بالِشتیے

Posted: 2010/10/09 by ymaajed in نظم, اردو شاعری

 
کُرسیوں پر
میز کے چاروں طرف
بیٹھے ہوئے بالِشتیے
 
سگرٹیں سُلگائے
اپنی عینکوں کے
ملگجے شیشوں سے
اِک دُوجے کو تکتے
چائے کی چینک سے
کپ میں چُسکیاں بھرتے ہوئے
 
اور چھلکتی چائے کپ سے چاٹ کر
ڈونگرے برسا رہے ہیں داد کے اک بات پر
 
اور زیرِ لب سرگوشیوں میں گالیاں بھی بڑبڑاتے جا رہے ہیں
 
اِن کے اک اک حرف، اک اک بات میں ایقان ہے
۔۔۔۔اور ایسا اندھا اعتماد
جیسے دُنیاؤں کے خالق نے
انہی کے مشورے سے
زندگی ترتیب دی
 
گالیوں کے، داد کے اور قہقہوں کے دور میں
چائے کے کپ میں اٹھے طوفاں کے بڑھتے شور میں
 
لے کے اپنے ہاتھوں میں عدسے مُقَعِّر،
پِنڈلیوں سے بانس باندھے
اپنا اپنا قد چھپا کر
سب کی پَستہ قامتی کو ماپتے بالِشتیے
 
اونچی آوازوں میں پورے زور سے
بات ہر اک دوسرے کی کاٹتے بالِشتیے
چائے کے کپ چاٹتے بالِشتیے

اکتوبر٣، ٢٠٠٩

یاور ماجد

 

baalishtiye

 

Yawar Maajed

kursiyoN par
mez ke chaaroN taraf
baiThe huye baalishtiye
 
sigrateN sulgaaye
apni ainakoN ke
malgaje sheeshoN se
ik dooje ko takte
chaaye ki chainak se
cup meN chuskiyaaN bharte huye
aur chalakti chaaye kap se chaaT kar
DoNgre barsaa rahe haiN daad ke ik baat par
 
aur zer-e-lab sargoshiyoN meN gaaliyaN bhi baRbaRaate jaa rahe haiN
 
un ke ik ik harf
ik ik baat meN
……… eeqaan hai
……… aur ik andha aetamaad
jaise dunioyaaoN ke KHaaliq ne
inhi ke mashvare se
zindagi tarteeb di
 
gaaliyoN ke, daad ke aur qehqahoN ke daur meN
chaaye ke kap meN uThe toofaaN ke baRhte shor meN
 
uTTh paRe haiN apne hhaathoN meN liye adse muqa’ar
pinDliyoN se baaNs baaNdhe
apna apna qad chhupa kar
sab ki pasta qaamati ko maapte baalishtiye
 
ooNchi aavaazoN meN poore zaur se
baat har ik doosre ki kaaTte baalishtiye
chaaye ke kap chaaTte baalishtiye

 

October 3, 2009 

Pygmies
 

English Translation by

Dr. Kamran Haider

 
Residing the chairs
In all corners of the table
 
Smoking cigarettes
Peeping through the haze
Of myopic lenses
Hardly making an eye contact
Pouring tea in cups
Then sipping with a resonance
 
Licking the spilled over chocolaty drops of tea
From the lips of rusty cups
Ridiculously putting their hands together
At a note merely uttered for appraisal
 
— muttering filth and gossiping dirt
 
Each single word of their rambling talk
Has nothing but conclusive conviction
And absolute confidence
As if the creator of this universe
called for their advice
while fabricating life
 
In span of the fake applauds, filthy puns and glittery giggles
In bang of the rising storm within the hearts of empty mugs
 
Holding convex lenses in their tiny hands
Measuring shortness of others’ stature
Lengthening their own height
With affixed bamboos at thighs
Stood up from chairs
Raised all together
The pygmies
 
Screaming at full volume
Cutting at others’ talking tongue
Licking the vacuity of tea cups
The tiny-little pygmies

 



  •  
    8 people like this.
    • Kamran Haider Bukhari That is a lovely piece of poetry Yawar Bhai… I enjoyed reading it again and again while translating… And please don’t say that I have done any great job… The thought and the imagery is purely yours and surely it is a wonderful piece of poetry… Thanks for honoring me and giving me a chance to translate this great poem…
      October 10, 2009 at 7:33am
    • یاور ماجد Thanks for kind words Kamran Sahib.
      October 10, 2009 at 8:46am
    • Aazim Kohli khoob hai Yawar Sahib…..waah.
      October 10, 2009 at 9:46am
    • Muhammad Waris خوبصورت نظم ہے یاور صاحب، بہت اچھا خیال ہے اور الفاظ کا چناؤ ان کا اظہار متاثر کن، آپ کا مشاہدہ بھی قابلِ داد ہے۔ لاجواب
      October 10, 2009 at 10:36am
    • واہ واہ یاور سبحان اللہ
      میرے ذاتی خیال میں جہاں بات ٹوٹتی محسوس ہوتی ہے وہی اس کا حسن ہے ایک منٹل پاز ملتا ہے اور پھر بات شروع ہوتی ہے ایسی مثال تو مجید امجد آفتاب اقبال شمیم اور ن میم راشد ہی کے یہاں ملتی ہے۔ آپ کو اس طرح اس تکنک کو برتت…ے دیکھ کر خوشی ہوئی۔۔۔۔۔ ع ۔۔ اللہ کرے زورِ قلم اور زیادہSee More
      October 10, 2009 at 10:53am · 1 personLoading…
    • یاور ماجد طلعت جی، درست فرمایا، کامران صاحب سے میری دوستی چند ہفتوں کی ہی ہے اور ان کا انگریزی زبان پر عبور قابلِ رشک ہے، ان کی انگریزی نظمیں بہت ہی جاندار اور خوبصورت ہیں، کبھی وقت ملے تو ضرور پڑھئے گا
      October 10, 2009 at 11:45am
    • kya kehne yaavar maajid saaHib.aap ne aek
      mushaa’hide aur us se paidaa hone vaale Ghus’se ko
      jis taraH nazm ke zaabete meN Dhaalaa he voh
      laa’iq e teHsiin he.yeh tasviir kaa aek ruKh he,yeh
      muAshere ke jis tabqe ki tasviir he us ki maHruumiyaa…N
      use isi taraH ki jhuNjhlaahaT aur munaafiqat meN
      mubtilaa kar deti heN.maiN ne jo ise tasviir kaa aek
      ruKh kahaa tau is se muraad yeh thi k aek nazm
      saaqi faaruuqi ki bhi he isi mauzuu par jo duusre
      tabqe (baa ikhtiyaar,baalaa dast)ki he.
      "aek baRe se ghar ke aek baRe se kamre meN
      jamA huye kuchh chhoTe chhoTe laug”
      yeh nazm saaqi ki kulliyaat”zindah paani sachhaa”
      meN,kahiiN se muyaasar aa jaaye tau zuruur
      paRhiye gaa.
      bahar Haal aap ki nazm ki ahamiyat se inkaar mumkin
      nahiiN.allah aap ko Khush rakhe.See More
      October 10, 2009 at 2:29pm
    • Azm Behzad kaamraan saaHib ke liye alag se daad,
      maashaa allah aNgrezi par baRi qudrat rakhte heN.
      kabhi in se kisi Ghazal kaa tarjumah karne ki
      darKhuaast kareN ge:-)
      October 10, 2009 at 2:34pm
    • kia kehney yawar bhaii bohut zabardast nazm hy apney andar tamaam tar sachchaii liye ..apney haal sey ghafil aisey kirdaroN sey aik sachchey fankaar ka mutanaffir hona aik fitree amar hy itni bebaaki sey itni umda nazm takhlique karney dili… daad qabool keejiye.
      wassalam
      fabSee More
      October 10, 2009 at 5:17pm
    • یاور ماجد شکریہ فیض بھائی، ، بالشتیے ہر جگہ ، ہر کونے میں اور ہر شعبے میں موجود ہیں، میں نے سوچا آج تک ان کے اعزاز میں کچھ لکھا نہیں گیا تو چلو دو چار سطریں لکھ دیتے ہیں، کیا یاد کریں گے
      🙂
      October 10, 2009 at 5:43pm
    • Majeed Akhtar could not hold till monday for commenting, I hv borrowed my son’s laptop. Amazing Yawar, superb observation. balishtiyoN ke e’zaz maiN ye nashist shandar hay…..humaray khokhlay pan par ek gehra tanz. DhairoN dad bhai khush raho……also Kamran has done a great job. GEO …..
      October 10, 2009 at 8:30pm
    • یاور ماجد مجید صاحب، آپ کا حسنِ نظر ہے اور ان الفاظ میں داد سے زیادہ آپ کی پدرانہ شفقت بول رہی ہے۔

      ڈھیروں آداب اور احترام آپ کی نذر

      October 10, 2009 at 8:36pm
    • Wasi Hasan yawar,main nay yay ap ki pahli takhleeq parhi hay aur mojhay kahnay deejyay kay main bohat mutasir hoowa,is nazm ka craft is qadar acha hay kay dad deeyay baghair naheen raha jasakta.doosray presentation kay nazm ko urdu roman aur english main paish kar diya taakay kisi ko praishani na ho….achi takhleeq per mubarakbaad
      October 10, 2009 at 10:34pm
    • یاور ماجد وصی صاحب، پسندیدگی کا بے حد شکریہ
      October 10, 2009 at 10:46pm
    • بہت اچھی نظم ہے یاور۔ مبارک ہو۔ اس قسم کی نظم کے لئے نثری نظم کا روپ ہی بہتر تھا۔ الفاظ کا انتخاب بھی بہت اچھا ہے، مثلاً پیالی کی جگہ کپ، کہ کپ میں طوفان ہی انگریزی کا محاورہ ہے۔ البتہ
      عدسے مُقَعِّر
      اس بیانبیے میں فۓٹ نہیں ہوتا۔ اور فلناز کی… بات سے میں متفق ہوں کہ "سرگوشیوں میں گالیاں بڑبڑانا” کچھ بوجھل سا لگتا ہے۔See More
      October 11, 2009 at 12:21am
    • Mahar Safdar Ali Yawar Sahib keya khoob app nay tasweer kashee kee hay Barree soch kay malik chotay loogoon kee
      October 11, 2009 at 2:50am
    • یاور ماجد اعجاز صاحب معافی چاہتا ہوں، یہ نظم نثری نظم نہیں، آزاد نظم ہے، نثری نظم اور آزاد نظم میں زمین آسمان کا فرق ہوتا ہے
      توصیفی الفاظ کے لئے شکریہ
      October 11, 2009 at 6:18am
    • یاور ماجد شکریہ صفدر صاحب
      October 11, 2009 at 6:19am
    • اعجاز عبید اوہو یاور، معذرت، میری غلطی کہ میں اسے نثری نظم سمجھا۔ اور اس پر غور نہیں کیا کہ مجھ کو تو نثری نظمیں پسند نہیں آتیں، یہ کیوں آئی؟
      October 11, 2009 at 11:34am
    • Zafar Khan بہت اچھی نظم ہے جناب۔ نثری نظم کا نام ایسا ہے کہ جسے انگریزی میں
      oxymoron
      کہتے ہیں۔یعنی دو متضاد الفاظ کا مجموعہ۔
      October 11, 2009 at 12:46pm
    • Hammad Niazi SUBHAN ALLAH SUBHAN ALLAH BHAI KIA KEHNAY AAPKI PEHLI TAKHLEEQ NAZAR SA GUZRI AUR BOHAT KHUSHGOWAAR TASUR CHOR RAI HA MUJH PAR FB PE AIK AUR ACHAY SHAIR KI NAVEED HO AAP
      MERI TRAF SA WELCOME BHI AUR DAAD BHI
      ALLAH HUMA ZID FA ZID
      October 11, 2009 at 11:00pm
    • Yawar Bhai! Aap sa kia khoob ta’aruf huwa hai. Pehli hi mulaqat mein dil ko chho lia aap na aur aap ki nazm na. Ehbab na buht khoob tabsara kia nazm per. Mery khayal mein yeh nazm humare muashra mein barp ahone wali her mehfil ki akkaas ha…i chahe woh adabi tanqeedi mehfil ho, dodton ki nijji mahafil hun, assembly session ho, mohalla ka tharray ki mehfil ho, ya so called ‘panchayet’ ho…yeh nazm her mehfil ka ehata karti hai……kion keh ‘baalishtiye’ har mehfil mein na sirf maujood hote hein balke ghalib hote hein. Mein zati taur per azad nazm mein tasalsul ko torne ka haq mein nahin hun. Rawani aur bahao ko azad nazm ki bari khoobi samajhta hun.See More
      October 12, 2009 at 1:28am
    • Arif Imam خوبصورت نظم ہے۔ سلامت رہیئے، احمد صفی صاحب نے بجاارشاد فرمایا۔
      October 12, 2009 at 6:26am
    • حماد صاحب، امجد صاحب اور عارف صاحب، آپ سب کا بے حد شکریہ، آپ کے توصیفی کلمات میرے لئے ایک اعزاز ہیں۔ امجد صاحب، روانی اور بہاؤ کی بات آپ نے درست کی، یہ میرے نزدیک بھی ایک بڑی خوبی ہے اور پابند نظم میں بھی روانی اور بہاؤ کم و بیش اتنا… ہی ہوتا ہے جتنا کہ آزاد نظم میں، جہاں فرق آتا ہے، وہ یہ ہے کہ آزاد نظم لکھتے ہوئے یہ شاعر کے اپنے ہاتھ میں ہوتا ہے کہ قاری کو کس جگہ روکے اور کہاں اسے روانی دے کر ایک منظر یا ایک خیال کی اکائی ہونے کا احساس دلائے۔ اوپر کے مصرعوں میں بالشتیوں کی حالت بیان کرنے کے بعد تسلسل توڑنے کے مقصد یہی تھا کہ ان کے منافقانہ رویئے کو الگ کر کے دکھایا جائے۔

      امید ہے آپ لوگوں کی رہنمائی میسر رہے گی اور یہ نئی دوستیاں ایک عمر تک چلیں گی

      یاورSee More

      October 12, 2009 at 9:09am
    • Noshi Gilani Khubsurat manzar.nama hai…..
      October 12, 2009 at 9:33pm
    • Rehana Qamar kia kehne
      October 14, 2009 at 1:00am
    • Zakir Hussain Ziai subhaanALLAH kya Tawaana Or Khoobsurat Andaaz Hae Aap Ka Keh Alfaaz Aap key Saamney Raqss Kartey Huey Mahsoos Ho Rahey Hain Nazzm Mein..
      Bharpoor Daad O Tahseen Aap Key Lieay…
      October 24, 2009 at 12:03pm
    • Kashif Haider بہت عمدہ نظم ہے یاور بھائی خوش رہیں
      November 11, 2009 at 1:26pm
    • Zafar Khan Very well crafted poem Yawar.
      November 11, 2009 at 1:29pm
    • Saud Usmani واہ یاور بہت مختلف نظم ہے۔۔۔
      November 11, 2009 at 2:09pm
    • یاور بھائی بہت خوب۔ بہت گفتگو ہوچکی اس نظم پر، مگر میں صرف ایک پہلو کو ذرا سا اور بڑھانا چاہوں گا جس کی طرف گلناز صاحبہ نے اشارہ کیا ہے۔ میرے نزدیک اس نظم کے مخاطب ہی انٹیلیکچوئل طبقے کے لوگ ہیں۔ وہ لوگ جن کی فکر اور جن کے کام سے معاشرے پر …اثر پڑ سکتا ہے۔
      بہت سالوں پہلے میں نے ڈینا گویا کے مضمون
      "Who killed poetry”
      کا ترجمہ کیا تھا جو ادبی جریدے سیپ میں شائع ہوا تھا۔ اس مضمون کا بنیادی خیال یہ تھا کہ آج کا شاعر ایک ذیلی معاشرے یعنی
      میں رہتا ہے، جس کا معاشرے کے عمومی دھارےsub-culture
      سے کوئی تعلق نہیں ہوتا۔ اس سب کلچر میں شاعر لکھتا ہے، دوسرے شاعروں کو اپنی شاعری سناتا ہے، اسی سب کلچر میں حیثیتیں طے ہوتی ہیں، اسی میں شاعر کے اچھا برا ہونے کا فیصلہ ہوتا ہے، اور ان تمام باتوں کا کوئی بھی اثر نہ معاشرے پر پڑتا ہے، نہ شاعر کو اس سے غرض ہوتی ہے۔ مصنف کا خیال یہ تھا
      کہ جب تک شاعر عام آدمی تک اس کے منتخب کردہ ذرائع ابلاغ کے ذریعے رسائی نہیں حاصل نہیں کرے گا، اس وقت تک ادب کو معاشرے میں اس کا کھویا ہوا مقام واپس نہیں ملے گا۔
      آج ہم دیکھ رہے ہیں کہ نوجوان کتاب نہیں خریدتے، مگر انٹرنیٹ پر شاعری پڑھتے ہیں۔ آڈیو بکس کا رواج آئی پوڈ اور ایم پی تھری پلیئرز کے آنے کے بعد عام ہوتا جارہا ہے۔
      یہ ہم سب کے لیے سوچنے کا مواد فراہم کرتا ہے۔ کیا میر، غالب اور مومن کی شاعری آڈیو بکس کی صورت میں لائی جائے تو اسے نوجوان سنیں گے؟ کیا شعری مجموعہ اب کتاب کے بجائے سی ڈی کی صورت میں سامنے آنا چاہیئے؟
      ان میں سے کوئی بھی بات انقلابی نہیں، مگر میرا خیال ہے کہ اب بھی ادبی حلقوں میں اس بات کو عجیب سے انداز سے دیکھا جاتا ہے کہ کسی شاعر کی ویب سائٹ ہو، یا آڈیو بک سامنے آئے، اور اسے قبول عام حاصل کرنے کے لیے اوچھے ہتھکنڈے استعمال کرنے سے تعبیر کیا جاتا ہے۔ یہ رویہ اب بدلنا چاہیئے۔ ہمیں ماننا ہوگا کہ کمیونیکیشن اب ایک مختلف شکل اخیتیار کرتی جارہی ہے، اور جب تک اسے قبول کرکے ہم اپنے ادبی ورثہ کو آج کے میڈیا میں منتقل نہیں کریں گے، آنے والی نسل کو اس سے بے بہرہ رہنے سے کوئی نہ بچا پائے گا۔
      آخر میں ایک تجربہ جو خاصا تازہ ہے۔ کراچی میں دی سیکنڈ فلور کے نام سے ایک کافی ہاوس کھلا، جس کی انتظامیہ سے میرے مراسم تھے۔ وہاں آنے والے لوگوں میں اکثریت ان نوجوانوں کی تھی جو اردو ٹھیک سے پڑھ لکھ نہیں سکتے اور انگریزی ہی پر اکتفا کرتے ہیں۔ ہم نے وہاں پر ادبی پروگرامز منعقد کیے، اور حال یہ ہوگیا کہ بعض اوقات دروازہ اس لیے کھلا رکھنا پڑتا تھا کہ اندر لوگوں کے لیے گنجائش ختم ہوجاتی تھی۔ وہاں غالب کی شاعری بھی پڑھی گئی، یوسفی صاحب کے مضامین بھی، اور جون ایلیا کی سالگرہ بھی منائی گئی۔ نتیجہ یہ کہ ہمیں اردو کی باقاعدہ کلاسز کا انعقاد کرنا پڑا کیونکہ وہاں آنے والے لڑکے لڑکیوں کو اردو ادب کی چاشنی نے مبہوت کر دیا تھا۔ ٹھیک ہے کہ وہ داد واہ کے کہہ WOW! بجائے
      کر دیتے ہیں، مگر آپ اس پر اصرار کرنے کے بجائے کہ وہ روز اول سے ادبی روایات اور محفلوں کے آداب سیکھ لیں، ان کو قریب آنے دیں۔ جاننے دیں کہ اردو کیا ہوتی ہے۔ مت ناراض ہوں اگر انھیں غزل اور نظم کا فرق نہیں معلوم۔
      جب تک ہم اہل ادب ان باتوں پر سنجیدگی سے سوچنا شروع نہیں کریں گے،
      Who killed poetry
      جیسے سوال کی تلوار ہمارے سروں پر لٹکتی رہے گی۔

      میں فیس بک کی ان محفلوں کو درست سمت میں ایک قدم تصور کرتا ہوں۔ یہاں ہمارے درمیان ایسے شعرائے کرام موجود ہیں، جن کی ادبی حیثیت مسلمہ ہے۔ ان کا یہاں ہونا اس بات کا اعلان ہے کہ conscious effort اب تبدیلی آرہی ہے۔ صرف اسے ایک
      میں تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔

      طول کلام کے لیے سب سے معذرت۔See More

      November 12, 2009 at 7:39am · 1 personKhalid Malik Sahil likes this.
    • عرفان صاحب، ہمیشہ کہی طرح آپ کے اندازِ فکر نے متاثر کیا ۔ آپ کی بات سے قطعی طور پر اختلاف نہیں کیا جا سکتا، نیا زمانہ، خصوصاً پچھلے پندرہ سالوں میں دنیا کمپیوٹراور انٹرنیٹ کی وجہ سے اتنی آگے نکل گئی ہے کہ اس کے ساتھ ساتھ قدم ملانا مشکل ہ…وتا جا رہا ہے، اگر مغربی فنون اور مغربی ثقافت نئی نسل میں زیادہ مقبول ہے تو اس کی وجہ یہ نہیں کہ ہماری ثقافت فنی پسماندگی کا شکار ہے، بلکہ اس کی وجہ یہ ہے کہ ہم لوگ نئے زمانے کے بدلتے تقاضوں کے ساتھ اپنے آپ کو بدلنے سے قاصر رہے ہیں۔
      اگر ہم کسی شاعر کی ویب سائٹ دیکھتے ہیں تو اس کی حوصلہ افزائی کی جانی چاہیئے، اگر کوئی اپنی شاعری آڈیو بکس کی صورت میں یا پی ڈی ایف کی صورت میں سامنے لاتا ہے تو اس کی بھی پذیرائی ہونی چاہیئے، جہاں تک اعتراض کرنے والوں کا تعلق ہے تو اس طرح کے لوگوں نے تو ساحر، فراز اور فیض جیسے شاعروں تک کو شاعر ہی نہیں تسلیم کیا کیونکہ یہ شعراء عام لوگوں میں مقبولیت کے اس درجے تک جا پہنچے تھے جہاں معترضین باوجود خواہش کے خود کبھی نہیں پہنچ پائے یا سرے سے پہنچنے کی صلاحیت سے ہی محروم تھے

      میں اتنا ضرور کہوں گا کہ اگلی نسلوں میں مجھے شاعری، ادب اور دوسرے فنونِ لطیفہ کی قبولیت کے بے پناہ امکانات نظر آتے ہیں، کیونکہ یہ نسلیں اطلاعاتی نظام سے میری اور آپ کی نسل کے مقابلے میں بہت زیادہ جڑی ہوئی ہیں،
      میں بھی آپ کا ہم آواز ہوں اور یہی کہوں گا کہ فیس بک کا یہ فورم اپنے اندر بے پناہ امکانات لئے ہوئے ہے اور یہ بہت خوشی کی بات ہے۔ اگر آپ کے ذہن میں مزید شعوری کوشش کا کوئی لائحہءعمل ہے تو بتائیں، میرا خیال ہے ہم سب ہی اس میں اپنا اپنا حصہ ڈالنے کے لئے نہ صرف تیار ہیں بلکہ ایسا کام کر کے ہم سب کو بہت خوشی ہو گی۔
      یاور
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
      edited to fix a few typing errorsSee More

      November 12, 2009 at 9:10am
    • Marvi Sirmed واہ یاور صاحب، بہت خوب۔ بہت ہی خوبصورت انداز میں آپ نے ان لوگوں کا تضاد بیان کر دیا جنہیں میں ہمیشہ فکری طوائفیں کہا کرتی ہوں۔ آج کل یہ فکری طواِفیں خاصے اوج پر ہیں۔ مہلوم نہیں ان کا حسنٖ کرشمہ ساز، اب کہ کیا رنگ لائے! آپ کا شکریہ کہ یہ خوبصورت نظم آپ نے ہماری دیوار پر چسپاں کی۔
      December 18, 2009 at 11:50pm
    • شکریہ ماروی جی، آپ کا پروفائل اور آپ کا بلاگ دیکھا، بہت خوشی ہوئی دیکھ کر اور یہ جان کر کہ آپ جیسے روشن دماغ لوگ آج بھی ہمارے تنگ نظر معاشرے میں نہ صرف موجود ہیں بلکہ اس معاشرے کو تبدیل کرنے کی کوششوں میں بھی لگے ہوئے ہیں، آپ کی محنتوں… کا پھل ہم لوگوں کی آنے والی نسلیں کھائیں گی، اور سفر پر رواں یہ کشتی ایک نہ ایک دن اپنی منزل ضرور پائے گی۔
      میرے جیسے تو کب کے وہاں سے بھگوڑے بن کر دیارِ غیر میں خاک چھانتے پھر رہے ہیںSee More
      December 19, 2009 at 9:10am
    • Iqbal Khawar ye nazm abhi nazar say guzri ….kamal ki nazm hay yawar mubarak baad qubol karo peyaray bhai..
      January 2 at 7:59am
    • Faizan Abrar واہ جناب کیا زبردست اور کیا جاندار طریقے سے جذبوں کا اظہار کیا ہے۔۔۔ واقعی ایک بھر پور نظم ۔۔۔ بہت سی داد میری جانب سے بھی حاضر ہے۔
      January 12 at 8:44am
    • Qaisar Masood yawer apki nazm ap kay mushahiday or artistic approach ki bhar poor akkas hai..nazm ki manzar nigari qari kay samnay balishtiyoon ki mehfil ka naqsha kheench deti hai…bila shuba har lehaaz say ek jadeed nazm hia…nazm par jandaar tabsray parh k boht lutf uthaya hai mian nay..thanx..jeetay rahian..
      November 30 at 2:31pm
    • یاور ماجد شکریہ قیصر
      November 30 at 3:39pm
    • Naveed Abbas bht khoob jinab.. is mushahidy ko kya he umdgi aor asani k sath nasri nazm mein jis andaz se bian kia he bht he umda hy…. iqbal sajid marhoom ka she yad a gaya tha…. khush rahye jinab shareek krny ka shukria
      November 30 at 3:53pm
    • یاور ماجد نوید بھائی، نظم نثری ہرگز نہیں۔۔ آزاد نظم ہے ۔۔ اقبال ساجد کا شعر ضرور شیئر کریں، توصیفی الفاظ کے لئے مشکور ہوں
      November 30 at 3:54pm
    • eijaz ubaid sahab ki tarah main bhi ghalat samjha… mazrat chahoon ga… abhi dobara ghor se parhi he nazm…. again sorry
      iqbal sajid ka shir zaroor share karoon ga …. us sher k yad any mein tea ka bht amal dakhl he.main bhool raha hn ki…tab daikh kar share karon ga Insha AllaSee More
      November 30 at 4:02pm
    • Kashif Javed MASHAALLAH very nice poetry ,really bohat khoob.
      December 1 at 12:01am
    • Khalid Malik Sahil ماجد صاحب،بیشک بہت اچھی نظم ہے،تین مرتبہ پڑھی اور مزا لیے،خیر ہو
      December 1 at 12:23am
  • جواب دیں

    Fill in your details below or click an icon to log in:

    WordPress.com Logo

    آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Google photo

    آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Twitter picture

    آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Facebook photo

    آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Connecting to %s