پنجرے میں اک اسیر کا تھا سر لہو لہو

Posted: 2010/11/29 by admin in اردو شاعری, غزل

ٹوٹی ہوئی تھی چونچ تو تھے پر لہو لہو
پنجرے میں اک اسیر کا تھا سر لہو لہو

درپن ہی میرے آگے نہیں ٹوٹتے رہے
ہوتا رہا ہوں میں بھی برابر لہو لہو

پہلے خزاں کے وار نے گھائل کیا مجھے
پھر آئی مجھ کو دیکھنے صرصر لہو لہو

کیا احمریں سی شام تھی اپنے وداع کی
لگنے لگے تھے سارے ہی منظر لہو لہو

شب بھر جو تیرگی سے لڑا تھا سرِ فلک
آیا افق پہ لوٹ کے ہو کر لہو لہو

دیکھو کنارِ شام شفق کی یہ سرخیاں
ہونے لگا ہے جن سے سمندر لہو لہو

آ آ کے لوٹتی رہی اک یاد رات بھر
چپکی ہوئی ہیں دستکیں در پر لہو لہو

یاور ماجد

TooTi huyi thi choNch to thay par lahoo lahoo
pinjre meiN ik aseer ka tha sar lahoo lahoo

darpan hi mere aage naheeN TooTte rahay
hota raha hooN maiN bhi baraabar lahoo lahoo

pehle KHizaaN ke waar ne ghaayal mujhe kiya
phir aayi mujh ko dekhne sar sar lahoo lahoo

kya ahmereeN si shaam thi apne vidaa ki
lagne lage the saare hi manzar lahoo lahoo

shab bhar jo teergi se laRaa tha sar-e-falak
aaya ufaq pe lauT ke ho kar lahoo lahoo

dekho kinaar-e-shaam shafaq ki ye surKHiyaaN
hone laga hai jin se samandar lahoo lahoo

aa aa ke lauTti rahi ik yaad raat bhar
chipki huyi haiN dastakeiN dar par lahoo lahoo

Yawar Maajed

Visit detailed note on Facebook

تبصرے
  1. Saqib Saeed نے کہا:

    واھ کیا کہنے جناب بہت عمدہ ماشاءاللہ سدا سلامت رہیں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s