکے والا شعر تو واقعی اچھا ہے۔ لیکنگرامر کے اعتبار سے "یقیں کہیں کو گئے اور کہیں گُماں بھٹکے” مصرع غلط ہے، زبان کے اعتبار سے ’یقیں کہیں کو جائے‘ ہونا چاہئے تھا۔
      October 19, 2009 at 12:13am
    • Arif Imam اچھی غزل ہے مشکل زمین میں۔
      October 19, 2009 at 1:06am
    • October 19, 2009 at 1:27am
    • Majeed Akhtar bohot acchay Yawar, sorry I m late, u know I was out of town. Bohot si dad ap ke liye….Salamat rahaiN.
      October 19, 2009 at 1:28am
    • یاور ماجد تمام احباب کا اتنے فیاض لفظوں میں حوصلہ مندی کا بے حد مشکور ہوں۔ خدا آپ سب کو خوش رکھے اور آپ کا بھلا کرے
      یاور
      October 19, 2009 at 4:43am
    • فیض صاحب، ظفر صاحب، کامران صاحب، وصی صاحب، کاشف صاحب، وارث صاحب، عارف صاحب، خوشبیر صاحب، مجید صاحب، علی صاحب، اعجاز صاحب اور ریحانہ آپی،’ آپ سب بہت بڑے دلوں والے لوگ ہیں، تبصرہ کرنے کا بےحد شکریہ۔
      اعجاز صاحب، اگر یقیں گئے غلط ہے تو گماں… بھٹکے بھی غلط ہوا ناں؟ دونوں ہی اسمِ کیفیت ہیں۔
      میرے خیال میں کسی بھی اسم کے ساتھ ایک فعل لگانا بالکل درست ہے۔ اور اردو گرامر کے بہت ہی بنیادی اصولوں کے عین مطابق ہے
      آپ کا اعتراض اس لئے وزن رکھتا ہے کہ اسمِ کیفیت کا کہیں جانا یا بھٹکنا تھوڑا سا عجیب لگتا ہے، لیکن میرا خیال ہے کہ شاعر کے پاس اتنا تو
      poetic license
      ہوتا ہے کہ الفاظ اور گرامر کے ساتھ تھوڑی سی شرارتیں کر لے
      🙂

      یاورSee More

      October 19, 2009 at 5:37am
    • Saud Usmani واہ یاور بھاءی۔۔روایت اور جدت دونوں سے بیک وقت جڑا ہوا لہجہ ہی کامیاب لہجہ ہوتا ہے۔۔یہ دونوں رنگ ٓاپ کے ہاں موجود ہیں۔۔مشکل زمین تھی لیکن آپ نے شعر اچھے کہے ہہیں۔۔دا وصول کیجیے
      October 19, 2009 at 9:34am
    • یاور ماجد شکریہ سعود صاحب، اور بھئی شریفہ جی، داد کا بہت شکریہ
      October 19, 2009 at 10:32am
    • اعجاز عبید میرا مطلب آپ غلط سمجھے یاور۔ میں نے لکھا بھی تھا کہ ’یقین جائے‘ ہونا چاہئے تھا، تمنائی یا استمراری (گرامر بھول چکا ہوں اس لئے درست اصطلاح شاید نہیں ہو) صیغے میں، جس طرح گمان بھٹکے میں ہے۔ ’یقیں جائے‘ ہونا چاہیئے تھا، محض ماضی کا صیغہ ہو تو گماں بھٹکا اور یقیں گیا درست ہے، لیکن یہاں تمنّا کا اظہار ہے نا، اس لئے کہا تھا میں نے۔ احباب کیا کہتے ہیں؟ (شاید یہی کہ یہ صاحب ہر ایک کی مین میخ نکالتے رہتے ہیں!!)
      October 19, 2009 at 11:37am
    • نہیں اعجاز صاحب، یہ تمنائی فقرہ ہرگز نہیں، یہ تو میں بتا ریا ہوں کہ تمام عمر میرا ثبات تذبذب پر ہی قائم رہا، اور میرا یقین کہیں کا کہیں گیا اور میرا گمان کہیں اور بھٹکتا پھرا۔ یہ ماضی کا صیغہ ہی ہے

      آپ کا یہ کہنا درست ہے کہ میں آپ کے تبصرے …کا وہ مطلب نہیں سمجھ سکا تھا جو آپ اب فرما رہے تھےSee More

      October 19, 2009 at 11:43am
    • Aazim Kohli talaash meN miri kitne hi aasmaaN bhaTke
      waah yawar sahib khoob hai……waah
      October 20, 2009 at 8:45am
    • Yawar saaHib bohat mushkil se Haazir huaa huuN,
      bas yuuN samajh liijiye k aap ki yeh Khuub suurat
      Ghazal mujhe yahaaN khaiNch laaii he.
      janaab yeh Ghazal baRi satH ki Ghazal kehne ki
      aek kaamyaab koshish he,is ke har shair meN
      …maujuud Khayaalaat un "zamiini Haqaa’iq” se
      uuper ki satH rakhte heN jise media ki zubaan meN
      "ground realaties”kahaa jaataa he.yeh "self reality” he,
      "personal reality”he.aur yeh is Haqiiqat kaa safar he
      jis meN "suud o ziyaaN” aur "jamA.tafriiq” ke maaddi
      kulliye koii kaam nahiiN karte.
      is Ghazal kaa chothaa shair yeh bataa rahaa k
      aap jis manzil ke raahi heN abhi us raah ki nazaakatoN
      se mukammal aashnaaii Haasil nahiiN kar paaye.
      is shair meN aek tarkiib”Khud parasti”iste’maal huii.
      meri naaqis mAaluumaat ke mutaabiq Khud parast
      voh hataa he jise apni talaash naa gavar guzarti he.
      voh apne Haazir par yaqiin rakh kar Khud numaaii
      ko apnaa asl e usuul banaa letaa he aur Khud ko
      manvaane ke maraz meN mubtelaa ho jaataa he.
      is leHaaz se is shair meN "khoj”ki jagah numaayaaN
      rakhne ki koshish yaa Khud ko manvaane ki Khuaashish
      kaa zikr aa jaaye tau "bhaTaknaa”apnaa subuut faraaham
      kar de gaa.paaNchveN shair meN "shaKhsi rabt”kuchh
      kamzor he.pehle misrE meN”nah raas aaii kabhi jis ko”
      aur duusre misrE meN”voh kiyuN nah shehr meN”
      ho jaaye tau baat vaazeH aur qariin e qayaas ho
      jaaye gi.majmuuii taur par jaisaa k maiN avvalan
      Arz kar chukaa k baRi satH ke Khayaalaat ki Haamil
      Ghazal he.meri jaanib se dili mubaarak baad qubuul
      farmaiye.allah aap ko talaash e zaat ke is safar meN
      kaamyaab o kaamraaN farmaye.See More
      October 21, 2009 at 2:32am
    • Azm Behzad aek guzaarish aur tiisre shair meN "uRaan ki aujeN”
      ach’chhaa nahiiN lag rahaa,ise uRaan yaa parvaaz
      ki bulandi tak maHduud rakheN,”aujeN”yaani jamA
      zubaan ke maze ko Ghaarat kar raha he.
      koii baat naagavaar guzre tau paishagi muAafi.
      October 21, 2009 at 2:35am
    • Ahmad Safi میرے تبصرہ نہ کرنے کو بھی در گذر کرنا۔۔۔۔
      October 22, 2009 at 5:08am
    • یاور ماجد احمد بھائی، آپ کا تبصرہ تو چار مہینے پہلے ہو چکا تھا، جب یہ غزل لکھی تھی، درگذر کرنے کا تو سوال ہی نہیں اٹھتا۔
      October 22, 2009 at 6:35am
    • عزم صاحب، اتنے تفصیلی تبصرے پر بے حد شکریہ، مجھے معلوم تھا کہ اپنی کھوج میں نکلنے والے شعر پر آپ کچھ نہ کچھ ضرور بات کریں گے، کیونکہ اس موضوع پر ہماری چند دنوں پہلے ہی بات ہوئی تھی، یہ غزل میں نے کچھ ماہ پہلے لکھی تھی، اور آپ کا تجزیہ صد… فی صد درست ہے کہ خود نمائی کرنے والے لوگ بھٹکتے ہیں اپنی ذات کی تہوں تک پہنچنے کی کوشش کرنے والے نہیں۔ میں خود پرستی اور خود نمائی میں کوئی زیادہ فرق نہیں سمجھتا اور میرے ذاتی خیال میں خود پرستی، خود نمائی سے کہیں زیادہ پر اثر لفظ ہے۔ رہی بات دوسرے مصرعے کی تو آپ کے کہنے سے ایک مرتبہ پھر اتفاق کروں گا کہ کھوج کی بجائے کوئی دوسرا لفظ پہلے مصرعے کو زیادہ نمایاں کر سکتا ہے، اس بارے میں ضرور مزید سوچوں گا۔
      دوسرے شعروں کے بارے میں آپ کی رائے پر تبصرہ پھر کروں گا، ابھی ذرا جلدی میں ہوں۔
      ایک مرتبہ پھر بے حد شکریہSee More
      October 22, 2009 at 6:42am
    • Hammad Niazi SUBHAN ALLAH YAWAR BHAI BOHAT LUTF DIA TMAM ASHAAR NE AZM BHAI NE BOHT KHOOB TAJZIA KIA HA DOAEEN HN AAPKA LIA
      ALLAH HUMA ZID FA ZID
      October 22, 2009 at 12:20pm
    • یاور ماجد Thanks Hammad Sahib
      October 22, 2009 at 12:23pm
    • بھئی طلعت جی، اگر میرے بھٹکتے گمان، آسمان، بیاں اور سگاں کہیں نظر آئیں تو دبا کر بیٹھ نہ جائیے گا، مجھے واپس کر دیجئیے گا

      اب دیکھا ناں اگر ان اشعار سے آپ سر دھننا شروع کر دیتی ہیں تو غزل کا فائدہ تو دونا ہو گیا ناں، جہاں آپ نے شاعری سے ل…طف اٹھا لیا، وہاں مفت میں سر کی مالش بھی خود ہی کر لی
      🙂
      سگاں والے شعر پر پہلے اپنی بڑی بہن سعدیہ سے بھی ڈانٹ کھا چکا ہوں، میرا خیال ہے اسے نکالنا ہی پڑے گا۔See More

      October 24, 2009 at 6:21am
    • Faiz Alam Babar wah yawar bhaii mann ko choo gaii ye ghazal bhot umda bhot aala .aap ka ye rung pehli bar nazar sey guzra aur dil ko aik manoos si khushi hoii ,salamat rehen ameen
      November 29, 2009 at 2:42pm
    • Qudsia Nadeem Laly janab,bohat hi khoob,,,,,wah…
      December 21, 2009 at 1:28pm
  • زورِ سُخن جو ہوتا برابر تراشتے
    شعروں میں اُس کا پھول سا پیکر تراشتے

    محوِ سفر رہے ہیں قدم اور قلم سدا
    رُک پاتے گر کہیں تو کوئی گھر تراشتے

    گرقیدِ شش جہات پہ ہوتا کچھ اختیار
    روزن کوئی بناتے کوئی در تراشتے

    پرکارِ فن سے دائرے کھینچا کئے ہزار
    نروان پاتے گر کبھی محور تراشتے

    سیپی میں دل کی تم جو اگر ٹھہرتے ذرا
    ہم تیشہءِخیال سے گوہر تراشتے

    ہاتھوں کی کونپلوں سے کٹھن روزگار کے
    عمریں گُزر گئیں مجھے پتھر تراشتے

    ناخن کی نوک سے فلکِ روسیاہ پر
    ہم چودھویں کے چاند کا منظر تراشتے

    اس بار بھی بنی وہی مبہم سی شکل پھر
    اس بُت کو اب کی بار تو بہتر تراشتے

    یاور ماجد

     

      Read this Ghazal on Facebook

    Muneeza Maajed and 8 others like this.
    • Mark Wheeler where’s the auto-translate feature?
      September 12, 2009 at 10:07am
    • Mark, In this form of urdu literature, called Ghazal, every two verses are supposed to carry independent thoughts and first two verses traditionally rhyme and then second verse of each couplet rhymes with the ones in the first couplet.
      Here… is the translation of the two couplets I posted above.

      with the tip of nail, on the ugly face of the dark sky
      I wish I could draw moon of the fourteenth night

      Even this time you see, the same abstract face showed up
      You should have carved this sculpture at least this time, right!

      Very very bad translation, but gives a little of what I meant above 🙂

      YawarSee More

      September 12, 2009 at 10:46am
    • Muhammad Waris بہت اچھے اشعار ہیں یاور صاحب، پوری غزل لکھ دیتے برادرم۔
      September 12, 2009 at 11:02am
    • Arif Imam دونوں ہی شعر بہت عمدہ ہیں، باقی غزل کا انتظار رہے گا۔
      September 12, 2009 at 4:35pm
    • Mohammad Kaiserimam Iss trash khrash ne khahshat ke butt ko jiss tarah parde se bahir nikala he uss se doosre shairon ki woh khahisat samajhne men mada mle gi jo woh shairi ki arh men jama rakhte hen.Allah inn konplon ko aur bhi YAWARI ata kare.
      September 12, 2009 at 6:44pm
    • Bahut khoob – Yawar, I know you for almost 13+ years and have been reading your poetry (though infrequently); however, at this moment, I feel that your poetry has been polished so much that it glitters from miles now.
      Good job – keep it up m…y friend.See More
      September 12, 2009 at 8:52pm
    • Muhammad Waris بہت خوبصورت غزل ہے یاور صاحب، خاکسار پہلے بھی اس پر داد پیش کر چکا ہے اور اب بھی پیش کرتا ہے۔ بہت اچھے اشعار ہیں، لاجواب۔
      September 13, 2009 at 5:12am
    • Asim Nisar very nice piece of poetry.. welldone and keep up the good work
      September 13, 2009 at 10:45pm
    • Faiz Alam Babar bohut umda mazameen baandhen hain zameen bhi bohut pasand aaii
      September 14, 2009 at 4:59pm
    • زورِ سُخن جو ہوتا برابر تراشتے
      شعروں میں اُس کا پھول سا پیکر تراشتے

      محوِ سفر رہے ہیں قدم اور قلم سدا
      رُک پاتے گر کہیں تو کوئی گھر تراشتے

      یاور صاحب آج آپ کا صفحہ دیکھا تو یہ خوبصورت غزل نظر آئی ۔ اتفاق کہہ لیجئے کہ ابھی ایک آدھ ماہ پہلے میں نے ’تراش لیا ’ کی ردیف میں ایک غزل کہی اور فیس بک پر پوسٹ کی تھی۔ آپ کی غزل بہت پسند آئی۔ آئیندہ رابطہ رہنا چاہئے ۔ سلامت رہئے ۔See More

      September 15, 2009 at 5:56pm
    • بہت اچھی غزل ہے یاور صاحب
      ناخن کی نوک سے فلکِ روسیاہ پر
      ہم چودھویں کے چاند کا منظر تراشتے

      اس بار بھی بنی وہی مبہم سی شکل پھر
      …اس بُت کو اب کی بار تو بہتر تراشتے
      بہت پر تاثیر ہیں۔See More

      October 12, 2009 at 11:28am
    • Gulnaz Kausar خوبصورت آہنگ ہے ۔۔۔ سچ میں کیا کیا منظر تراش دیے ایک غزل میں آپ نے ۔۔۔۔
      October 12, 2009 at 1:01pm
    • Saud Usmani کیا بات ہےیاور صاحب۔۔ایک ایک شعر قابل داد ۔۔کیا اچھی ردیف استعمال کی ہے۔۔۔خوبصورت غزل
      October 12, 2009 at 1:50pm
    • Wasi Hasan س بار بھی بنی وہی مبہم سی شکل پھر
      اس بُت کو اب کی بار تو بہتر تراشتے
      yawar mojhay tumharitakhleeqat main jo tazgi aur purkari nazar arahi hay uskay liyaydad qabool kijyay….kia achi zameen hay aur kia nai ghazal kahi hay
      October 12, 2009 at 10:29pm
    • Amjad Shehzad یاور بھائی!آپ نے میری صبح کو کتنا خوش گوار بنا دیا میں بتا نہیں سکتا۔بہت دنوں میں اتنی اچھی غزل پڑھنے کو ملی۔مبارک ہو۔کس کس شعر کی تعریف کروں۔ایک سے ایک بڑھ کر ہے۔میں یہاں کوئی شعر کوٹ نہیں کر رہا۔ کاش یہ غزل میں کہہ سکتا۔ شاید میں جذباتی ہو رہا ہوں لیکن میں ٹھیک کہہ رہا ہوں۔سدا خوش رہیں،سلامت رہیں۔فیس بُک تیرا شکریہ۔۔۔۔کیسے کیسے دوستوں سے ملا دیا۔
      October 13, 2009 at 1:54am
    • Azm Behzad Yaavar saaHib,aap ki yeh Ghazal maiN pehle
      kahiiN paRh chukaa huuN.maashaa allah Khuub
      likhte heN aap.allah Khush rakhe.
      October 13, 2009 at 4:24am
    • Muhammad Kashif Yawar Sahib…….. Nehaayat hi Khobsorat Ghazal Hai.. Wah Wah Wah …

      Her Aik Sher Qabil e Daad hai ..

      Aap K Liye Duaain

      October 13, 2009 at 5:53am
    • Ali Zubair mahw e safar rahay hain qadam or qalam sada,,rk patay gr kaheen to ghar trashtay,,,kiya umda ghazal hay khaas kr is sher men ghar tarshtay batoar radeef qafiye kay nahi aaya balkay matloob e jaa kay liye mozzon treen lagta hay,,,,khoobsorat ghazal hay ji
      October 13, 2009 at 3:08pm
    • Masood Quazi یاور میان اللہ تم کو اعلی درجات پر فایز کرے کیا ھونہاری سے غزل تراشی ھے واہ واہ واہ
      اسی طرح غزل کے نو بہ نو روپ نکھارو۔ اگلی نسل کی غزل تمھاری اور تم ایسے نوجوانون محتاج ھے
      October 13, 2009 at 8:30pm
    • ‎@@ Mahv-e Safar Rahein Hain Qaddam Or Qallam Sadda..
      Ruuk Paatey Garr Kahee’n Tou Koi Gharr Traashtey..

      @@ Garr Qaaid-e-Shash Ja’hatt Peh Hota Kuch Ikhtiyaar..
      Rouzan Koi Banaatey,Koi Darr Traashtey..

      @@ Parkaar-e-Fann Sey Daaeiirey Kheincha Kieay Hazaar..
      Nirvaan Paatey Garr Kabhi,Mehvarr Traashtey..
      Yaawar Bhai Aap Key Lieay Bharpoor Daad Kya Khoobsurat Or A’ala Ghazzal Takhleeq Hui Hae Aa Sey..
      Shaad baash..See More

      November 3, 2009 at 1:31am
    • اس غزل پر اتفاق سے نظر پڑ گئی۔۔۔بلکہ حسن اتفاق سے۔۔یاور ماجد ایک ادبی علمی گھرانے کے ہونہار فرزند ہیں۔۔اور اپنے خاندان کا نام آگے بڑھانے کا سبب بھی۔۔۔ ایک روایت اور ایک ثقافت کے امین ہیں اور محض اس پر اکتفا کرکے نہیں بیٹھ گئے کہ پدرم سلطان… بود۔۔۔ان کا ذہن روشن ہے اور وہ نئی راہیں تراشنے میں لگے رہتے ہیں۔۔۔یہ ردیف خود ان کی اس خصوصیت کی شاہد ہے۔۔نئی بات کہنے کا حوصلہ بھی ہے اور اس کے لئے جس ذخٰیرہ الفاظ اور مشاہدہے کی ضرورت ہوتی ہے وہ ان سے بھی لیس ہیں۔۔میں نے محسوس کیا ہے کہ وہ مسلسل شعری اکائی سے جڑے رہتے ہیں۔۔ان کی جو چیزیں اب تک دیکھنے کو ملی ہیں وہ اپنی طرف کھینچتی ہیں۔۔یہ وصف ان کی شاعری نے ان کی شخصیت سے حاصل کیا ہے۔۔۔تاخیر سے شامل ہونے کی معذرت۔۔) (شہتوت کا رس تھا نہ غزالوں کے پرے تھے۔۔۔۔میں آج بھی اس بزم میں تاخیر سے پہنچا) اSee More
      November 3, 2009 at 2:14pm
    • یاور ماجد سعود صاحب،
      کیوں شرمندہ کرتے ہیں، اتنے خوبصورت الفاظ میں داد آپ نے دے تو دی لیکن مجھے سمجھ نہیں آ رہی کہ میں سمیٹوں کیسے
      خوش رہیں، سدا خوش رہیں
      یاور
      November 3, 2009 at 3:59pm
    • اس بار بھی بنی وہی مبہم سی شکل پھر
      اس بُت کو اب کی بار تو بہتر تراشتے

      waah, main ne tau pehli baar ap ka kalaam paRhaa hai aur paRh kar gum hoon ke aaj se pehle aap ki shaairi kiyon nahi nazar se guzri….

      …mujhey hamesha voh shaairi apni taraf khainchti hai jo shaair apne zehn se lekhtaa hai, ye ghazal aap ke hone ki gawaahi hai.See More

      November 3, 2009 at 7:35pm
    • Shoaib Afzaal yawar khobsorat ghazal hay mashalah bohat achay…
      November 5, 2009 at 1:02am
    • Imran Jaffer Kia kehnay Yawar Maajed, baray qareenay sy mazameen bandhay hein aap ny. Aur yehi wo lehja hy jis mein aaj aur aanay walay kal ki ghazal Etminaan mahsoos kerti hy.
      Bharpoor Ghazal k lea bharpoor daad qabool kejeyay.
      Salamat Rahein.
      November 5, 2009 at 9:04am
    • ناخن کی نوک سے فلکِ روسیاہ پر
      ہم چودھویں کے چاند کا منظر تراشتے

      یاور بھائی اگر آپ ایسا شعر کہہ سکتے ہیں تو بات بہت آگے بڑھ سکتی ہے۔ اب آپ کی غزلوں کو میں بہت زیادہ توجہ سے پڑھوں گا۔ ہوشیار رہیئے۔

      …:-)

      مذاق اپنی جگہ، مگر بہت عمدہ غزل اور خصوصاً خوبصورت امیجری کی داد علیحدہ سے۔ کیا کہنے۔See More

      November 17, 2009 at 6:44am
    • یاور ماجد تو ابھی تک آپ بغیر توجہ کے پڑھتے تھے، جبھی میں کہوں اتنے متاثر کیوں ہیں میری شاعری سے
      ھا ھا۔۔
      توصیفی الفاظ کا شکریہ
      November 17, 2009 at 6:50am
    • Irfan Sattar knowing you, I was expecting this بے ساختہ comment 🙂
      November 17, 2009 at 6:54am
    • Irfan Sadiq yawar bhai ap mbarak bad ky mustheq han .atnay baray barat shaura nay ap ke ghzal psand ke hy.ghzal wa,qai bohat ache hy.thnaks for shairing.
      November 18, 2009 at 2:01am
    • Mansoor Nooruddin Elegant! Uncanny!

      گرقیدِ شش جہات پہ ہوتا کچھ اختیار
      روزن کوئی بناتے کوئی در تراشتے

      November 18, 2009 at 9:06pm
    • Amjad Shehzad غزل دوبارہ سامنے آ گئی ہے یاور بھائی تو ایک بار پھر بھرپور داد قبول کیجیے۔
      November 19, 2009 at 5:10am
    • یاور ماجد شکریہ منصور صاحب، اور امجد صاحب، آپ کی محبت ہے، بہت مشکور ہوں
      November 19, 2009 at 8:55am
    • گرقیدِ شش جہات پہ ہوتا کچھ اختیار
      روزن کوئی بناتے کوئی در تراشتے

      پرکارِ فن سے دائرے کھینچا کئے ہزار
      نروان پاتے گر کبھی محور تراشتے

      aur ye misra…
      ہم تیشہءِخیال سے گوہر تراشتے

      bhot khoob janab…fantasy ka haseen muraqqa…God bless uSee More

      November 23, 2009 at 11:05am
    • Qudsia Nadeem Laly bohat khoob yawer,naye istaroon si saji ghazal ky liaye shukriya…
      December 21, 2009 at 1:06pm
    • Iqbal Khawar aur kitna zor e sukhan chayea yawar …khob ghazal hay mashallah .salamat raho …allha karay zor e qalam aur zeyada
      January 2 at 7:52am
    • Iqbal Khawar buhat zor e sukhan hay….. yawar salamat raho
      January 4 at 2:11am
    • Faiz Alam Babar bhot umda aur shandaar ghazal dobara parh kr bhi wahi lutf barqaraar hy thanks 4 share me yawar bhaii
      January 12 at 4:44pm
    • Faizan Abrar یہ غزل بھی خوب رہی یاور بھائی۔۔۔ نئے مضامین اور منفرد طرزِ کلام اشعار کو خوبصورت بنا رہے ہیں۔۔۔ یوں ہی خوب خوب لکھتے رہیں، اللہ تعالٰی آپ کو شاد رکھے۔۔۔
      January 13 at 11:33am
    • Arshad Wattoo بہت خوب یاور میاں بہت خوب آپ کی یہ غزل مجھے لیٹ ملی
      اچھی غزل ہے زور سخن جاری رکھیں آپ کی ادب کو بہت ضرورت ہے
      October 18 at 6:19am
    • Hasan Abbas Raza Bohat khoob Yawar, masha allah, bohat achha keh rahey ho, Allah tumhen kaamyaab rakhey.
      October 18 at 11:41am
    • Qaisar Masood arrey boht khoob yawer!!! boht ustadana andaz main khai gai ghazal hai.. sabhi ashaar boht mayari or khoobsurat hain..itnay dostoon kay comments kay bahd bass yehi keh sakta hoon k maza agaya..
      October 19 at 10:00am
  • دِن بھَر کی شورشوں کے دباؤ کے شور سے
    شب کے لِباسِ حبس میں کوئی شکن نہیں
     
    کیوں روشنی گروں کی زبانیں ہیں سوختہ
    کیوں لَو کسی چراغ کی بھی سینہ زن نہیں
     
    اندھے خلا کی کھائی میں گرتا ہی جاؤں میں
    پیروں تلے زمیں نہیں سر پر گگن نہیں
     
    اک نغمہ خامشی کا بنی جائے زندگی
    اک رقص ہے کہ جس میں کوئی چھن چھنن نہیں

    پلکیں بچھاؤ راہ، میں دل میں اسے سجاؤ
    یہ زندگی ہے یہ تو کوئی پیرہ زن نہیں
     
    یاور ہی اِک ہےعاجزو ناچیز و خاکسار
    ورنہ یہاں پہ کون خدائے سُخن نہیں

    یاور ماجد

     
    din bhar ki shorishoN ke dabaao ke shor se
    shab ke libaas-e-habs meN koyi shikan naheeN
     
    kyooN raushni garoN ki zubaaneN haiN soKHta
    kyooN lau kisi charaaGH ki bhi seena zan naheeN
     
    andhe KHalaa ki khaayi meN girtaa hi jaaooN maiN
    pairoN tale zameeN naheeN, sar par gagan naheeN
     
    ik naGHma KHaamushi ka bani jaaye zindagi
    ik raqs hai keh jis meN koyi chhan chhanan naheeN

    palkeiN bichhaao raah meN, dil meN isay sajaao

    ye zindagi hai ye to koyi peera zan naheeN
     
    Yawar hi ik hai aajiz-o-naa cheez-o- KHaaksaar
    varna yahaaN pe kaun KHudaaye suKHan naheeN

     

    Yawar Maajed

    Read this Ghazal on Facebook

  • 2 people like this.
    • waise tu sab hi sher apni jagah kamaal hain but I loved this one…

      andhi KHalaa ki khaayi meN girtaa hi jaaooN maiN
      pairoN tale zameeN naheeN, sar par gagan naheeN

      …Truly depicts a state when one is hopeless and helpless… Such pure emotions in poetry can never come without facing the life in its true form… Wonderful… !!!

      Kamaal ki sachai hai aap k aik aik sher mein… Jiase yeh likhhay nahi gaye, utray hain… Buht aala…See More

      October 6, 2009 at 12:03pm
    • شکریہ کامران بھائی، اس غزل کا پہلا شعر ۱۹۹۳ میں لکھا تھا، پھر یہ بیک برنر میں چلا گیا، کچھ دن پہلے پھر سے یاد آیا تو سوچا کہ کیوں نہ غزل مکمل کر لی جائے، مکمل تو ابھی بھی نہیں ہوئی لیکن دیکھیں، ممکن ہے اگلے دس پندرہ سالوں میں مطلع بھی لکھ …ہی لوں
      یہ آپ کا پیار ہے ورنہ میں اتنی زیادہ تعریف کا مستحق نہیں،

      جس شعر کا آپ نے حوالہ دیا، اسی طرح کا ایک اور شعر بھی پچھلے دنوں لکھا تھا، وہ کچھ ءیوں تھا

      میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
      ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں

      گو خیال تقریباً ایک ہی ہے مگر پیش کرنے کا انداز مختلف۔
      یاورSee More

      October 6, 2009 at 12:24pm
    • Gulnaz Kausar achi kawaish hay janab … pairoN talay zameeN nahi sar par gagan nahiN … wah
      October 6, 2009 at 12:34pm
    • Majeed Akhtar بہت اچھی غزل ہے یاور۔ مضامین کے برتاؤ میں آپ نے معمول کی روش سے ہٹ کر تازہ لہجہ پیدا کرنے کی کوشش کی ہے اور کامیاب رہے ہیں۔ تیسرے شعر کے آغاز میں اندھی خلا کی جگہ اندھے خلا کرلیں ۔ آخری شعر بہت اچھا ہے لیکن پہلی فرصت میں آپ بھی خدائے سخن بن جائیے ۔ فیس بک پر خاصی آزادی ہے اور کوئی روک ٹوک نہیں ہے ۔ ایک اچھی کاوش پر بہت سی داد۔ مطلع کیلئے دس پندرہ دن لے لیجئے دس پندرہ سال بہت زیادہ ہیں۔
      October 6, 2009 at 2:04pm
    • چلیں آج سے ہم بھی آپ کی اجازت سے خدائے سخن کی مسند سنبھال لیتے ہیں
      مستند ہے میرا فرمایا ہوا
      سارے عالم پر ہوں میں چھایا ہوا

      ادھر دوسری طرف ای ٹی بے چارہ آپ کے مشورے کا انتظار کرتے کرتے سوکھ گیا ہے بھائی کچھ کریں، پیرہ زن کہیں اسے ماضی کے ان…دھے کنوئیں میں نہ دھکیل دےSee More

      October 6, 2009 at 2:14pm
    • یاور ماجد اندھے خلا کی نشاندہی کرنے کا شکریہ مجید صاحب
      October 6, 2009 at 2:31pm
    • Gulnaz Kausar khala moanas hay ….
      October 6, 2009 at 3:45pm
    • Faiz Alam Babar wah yawar bhai kia umda ghazal hy tamaam ashaar pasand aaii lehjey ka tu jawab nahi wah saheb wahhhhh
      October 6, 2009 at 3:45pm
    • مجھے اساتذہ میں سے کسی کا کوئی اور ایسا شعر یاد نہیں آ رہا جس میں خلا کو مذکر یا مونث باندھا گیا ہو، میرا ذاتی خیال یہی تھا کہ خلا مونث ہوتی ہے، لیکن مجید صاحب نے مذکر کہا تو میں کیسے نہ مانتا۔ کیا آپ کے ذہن میں کوئی ایسی مثال ہے جہاں خلا… کو مذکر یا مونث باندھا کیا ہو؟

      اور فیض صاحب، پسندیدگی کا شکریہSee More

      October 6, 2009 at 4:13pm
    • یاور ماجد http://crulp.org/oud/ViewWord.aspx?refid=5253
      نمبر ۱ میں مذکر
      نمبر ۲ میں مونث،
      سو میرا خیال ہے کہ دونوں ہی طرح سے جائز ہے
      October 6, 2009 at 4:28pm
    • Gulnaz Kausar han ji kuch aisa hi confusion tha mujhay bhi aur bohat say logon ki opinion kay baad moanas par hi baat khatam howi thi
      October 6, 2009 at 5:29pm
    • Lekin yeh bhi to socheN na, jab kisi baRe adeeb ka intiqaal ho jaaye to log yeh naheeN kehte keh "un ke jaane se adab meN bohot baRi KHala paida ho gayi hai” balkeh aisi haalat meN KHala ko muzakkar hi baaNdha jaata hai.
      Ghar jaa kar farhang…-e-aasifiya meN dekhooN gaSee More
      October 6, 2009 at 5:34pm
    • Gulnaz Kausar hahahaha baat tau thek hay … i think phir donon tarah thek ho ga .. aap daikh lo phir mujhay bhi bata daina …
      October 6, 2009 at 5:35pm
    • Majeed Akhtar Gulnaz aap bhool gaeeN, Khala ke muzakkar par faisla hua tha.
      رات دل میں یقیں کی موت ہوئی
      اور جنازے میں بس خلا نکلا
      October 6, 2009 at 6:00pm
    • Majeed Akhtar یہ غزل اس خاکسار نے سحر انصاری،رضی اختر شوق، جون ایلیا اور سرشار صدیقی کی موجودگی میں ایک مختصر سی نشست میں پیش کی تھی۔ اگر خلا کو مؤنث باندھنا صحیح ہوتا تو ان بزرگوں میں سے کوئی نہ کوئی میری توجہ اس طرف ضرور دلاتا۔ فیس بک کے احباب۔ ذی قدر کیا کہتے ہیں بیچ اس مسئلے کے ۔ ۔
      October 6, 2009 at 6:04pm
    • جناب مجید صاحب، آپ کا فرمانا بالکل درست تھا، فرہنگِ آصفیہ بھی آپ والی بات ہی کہہ رہی ہے اور حضرت ناسخ بھی
      خلا ۔ ع۔ اسمِ مذکر ملا کا نقیض ۔ خالی قول ہے کہ خلا محال ہے، جو چیز ہے وہ کسی نہ کسی چیز سے پر ہے، اور کچھ نہیں تو اس میں ہوا ہی ہے…
      ہے یونہی ترکِ ہوا اس کو اگر اے فلسفی
      ثابت اپنے عالمِ دل میں خلا ہو جائے گا
      ناسخ
      سو جو لوگ اس کو مونث باندھتے ہیں وع ایک غلط العام ہے
      یاورSee More
      October 6, 2009 at 6:10pm
    • یاور ماجد شکریہ طلعت جی، بس دل کی بھڑاس ہے، نکال لیتے ہیں کبھی کبھی
      🙂
      October 6, 2009 at 8:06pm
    • اندھے خلا کی کھائی میں گرتا ہی جاؤں میں
      پیروں تلے زمیں نہیں سر پر گگن نہیں

      Subhaan Allah …

      …Aap ki Ghazal Mozoaati taur pay jis nizaam fiker k saath juRi hui hai woh zaat say zamaana tak pahila howa hai . Tamam ashaar main takhleq pazeer honay walay tajarbaat or waseee ter insani raviyuN ki tarjumani ker rahay hain..

      Aap k liye bohat c duaain ….Jeetay rahain ap hazaaroN barasSee More

      October 6, 2009 at 11:07pm
    • سبحان اللہ، اچھی غزل ہے یاور۔ (صاحب ہٹا دیتا ہوں، ماجد بھائی کے تعلق سے)۔ اس وقت تو آپ نے اندھی خلا کر ہی دیا ہے، لیکن یہاں استعمال کے مطابق اندھے اور اندھی دونوں درست تھے۔
      اندھے خلا کی کھائی (اندھے خلا مذکر کے لئے)
      خلا کی اندھی کھائی (اندھی …کھائی۔ مؤنث کے لئے
      خلا ویسے یقیناً مذکر ہے۔
      ویسے اندھے خلا میں بات واضح تو ہو جاتی ہےل لیکن مجھے نہ جانے کیوں صوتی اعتبار سے اندھی ہی بہتر لگ رہا ہے۔See More
      October 7, 2009 at 12:42am
    • Arif Imam کیا کہنا، بہت عمدہ غزل ہے، صرف مطلع کا خلا محسوس ہو رہا ہے۔
      October 7, 2009 at 1:30am
    • Muhammad Waris بہت اچھی غزل ہے یاور صاحب، کیا کہنے۔ سبھی اشعار اچھے ہیں، لاجواب
      October 7, 2009 at 1:56am
    • Rehana Qamar tamam ghazal bohat khoobsoorat hai khaas taor per ik naghma khaamushi ka bani jaaye zindagi ik rags hai keh jis men koyi chhaan chanan nahaeen bohat achha laga
      October 7, 2009 at 3:06am
    • یاور ماجد کاشف صاحب، اعجاز صاحب، عارف صاحب، وارث صاحب اور ریحانہ آپی، آپ سب کاغزل پسند کرنے کا اور اپنی رائے دینے کا بہت شکریہ
      ریحانہ آپی، خصوصاً آپ کا کیونکہ یہ آٓپ کا میری کسی بھی چیز پر پہلا تبصرہ ہے
      آپ سب خوش رہیں
      October 7, 2009 at 6:03am
    • Aazim Kohli اک نغمہ خامشی کا بنی جائے زندگی
      اک رقص ہے کہ جس میں کوئی چھن چھنن نہیں

      bahut achhaa hai yaawar sahib….khoob hai…..jeetey raho

      October 7, 2009 at 8:52am
    • یاور ماجد شکریہ عازم صاحب، آپ کا میرے صفحے پر آنا اور اس پر تبصرہ بھی کرنا میرے لئے اعزاز سے کم نہیں
      October 7, 2009 at 8:55am
    • Masood Quazi Young Man’s poetry ,with classic touch
      October 9, 2009 at 7:27am
    • یاور ماجد Thanks Masood saahib, its an honor to have you in my friends circle, looking forward to learn a lot from you.
      October 9, 2009 at 7:45am
    • Muhammad Khawar Ghazal shaandaar hai.

      abaid SaHeb ki baat qaabil e ghor hai.

      andhay khala ki nisbat andhi khaaye kehnaa zydaa behtar lagtaa hai

      October 9, 2009 at 9:02am
    • یاور ماجد شکریہ خاور صاحب، میں سوچ رہا ہوں کہ اس اندھے پن کو نکال ہی دوں اور صرف "طرفہ خلا” لکھ دوں
      طُرفہ خلا کی کھائی میں گرتا ہی جاؤں میں
      پیروں تلے زمیں نہیں سر پر گگن نہیں
      October 9, 2009 at 9:05am
    • Muhammad Khawar aor agar jaise lagayaa jaa-ye to

      jaise khalaa ki khai meN…………

      October 9, 2009 at 9:07am
    • Muhammad Khawar waise ye sach hai (mere khyaal meN ) ke agar andhay ko nikal kar miSra keheN ge to zydaa faSeeH ho ga
      October 9, 2009 at 9:07am
    • یاور ماجد اتنے لوگوں کی رائے کے بعد سوچنا تو پڑے گا
      October 9, 2009 at 9:11am
    • Qudsia Nadeem Laly tammam mutanad shuora ki umda raye bhi aap ki umda ghazal ky sath naseeb hui,bhoot khoob….
      December 21, 2009 at 1:35pm
  • ۲۵ اگست ۲۰۰۹

    کیا ہوا جو مہ و اختر کے برابر نہ اڑا

    وقت کی آندھی مجھے دُھول سمجھ کر نہ اڑا

    کیسے اُڑ پاؤں گا آئندہ کے طوفانوں میں

    میں تو ماضی کے قفس سے کبھی باہر نہ اُڑا

    چھوڑ دے کچھ تو بہاروں کی نشانی مجھ میں

    اے خزاں رنگ مرے جسم کا یکسر نہ اڑا

    یہ برستی ہوئی بوندیں تو گھٹا کی دیکھو

    کون کہتا ہے گگن میں کبھی ساگر نہ اُڑا

    کس نے اُڑتے ہوئے ساگر کو فلک پر دیکھا

    ایسی بے پر کی مری جاں، مرے یاوؔر نہ اُڑا

    یاور ماجد