گل کی فطرت تم نہ دیکھو صرف مہکاروں میں بند

Posted: 2011/06/26 by admin in اردو شاعری, غزل

گل کی فطرت تم نہ دیکھو صرف مہکاروں میں بند
کچھ تو نظروں سے پرے بھی ہے چھُپا خاروں میں بند

جانے کتنی روشنی مجھ تک پہنچ پاتی نہیں
آسماں کی اوٹ کے پیچھے کہیں تاروں میں بند

رِہ کے زنداں میں پروں پر کیا جوانی آئے گی
چار دن اُڑنے کے تھے اور ہم رہے چاروں میں بند

وقت کے کولہُو میں جُت کر ڈھوندتے ہی رہ گئے
لحظہ گم نروان کا تھا لمحوں کے دھاروں میں بند

اک کرن ہیرے کے اندر قید رہ کر گھُٹ گئی
مر گئی اک یاد تھی جو دل کی دیواروں میں بند

ہر صدا بس ایک ہی آواز کی ہے بازگشت
چہرہ اک ہی گھومتا ہے آئینہ زاروں میں بند

یاور ماجد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s