شعروں میں اُس کا پھول سا پیکر تراشتے

Posted: 2009/09/12 by admin in اردو شاعری, غزل

زورِ سُخن جو ہوتا برابر تراشتے
شعروں میں اُس کا پھول سا پیکر تراشتے

محوِ سفر رہے ہیں قدم اور قلم سدا
رُک پاتے گر کہیں تو کوئی گھر تراشتے

گرقیدِ شش جہات پہ ہوتا کچھ اختیار
روزن کوئی بناتے کوئی در تراشتے

پرکارِ فن سے دائرے کھینچا کئے ہزار
نروان پاتے گر کبھی محور تراشتے

سیپی میں دل کی تم جو اگر ٹھہرتے ذرا
ہم تیشہءِخیال سے گوہر تراشتے

ہاتھوں کی کونپلوں سے کٹھن روزگار کے
عمریں گُزر گئیں مجھے پتھر تراشتے

ناخن کی نوک سے فلکِ روسیاہ پر
ہم چودھویں کے چاند کا منظر تراشتے

اس بار بھی بنی وہی مبہم سی شکل پھر
اس بُت کو اب کی بار تو بہتر تراشتے

یاور ماجد

 

  Read this Ghazal on Facebook

Muneeza Maajed and 8 others like this.
    • Mark Wheeler where’s the auto-translate feature?
      September 12, 2009 at 10:07am
    • Mark, In this form of urdu literature, called Ghazal, every two verses are supposed to carry independent thoughts and first two verses traditionally rhyme and then second verse of each couplet rhymes with the ones in the first couplet.
      Here… is the translation of the two couplets I posted above.

      with the tip of nail, on the ugly face of the dark sky
      I wish I could draw moon of the fourteenth night

      Even this time you see, the same abstract face showed up
      You should have carved this sculpture at least this time, right!

      Very very bad translation, but gives a little of what I meant above 🙂

      YawarSee More

      September 12, 2009 at 10:46am
    • Muhammad Waris بہت اچھے اشعار ہیں یاور صاحب، پوری غزل لکھ دیتے برادرم۔
      September 12, 2009 at 11:02am
    • Arif Imam دونوں ہی شعر بہت عمدہ ہیں، باقی غزل کا انتظار رہے گا۔
      September 12, 2009 at 4:35pm
    • Mohammad Kaiserimam Iss trash khrash ne khahshat ke butt ko jiss tarah parde se bahir nikala he uss se doosre shairon ki woh khahisat samajhne men mada mle gi jo woh shairi ki arh men jama rakhte hen.Allah inn konplon ko aur bhi YAWARI ata kare.
      September 12, 2009 at 6:44pm
    • Bahut khoob – Yawar, I know you for almost 13+ years and have been reading your poetry (though infrequently); however, at this moment, I feel that your poetry has been polished so much that it glitters from miles now.
      Good job – keep it up m…y friend.See More
      September 12, 2009 at 8:52pm
    • Muhammad Waris بہت خوبصورت غزل ہے یاور صاحب، خاکسار پہلے بھی اس پر داد پیش کر چکا ہے اور اب بھی پیش کرتا ہے۔ بہت اچھے اشعار ہیں، لاجواب۔
      September 13, 2009 at 5:12am
    • Asim Nisar very nice piece of poetry.. welldone and keep up the good work
      September 13, 2009 at 10:45pm
    • Faiz Alam Babar bohut umda mazameen baandhen hain zameen bhi bohut pasand aaii
      September 14, 2009 at 4:59pm
    • زورِ سُخن جو ہوتا برابر تراشتے
      شعروں میں اُس کا پھول سا پیکر تراشتے

      محوِ سفر رہے ہیں قدم اور قلم سدا
      رُک پاتے گر کہیں تو کوئی گھر تراشتے

      یاور صاحب آج آپ کا صفحہ دیکھا تو یہ خوبصورت غزل نظر آئی ۔ اتفاق کہہ لیجئے کہ ابھی ایک آدھ ماہ پہلے میں نے ’تراش لیا ’ کی ردیف میں ایک غزل کہی اور فیس بک پر پوسٹ کی تھی۔ آپ کی غزل بہت پسند آئی۔ آئیندہ رابطہ رہنا چاہئے ۔ سلامت رہئے ۔See More

      September 15, 2009 at 5:56pm
    • بہت اچھی غزل ہے یاور صاحب
      ناخن کی نوک سے فلکِ روسیاہ پر
      ہم چودھویں کے چاند کا منظر تراشتے

      اس بار بھی بنی وہی مبہم سی شکل پھر
      …اس بُت کو اب کی بار تو بہتر تراشتے
      بہت پر تاثیر ہیں۔See More

      October 12, 2009 at 11:28am
    • Gulnaz Kausar خوبصورت آہنگ ہے ۔۔۔ سچ میں کیا کیا منظر تراش دیے ایک غزل میں آپ نے ۔۔۔۔
      October 12, 2009 at 1:01pm
    • Saud Usmani کیا بات ہےیاور صاحب۔۔ایک ایک شعر قابل داد ۔۔کیا اچھی ردیف استعمال کی ہے۔۔۔خوبصورت غزل
      October 12, 2009 at 1:50pm
    • Wasi Hasan س بار بھی بنی وہی مبہم سی شکل پھر
      اس بُت کو اب کی بار تو بہتر تراشتے
      yawar mojhay tumharitakhleeqat main jo tazgi aur purkari nazar arahi hay uskay liyaydad qabool kijyay….kia achi zameen hay aur kia nai ghazal kahi hay
      October 12, 2009 at 10:29pm
    • Amjad Shehzad یاور بھائی!آپ نے میری صبح کو کتنا خوش گوار بنا دیا میں بتا نہیں سکتا۔بہت دنوں میں اتنی اچھی غزل پڑھنے کو ملی۔مبارک ہو۔کس کس شعر کی تعریف کروں۔ایک سے ایک بڑھ کر ہے۔میں یہاں کوئی شعر کوٹ نہیں کر رہا۔ کاش یہ غزل میں کہہ سکتا۔ شاید میں جذباتی ہو رہا ہوں لیکن میں ٹھیک کہہ رہا ہوں۔سدا خوش رہیں،سلامت رہیں۔فیس بُک تیرا شکریہ۔۔۔۔کیسے کیسے دوستوں سے ملا دیا۔
      October 13, 2009 at 1:54am
    • Azm Behzad Yaavar saaHib,aap ki yeh Ghazal maiN pehle
      kahiiN paRh chukaa huuN.maashaa allah Khuub
      likhte heN aap.allah Khush rakhe.
      October 13, 2009 at 4:24am
    • Muhammad Kashif Yawar Sahib…….. Nehaayat hi Khobsorat Ghazal Hai.. Wah Wah Wah …

      Her Aik Sher Qabil e Daad hai ..

      Aap K Liye Duaain

      October 13, 2009 at 5:53am
    • Ali Zubair mahw e safar rahay hain qadam or qalam sada,,rk patay gr kaheen to ghar trashtay,,,kiya umda ghazal hay khaas kr is sher men ghar tarshtay batoar radeef qafiye kay nahi aaya balkay matloob e jaa kay liye mozzon treen lagta hay,,,,khoobsorat ghazal hay ji
      October 13, 2009 at 3:08pm
    • Masood Quazi یاور میان اللہ تم کو اعلی درجات پر فایز کرے کیا ھونہاری سے غزل تراشی ھے واہ واہ واہ
      اسی طرح غزل کے نو بہ نو روپ نکھارو۔ اگلی نسل کی غزل تمھاری اور تم ایسے نوجوانون محتاج ھے
      October 13, 2009 at 8:30pm
    • ‎@@ Mahv-e Safar Rahein Hain Qaddam Or Qallam Sadda..
      Ruuk Paatey Garr Kahee’n Tou Koi Gharr Traashtey..

      @@ Garr Qaaid-e-Shash Ja’hatt Peh Hota Kuch Ikhtiyaar..
      Rouzan Koi Banaatey,Koi Darr Traashtey..

      @@ Parkaar-e-Fann Sey Daaeiirey Kheincha Kieay Hazaar..
      Nirvaan Paatey Garr Kabhi,Mehvarr Traashtey..
      Yaawar Bhai Aap Key Lieay Bharpoor Daad Kya Khoobsurat Or A’ala Ghazzal Takhleeq Hui Hae Aa Sey..
      Shaad baash..See More

      November 3, 2009 at 1:31am
    • اس غزل پر اتفاق سے نظر پڑ گئی۔۔۔بلکہ حسن اتفاق سے۔۔یاور ماجد ایک ادبی علمی گھرانے کے ہونہار فرزند ہیں۔۔اور اپنے خاندان کا نام آگے بڑھانے کا سبب بھی۔۔۔ ایک روایت اور ایک ثقافت کے امین ہیں اور محض اس پر اکتفا کرکے نہیں بیٹھ گئے کہ پدرم سلطان… بود۔۔۔ان کا ذہن روشن ہے اور وہ نئی راہیں تراشنے میں لگے رہتے ہیں۔۔۔یہ ردیف خود ان کی اس خصوصیت کی شاہد ہے۔۔نئی بات کہنے کا حوصلہ بھی ہے اور اس کے لئے جس ذخٰیرہ الفاظ اور مشاہدہے کی ضرورت ہوتی ہے وہ ان سے بھی لیس ہیں۔۔میں نے محسوس کیا ہے کہ وہ مسلسل شعری اکائی سے جڑے رہتے ہیں۔۔ان کی جو چیزیں اب تک دیکھنے کو ملی ہیں وہ اپنی طرف کھینچتی ہیں۔۔یہ وصف ان کی شاعری نے ان کی شخصیت سے حاصل کیا ہے۔۔۔تاخیر سے شامل ہونے کی معذرت۔۔) (شہتوت کا رس تھا نہ غزالوں کے پرے تھے۔۔۔۔میں آج بھی اس بزم میں تاخیر سے پہنچا) اSee More
      November 3, 2009 at 2:14pm
    • یاور ماجد سعود صاحب،
      کیوں شرمندہ کرتے ہیں، اتنے خوبصورت الفاظ میں داد آپ نے دے تو دی لیکن مجھے سمجھ نہیں آ رہی کہ میں سمیٹوں کیسے
      خوش رہیں، سدا خوش رہیں
      یاور
      November 3, 2009 at 3:59pm
    • اس بار بھی بنی وہی مبہم سی شکل پھر
      اس بُت کو اب کی بار تو بہتر تراشتے

      waah, main ne tau pehli baar ap ka kalaam paRhaa hai aur paRh kar gum hoon ke aaj se pehle aap ki shaairi kiyon nahi nazar se guzri….

      …mujhey hamesha voh shaairi apni taraf khainchti hai jo shaair apne zehn se lekhtaa hai, ye ghazal aap ke hone ki gawaahi hai.See More

      November 3, 2009 at 7:35pm
    • Shoaib Afzaal yawar khobsorat ghazal hay mashalah bohat achay…
      November 5, 2009 at 1:02am
    • Imran Jaffer Kia kehnay Yawar Maajed, baray qareenay sy mazameen bandhay hein aap ny. Aur yehi wo lehja hy jis mein aaj aur aanay walay kal ki ghazal Etminaan mahsoos kerti hy.
      Bharpoor Ghazal k lea bharpoor daad qabool kejeyay.
      Salamat Rahein.
      November 5, 2009 at 9:04am
    • ناخن کی نوک سے فلکِ روسیاہ پر
      ہم چودھویں کے چاند کا منظر تراشتے

      یاور بھائی اگر آپ ایسا شعر کہہ سکتے ہیں تو بات بہت آگے بڑھ سکتی ہے۔ اب آپ کی غزلوں کو میں بہت زیادہ توجہ سے پڑھوں گا۔ ہوشیار رہیئے۔

      …:-)

      مذاق اپنی جگہ، مگر بہت عمدہ غزل اور خصوصاً خوبصورت امیجری کی داد علیحدہ سے۔ کیا کہنے۔See More

      November 17, 2009 at 6:44am
    • یاور ماجد تو ابھی تک آپ بغیر توجہ کے پڑھتے تھے، جبھی میں کہوں اتنے متاثر کیوں ہیں میری شاعری سے
      ھا ھا۔۔
      توصیفی الفاظ کا شکریہ
      November 17, 2009 at 6:50am
    • Irfan Sattar knowing you, I was expecting this بے ساختہ comment 🙂
      November 17, 2009 at 6:54am
    • Irfan Sadiq yawar bhai ap mbarak bad ky mustheq han .atnay baray barat shaura nay ap ke ghzal psand ke hy.ghzal wa,qai bohat ache hy.thnaks for shairing.
      November 18, 2009 at 2:01am
    • Mansoor Nooruddin Elegant! Uncanny!

      گرقیدِ شش جہات پہ ہوتا کچھ اختیار
      روزن کوئی بناتے کوئی در تراشتے

      November 18, 2009 at 9:06pm
    • Amjad Shehzad غزل دوبارہ سامنے آ گئی ہے یاور بھائی تو ایک بار پھر بھرپور داد قبول کیجیے۔
      November 19, 2009 at 5:10am
    • یاور ماجد شکریہ منصور صاحب، اور امجد صاحب، آپ کی محبت ہے، بہت مشکور ہوں
      November 19, 2009 at 8:55am
    • گرقیدِ شش جہات پہ ہوتا کچھ اختیار
      روزن کوئی بناتے کوئی در تراشتے

      پرکارِ فن سے دائرے کھینچا کئے ہزار
      نروان پاتے گر کبھی محور تراشتے

      aur ye misra…
      ہم تیشہءِخیال سے گوہر تراشتے

      bhot khoob janab…fantasy ka haseen muraqqa…God bless uSee More

      November 23, 2009 at 11:05am
    • Qudsia Nadeem Laly bohat khoob yawer,naye istaroon si saji ghazal ky liaye shukriya…
      December 21, 2009 at 1:06pm
    • Iqbal Khawar aur kitna zor e sukhan chayea yawar …khob ghazal hay mashallah .salamat raho …allha karay zor e qalam aur zeyada
      January 2 at 7:52am
    • Iqbal Khawar buhat zor e sukhan hay….. yawar salamat raho
      January 4 at 2:11am
    • Faiz Alam Babar bhot umda aur shandaar ghazal dobara parh kr bhi wahi lutf barqaraar hy thanks 4 share me yawar bhaii
      January 12 at 4:44pm
    • Faizan Abrar یہ غزل بھی خوب رہی یاور بھائی۔۔۔ نئے مضامین اور منفرد طرزِ کلام اشعار کو خوبصورت بنا رہے ہیں۔۔۔ یوں ہی خوب خوب لکھتے رہیں، اللہ تعالٰی آپ کو شاد رکھے۔۔۔
      January 13 at 11:33am
    • Arshad Wattoo بہت خوب یاور میاں بہت خوب آپ کی یہ غزل مجھے لیٹ ملی
      اچھی غزل ہے زور سخن جاری رکھیں آپ کی ادب کو بہت ضرورت ہے
      October 18 at 6:19am
    • Hasan Abbas Raza Bohat khoob Yawar, masha allah, bohat achha keh rahey ho, Allah tumhen kaamyaab rakhey.
      October 18 at 11:41am
    • Qaisar Masood arrey boht khoob yawer!!! boht ustadana andaz main khai gai ghazal hai.. sabhi ashaar boht mayari or khoobsurat hain..itnay dostoon kay comments kay bahd bass yehi keh sakta hoon k maza agaya..
      October 19 at 10:00am
  • جواب دیں

    Fill in your details below or click an icon to log in:

    WordPress.com Logo

    آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Google photo

    آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Twitter picture

    آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Facebook photo

    آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Connecting to %s