وقت کی آندھی مجھے دھول سمجھ کر نہ اڑا

Posted: 2009/08/25 by admin in اردو شاعری, غزل

کیا ہوا جو مہ و اختر کے برابر نہ اڑا
وقت کی آندھی مجھے دھول سمجھ کر نہ اڑا
 
میں نے کب تجھ سے بہاروں کی تمنا کی تھی
کم سے کم رنگ مرے باغ کا صرصر نہ اُڑا
 
کیسے اُڑ پائے گا آئندہ کے طوفانوں میں
وہ تو ماضی کے قفس سے کبھی باہر نہ اُڑا
 
یہ برستی ہوئی بوندیں تو گھٹا کی دیکھو
کون کہتا ہے گگن میں کبھی ساگر نہ اُڑا
 
کس نے اُڑتے ہوئے ساگر کو فلک پر دیکھا
ایسی بے پر کی مری جاں، مرے یاور نہ اُڑا

یاور ماجد

 

Read this Ghazal on Facebook

  •  
    5 people like this.
    • Ahmad Safi واہ واہ Like always… superb.
      کیا تیسرے شعر کے دوسرے مصرعے میں ۔تو۔ کی جگہ ۔جو۔ زیادہ نہ سجے گا؟
      September 23, 2009 at 12:27pm
    • یاور ماجد جو” بھی چل سکتا ہے، لیکن میرا اشارہ ایک خاص آدمی کی طرف ہے، بوجھیں تو۔۔۔
      🙂
      September 23, 2009 at 12:30pm
    • Ahmad Safi خاص آدمیوں سے میں ڈرتا ہوں لہٰذا آپ ہی بتا دیجئے
      September 23, 2009 at 12:32pm
    • یاور ماجد ڈال دیا ناں مشکل میں
      🙂
      September 23, 2009 at 12:33pm
    • Ahmad Safi میں چاہتا ہوں اے جزبۂ غم مشکل پسِ مشکل آ جائے
      September 23, 2009 at 12:48pm
    • Ahmad Safi With Talat, that’s two votes now Yawar! If only poetry could be treated with democracy! 🙂
      September 23, 2009 at 1:38pm
    • I totally understand and agree with both of you. Indeed, the experience behind this couplet is a bit personal and I like it the way I wrote it.
      At the same time, I am not a huge fan of the poetry that directly talks about things and makes g…eneralized statements, I would rather start reporting in a newspaper than write poems and Ghazals. I like abstraction of thought and a twist that can add layers of meaning that can make different readers think differently about what I wrote, his deduced meanings might be totally different from what I intended originally but I am willing to give my reader that freedom.

      Changing "to” to "jo” just makes it a generalized statement, while "to” did make both of you think, didn’t it?
      Please do share your thoughts on this. Your niput is very appreciated and valued.
      YawarSee More

      September 23, 2009 at 1:44pm
    • Faiz Alam Babar wah yawar saheb kia umda ghazal pesh ki hy daad qabool keejye
      September 23, 2009 at 2:08pm
    • یاور ماجد شکریہ فیض صاحب
      September 23, 2009 at 2:08pm
    • Ahmad Safi jo mizaaj-e yaar maeN aaye!
      September 23, 2009 at 2:39pm
    • اعجاز عبید اچھی غزل ہے یاور، لیکن کچھ الفاظ کا شمار حشو و زعائد میں ہوگا۔ مجھ کو بھی تیسرے شعر میں ’تو‘ زائد لگ رہا ہے۔ اس کے علاوہ دوسرے شعر میں ’صرصر‘ سے تخاطب ہے نا؟ وہ بھی اچھا نہیں لگ رہا۔ اتنا واضح نہیں۔ باقی اشعار درست ہیں بلکہ اچھے ہیں۔
      September 23, 2009 at 11:56pm
    • Majeed Akhtar کیسے اُڑ پائے گا آئندہ کے طوفانوں میں
      وہ تو ماضی کے قفس سے کبھی باہر نہ اُڑا

      bhai maiN bi JO waloN ke sath hooN, beher hal. Ye sh’er bohot pasand aya. Gazal share kerne ka shukriya. Salamat raho……

      September 23, 2009 at 11:58pm
    • یاور ماجد Thanks majeed sahib.
      September 24, 2009 at 6:22am
    • بہت اچھی غزل ہے یاور صاحب۔

      یہ برستی ہوئی بوندیں تو گھٹا کی دیکھو
      کون کہتا ہے گگن میں کبھی ساگر نہ اُڑا

      …مقطع میں گو آپ نے اس شعر کا جواب دیا ہے لیکن مقطع اس شعر کے سامنے ہیچ ہے، وہ ایک عام مشاہدے کی بات ہے اور گو اس شعر میں بھی فطرت کا ہی ایک مظہر باندھا گیا ہے لیکن اس شعر میں ایک شاعر کا تخیل ہے، اور اوجِ کمال پر ہے، دونوں میں زمین آسمان کا فرق ہے، واہ واہ واہ۔See More

      September 24, 2009 at 7:06am
    • یاور ماجد سوچ کا تضاد ہے وارث صاحب، آپ کو تو پتا ہے ہم لوگ تضادوں کے مارے ہوئے ہیں۔
      پسندیدگی کا شکریہ
      September 24, 2009 at 7:17am
    • کیا ہوا جو مہ و اختر کے برابر نہ اڑا
      وقت کے پہئیے مجھے دھول سمجھ کر نہ اڑا

      اختر سے مراد یقیناً مجید اختر اور اختر عثمان ہے

      …Cheers,

      یاورSee More

      September 24, 2009 at 8:47am
    • Ahmad Safi اب زیادہ نہ اُڑا ۔ ۔ ۔
      September 24, 2009 at 1:00pm
    • یاور ماجد یہی تو بار بار کہہ رہا ہوں، نہ اڑا نہ اڑا نہ اڑا
      پھر بھی اڑنا ہے کہ بند ہی نہیں ہوتا
      🙂
      September 24, 2009 at 1:20pm
    • Zakir Hussain Ziai yawar Bhai Aap baqol Majeed Akhtar Sb Key Aaj Kissi ko Koi Kaam Karney Nahien Dein Gey,.kya Achha Kalaam Hae..Intahaaii Ummdah Kawish..
      Salaamat Rahiye.
      November 3, 2009 at 1:54am
    • یاور ماجد ‎:)
      شکریہ ذاکر صاحب، نوازش ہے
      November 3, 2009 at 7:00am
    • Imran Jaffer Kia kehnay Yawar Sahab, bohat khoob.
      Salamat Rahein.
      November 24, 2009 at 10:45am
    • Qudsia Nadeem Laly yeh barsti hui buondaun tuo ghata ki daikho
      kon kehta hay gagan main kabhi saagar na urra,kia khoob ghazal kahi yawer aap naye,wah,wah….
      December 21, 2009 at 1:14pm
  • جواب دیں

    Fill in your details below or click an icon to log in:

    WordPress.com Logo

    آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Google photo

    آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Twitter picture

    آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Facebook photo

    آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

    Connecting to %s