وہم کی کالی گھٹا نظروں سے ہٹتی ہی نہیں

Posted: 2009/11/19 by admin in اردو شاعری, غزل

وہم کی کالی گھٹا نظروں سے ہٹتی ہی نہیں
دُھند ایسی دل پہ چھائی ہے کہ چھٹتی ہی نہیں

آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

ہے دلِ عابد کی ہر اٹھتی صدا میں انتشار
جائے گنبد میں نظر کے تو پلٹتی ہی نہیں

صبح کے ہر در سے اژدر یاس کا لپٹا ملے
رات اس مارِ سیہ کے ساتھ کٹتی ہی نہیں

میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں

میں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر
دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں

یاور ماجد

Transliteration

vehm ki kaali ghaTa nazroN se haTti hi naheeN
dhund aisi dil pe chhaayi hai keh chhaTti hi naheeN

aaNkh bhar hi aasmaaN hai dil ki dunia ka magar
itnio vus’at hai keh nazroN meN simaTti hi naheeN

hai dil-e-aabid ki har uThti sada meN intishaar
jaaye gunbad meN nazar ke to palaTti hi naheeN

subha ke har dar se ayydar yaas ka lipTa mile
raat is maar-e-siyah ke saath kaTti hi naheeN

maiN luRhakta hi chalooN kaun-o-makaaN ki khaayi meN
aisi gardish shash jihat ki hai keh ghaTti hi naheeN

maiN hooN yawar apni fitrat meN ujaaloN ka safeer
dhool mujh se dasht-e-zulmat ki lipaTti hi naheeN

 

Yawar Maajed

Read this Ghazal on Facebook

 

آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دنیا کا مگر

  • 8 people like this.
    • وہم کی کالی گھٹا نظروں سے ہٹتی ہی نہیں
      دُھند ایسی دل پہ چھائی ہے کہ چھٹتی ہی نہیں

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      یاور ماجد : تنگ قوافی میں بہت اچھے مضامین نظم کئے ہیں اور نہایت خوبی کے ساتھ۔ ۔
      مطلع بہت ہی مزہ دے گیا ۔ اژدر اور مار۔ سیاہ کا ستعمال بھی خوب ہے ۔ خوش رہئے جناب ۔ ڈھیروں داد اور بہت سی دعائیں آپ کیلئے ۔

      November 19, 2009 at 7:11pm
    • یاور ماجد پسندیدگی کا اور عزت افزائی کا شکریہ مجید صاحب
      November 19, 2009 at 7:40pm
    • یاور ماجد یہ غزل پہلے لنک کی صورت میں یہاں ڈالی تھی اور بیشتر احباب پہلے پڑھ چکے ہیں، اب باقاعدہ نوٹس بنانے لگا ہوں اور دوستوں کا حلقہ بھی کچھ وسیع ہو گیا ہے تو سوچا کہ اس کو بھی ایک نوٹ میں ڈال دوں، امید ہے آپ لوگوں کو پسند آئے گی
      November 19, 2009 at 7:50pm
    • Khushbir Singh Shaad Aankh bhar hi aasmaaN hai dil ki dunia ka magar
      itni wusaat hai ke nazroN mein simatTi hi nahi
      bahut Khoob Yawar sahib
      November 19, 2009 at 9:28pm
    • Masood Quazi آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      واہ واہ بھت عمدہ بندشین اور تراکیب ھیں داد قبول کریں
      November 19, 2009 at 9:38pm
    • Kashif Haider buhat khoob Yawar bhai buhat khobsorat ghazal hai
      November 19, 2009 at 9:38pm
    • Shoaib Afzaal wah yawar Ghazal ki khobsorti shaer ki jidat pasandi hay aisay fun paron ko takhleqat kehna baja hay kiokay ap kay han creativity bohat hay…Dua gau ho khuda ap kay lehjay ko aur tawana karay bohat si duayen aur dad qabol kejeye…khaqsar mani.
      November 19, 2009 at 11:34pm
    • wah yawar wah…is ghazal ki sab say bari khoobi iski ramziat hay…har shair doobara parhnay per aik aur maza dayta hayمیں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر
      دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں
      kia kahnay hain…saray shair bohat acha…y lagay
      November 19, 2009 at 11:48pm
    • Gulnaz Kausar آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      umda shaer hay aur achi ghazal hay yawar … diction ka istamal khoob hay …
      November 20, 2009 at 12:36am
    • Arif Imam آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      بہت عمدہ غزل ہے یاور۔ سلامت رہو
      November 20, 2009 at 1:06am
    • SubhaanALLAH,
      Wah wah Kya kehne Hain Yawar Bhai.Luttf Aa Ga’ya.
      @@ wa’ham Kee Kaali Ghatta Nazro’n Sey Hatt’tee hee Nahien..
      Dhuunnd Aisee Dill Pey Chhaii hae keh chhatt’tee hee nahien..

      …@@ Aankh Bharr hee Aasmaa’n Hae Dil Kee Dunya Ka,Magar..
      Itni wuss’att Hae Keh Nazro’n Mein Simatt’tee Hee Nahien..
      @@ Main Lurrhakta Hee Challu’n Koun-o-Makaa’n Kee Khaii Mein..
      Aisee Gardish Shash Ja’hatt Kee Hae Keh Ghatt’tee Hee Nahie’n..
      Or kya Achha Maqta Hae SubhaanALLAH..Itna Ummdah o Behtareen Kalaam Tag karney Par bharpoor daad. Or beyhadd shukriya..
      @@ Main Hoo’n Yawar Apni Fittrat Mein Ujjaalo’n Ka Safeer..
      Dhool Mujh Sey Dashtt-e-Zulmat Kee Lipatt’tee Hee Nahien..

      November 20, 2009 at 1:25am
    • Akhtar Usman میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
      ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں
      Kia baat hai,jeetay rehyae.accha kaha aap nay.
      November 20, 2009 at 2:04am
    • یاور بھائی یہ غزل بھی آپ کے ندرت کی تلاش میں سرگرداں ذہن کی بھرپور عکاس ہے۔ بہت مشکل زمین تراشی، اور خوب نبھایا۔ اور اس شعر کا تو جواب ہی نہیں۔

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      …کیا کہنے۔ سبحان اللہ۔

      November 20, 2009 at 2:28am
    • میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
      ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں

      yawar sb bht umda khaiyalaat k sath bht achi trah say lafzoin k sath khailtay howay kuch haqeeqatain likh dali hain aap nay..great one..bht dad maire tarf say……

      November 20, 2009 at 2:40am
    • Ali Zubair kiya kahnay yaawar maajid,,kiya kahnay hen..
      men hon yawar ujaalon men apni fitrat ka safeer
      dhool mujh say dasht e zulmat ki lipat ti hi nahi

      kiya kahnay hen! poori ghazal hi shanddar hay,,boht shukriya janaab ka,thanks

      November 20, 2009 at 2:59am
    • Yawar bhai… !!!

      ہے دلِ عابد کی ہر اٹھتی صدا میں انتشار
      جائے گنبد میں نظر کے تو پلٹتی ہی نہیں

      …صبج کے ہر در سے اژدر یاس کا لپٹا ملے
      رات اس مارِ سیہ کے ساتھ کٹتی ہی نہیں

      میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
      ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں

      I am speechless… your ghazals are always profound and that is what I like about your poetry… Every couplet comes on paper after being processed through real experiences and emotions, nothing seems fake when one reads your poetry… True feelings with a wonderful skill to craft it in a beautiful piece of poetry… what more a reader would crave for…?

      Thanks for sharing

      November 20, 2009 at 3:08am
    • اکثر اوقات ایسا ہوتا ہے کہ شاعر انفرادیت کے چکر میں خیال میں یا اظہار میں ناکام ہو جاتا ہے۔ لیکن آپ کے ہاں یہ کمال ہے کہ آپ ندرت_ خیال اور نیرنگیئ اظہار میں ہمیشہ کامیاب و کامران رہتے ہیں۔
      کتنی خوب صورت غزل کہی ہے آپ نے۔ مزہ آ گیا۔ ہر شعر کم…ال کا ہے ۔ مطلع اور آخری دو اشعار زیادہ پسند آئے۔ جیتے رہیے۔
      November 20, 2009 at 3:16am
    • Amjad Shehzad Shukriya Ali Zaryoon Bhai
      November 20, 2009 at 5:00am
    • آپ سب احباب کا عزت افزائی پر حد سے زیادہ ممنون ہوں، بہت ممنون

      مجید اختر صاحب، خوشبیر صاحب، مسعود قاضی صاحب، کاشف حیدر صاحب، طلعت زہرا جی، شعیب افضال صاحب، وصی صاحب، عارف امام صاحب، گلناز کوثر جی، ذاکر حسین ضیائی صاحب، اختر عثمان صاحب، عرفا…ن ستار صاحب، حسن کھوکھر صاحب، علی زبیر صاحب، امجد شہزاد صاحب، کامران حیدر صاحب اور علی زریون صاحب، آپ سب احباب کا فرداً فرداً شکریہ

      میں ذاتی طور پر اس بات پر پختہ یقین رکھتا ہوں کہ اگر آپ شعوری طور پر ندرت کی تلاش میں نکلیں گے تو زیادہ دور نہیں جا پائیں گے، اپنے اندر کی کھوج کے لئے نکلیں گے تو ندرت آپ کو خود تلاش کر لے گی، ہم لوگوں سے اشعار دل کی تڑپ اور اپنے اندر چھپے انسان سے جاری مکالمے خود بخود کہلوا دیتے ہیں۔ جذبے جو مجھ جیسے اور آپ سب احباب جیسے حساس لوگوں کی متاع ہیں، ہم غریبوں کی واحد دولت ہیں

      November 20, 2009 at 6:31am
    • بہت خوب یاور ، اچھے جا رہے ہو

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      …میں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر

      دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں

      November 20, 2009 at 9:39am
    • بہت خوب یاور ، اچھے جا رہے ہو

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      …میں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر

      دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں

      November 20, 2009 at 9:39am
    • Zafar Khan بہت خوب یاور۔اچھی غزل ہے۔
      November 20, 2009 at 9:48am
    • Minhas Hani اس غزل کو کیسے سراہا جاۓ کہ بڑے سے بڑا لفظ حق ادا کرنے سے قاصر ھے۔ اللہ شاد و آباد رکھے
      November 20, 2009 at 9:59am
    • Imran Jaffer Kia kehnay…. Bhai Yawar Maajed, Bohat Khoob.
      Salamat Rahein.
      November 20, 2009 at 10:21am
    • یاور ماجد طارق صاحب، ظفر صاحب، منہاس صاحب اور عمران صاحب ، بہت شکریہ آپ لوگوں کا، خاص کر منہاس صاحب، آپ نے تو محبت کی انتہا کر دی، خدا آپ سب کو خوش رکھے
      November 20, 2009 at 10:44am
    • Zafar Khan میں ہوں یاور اپنی فطرت میں اجالوں کا سفیر
      دھول مجھ سے دشتِ ظلمت کی لپٹتی ہی نہیں

      بہت اچھا شعر ہے۔

      November 20, 2009 at 10:49am
    • اعجاز عبید واہ
      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      جیتے رہیں یاور۔
      November 20, 2009 at 11:17am
    • یاور ماجد شکریہ اعجاز صاحب، خدا آپ کا دستِ شفقت ہمارے سر پر سلامت رکھے
      November 20, 2009 at 3:49pm
    • Faiz Alam Babar wah wah wah yawar bhai ..poori ki poori ghazal dil ko bha gaii ..aik murassa aur bharpoor ghazal par bharpor daad qabool keejiye.thanks
      November 20, 2009 at 4:34pm
    • صبج کے ہر در سے اژدر یاس کا لپٹا ملے
      رات اس مارِ سیہ کے ساتھ کٹتی ہی نہیں

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      …bhai bohat achay likhtay ho kia baat ha khush raho wah wah maza aa gya

      November 21, 2009 at 12:59am
    • Nasir Ali ماجد صاحب ۔ اچھی غزل ہے کئی شعر تو کمال کے ہیں ۔ پکڑ لیتے ہین قاری کو ۔
      شکریہ اتنی اچھی غزل ٹیگ کرنے کا ۔
      November 21, 2009 at 1:53am
    • حسن طبیعت سے لے کر حسن سخن تک یاور ماجد کی شخصیت کی داد دئیے بغیر نہیں رہا جا سکتا ۔۔۔وہ بہت سے عناصر جن کا یکجا ہونا زرا مشکل ہے۔۔اگر یکجا ہو جائین تو فیصلہ کرنا مشکل ہوتا ہے کہ خوشی زیادہ ہے یا حیرانی ۔۔۔۔یاور کے معاملے میں اسی استعجابیہ …خوشی کا سامنا ہوتا ہے۔۔۔۔جو بات ان کی شاعری میں ایک نظر مین سامنے آجاتی ہے وہ اس نئے زاویے کی تلاش ہے جس کی تلاش ہر اچھے شاعر پر فرض کی طرح عائد ہوتی ہے۔۔۔۔یہ اور بات کہ فرض شناسی آۡج کل زرا کم کم باقی رہ گئی ہے۔
      ۔
      یہ غزل بھی ان کی ندرت اور تلاش کی نشاندہی کرتی ہے

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      میں توقع کرتا ہون کہ یاور ماجد کا شعری مجموعہ جب بھی ظہور پذیر ہوگا۔۔۔۔وہ اسی استعجاب بھری خوشی کا مجموعہ ہوگا۔۔

      November 21, 2009 at 9:25am
    • یاور ماجد بہت محبت آپ کی سعود بھائی، بہت خلوص آپ کا۔ میں تو اپنے آپ کو خوش نصیب سمجھتا ہوں کہ فیس بک کے ذریعے آپ سے رفاقت کا موقع مل گیا۔ خوش رہیں
      November 21, 2009 at 9:39am
    • Mohammad Kaiserimam iss qadar khoobsurat baat aur itni khoobsurti ke saath.
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں
      November 21, 2009 at 11:11am
    • یاور ماجد فیض صاحب، ناصر صاحب، فرحان صاحب اور انک قیصر، آپ لوگوں کی بہت محبت ہے، بہت شکریہ آپ کی پذیرائی کا
      November 21, 2009 at 3:59pm
    • وہم کی کالی گھٹا نظروں سے ہٹتی ہی نہیں
      دُھند ایسی دل پہ چھائی ہے کہ چھٹتی ہی نہیں

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      Yawar Maajed sahab … Bohat umda ghazal kehnay per daad kabool farmaye… Allah karay zore qalam aur ziada…
      thanks for sharing and tag 🙂

      November 21, 2009 at 4:54pm
    • یاور ماجد سکریہ فہمیدہ جی
      November 21, 2009 at 6:14pm
    • Annie Akhter Yawar saheb, buhat achay. aap kay qalam ki tawanai mashallah din badin berhti ja rahi hai. khuda UjaluN kay safeer ko nazer-e-bad say bahcay. khush raheay 🙂
      November 21, 2009 at 6:16pm
    • یاور ماجد آپ کی دعائیں ساتھ رہیں عینی آپی، غزل پڑھنے کا اور پنسد کرنے کا بہت شکریہ
      November 21, 2009 at 6:19pm
    • واہ بہت خوبصورت غزل ہے یاور صاحب، مطلع اور مقطع دونوں ہی جاندار ہیں۔

      آنکھ بھر ہی آسماں ہے دل کی دُنیا کا مگر
      اتنی وُسعت ہے کہ نظروں میں سمٹتی ہی نہیں

      …میں لُڑھکتا ہی چلوں کون و مکاں کی کھائی میں
      ایسی گردش شش جہت کی ہے کہ گھٹتی ہی نہیں

      اور ان دونوں اشعار کا بھی کوئی جواب نہیں ہے، بہت اعلیٰ، بہت داد قبول کیجیئے جناب۔

      November 22, 2009 at 9:49am
    • Qayyum Khosa Bahut Shukriya Yawar Bhai. Bahut Umda. Salamat Rahain.
      November 22, 2009 at 10:19pm
    • ‎;ankh bhar he asman hy dil ke dunya ka magar
      ;itnee wossat hy ka nazroon mein smettii ha nahe.’

      …ache ghzal hy yawar bhai.

      November 23, 2009 at 2:12am
    • یاور ماجد شکریہ وارث صاحب، عرفان صاحب، اور کھوسہ صاحب
      November 23, 2009 at 10:16am
    • Jamshed Masroor Very nice Yawar
      November 24, 2009 at 6:47am
    • August 27 at 10:23pm
    • Afzaal Naveed Bohot khoob Yawar. Barri dstaras se ghazal kehte ho.
      October 7 at 8:24am
  • جواب دیں

    Fill in your details below or click an icon to log in:

    WordPress.com Logo

    آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Google photo

    آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Twitter picture

    آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Facebook photo

    آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Connecting to %s